National

قومی اسمبلی نے فنانس بل 2019-20کی منظوری دے دی

EjazNews

قومی اسمبلی کے اجلاس میں فنانس بل کو بھی شق وار کثرت رائے سے منظور کر لیا گیا ۔بجٹ کی منظوری کے لیے ایوان میں شق وار ووٹنگ ہوئی، بل پر صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کے دستخط کے بعد یہ باضابطہ طور پر قانون بن جائے گا۔ایوان سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ‘ہم اس بجٹ کو مکمل طور پر مسترد کرتے ہیں۔جبکہ احسن اقبال نے کہا کہ ‘اگر ہمارے وزیراعظم ہی ملک کو دیوالیہ کر دیں گے تو پھر ہمیں کسی دشمن کی ضرورت نہیں ہے۔ سابق وزیر راجہ پرویز اشرف نے کا کہنا تھا ‘اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ بجٹ کے بارے میں کون بات کر رہا ہے، لیکن حقیقت یہ ہے کہ تمام لوگ بجٹ کے خلاف بات کر رہے ہیں۔اپوزیشن کی بجٹ میں کٹوتی کی تمام تحاریک مسترد ہو گئیں۔
اس اجلاس میں وزیر مملکت حماد رضا نے ایک موقع پر کہا کہ میں آٹھ مرتبہ ایک ہی سوال کا جواب دے چکا ہوں کہ گھی پر کوئی ٹیکس نہیں لگ رہا جبکہ اپوزیشن کے ارکان کا کہنا تھا کہ گھی پرٹیکس لگایا جارہا ہے۔بجٹ دستاویز میں گھی پر ٹیکس ہے۔ بجٹ اجلاس میں بچوں کی ٹافیوں کی مہنگائی پر بھی توجہ دلائی گئی کہ خدا را ان کو تو مہنگی نہ کریں۔
حکومتی ارکان کی جانب سے فنانس بل کی منظوری پر وکٹری کے نشان بنائے گئے جبکہ اپوزیشن ارکان کی جانب سے فنانس بل کی منظوری پر نو نو کے نعرے لگائے گئے۔

یہ بھی پڑھیں:  نجی چینلز پر بھارتی مواد کی تشہیر نہیں ہوگی: سپریم کورٹ

اپنا تبصرہ بھیجیں