bilwal

بلاول بھٹو زرداری کی قومی اسمبلی میں تقریر

EjazNews

بلاول بھٹو زرداری نے قومی اسمبلی میں تقریر کی ، لیکن سپیکر قومی اسمبلی کے لفظ حزف کرنے پر غصے میں آگئے۔ حکومت کو نالائق اور نااہل کہہ ڈالا ۔ کہتے ہیں میں تو پہلے ہی کہتا تھا یہ نالائق اور نااہل ہیں۔جب ایک مہینہ رہتا تھا آئی ایم ایف کی ڈیل میں، جب ایک مہینہ رہتا تک بجٹ آنے میں تو لوگ سوال پوچھیں گے کہ وزیر خزانہ کو کیو ں نکالا۔ لیکن نکال کے آپ نے کس کو رکھا صدر زرداری کا وزیر خزانہ۔ آپ دس سال سے کہہ رہے ہو کہ جو نقصان ہوا ہم نے کیا ہمارے بجٹ سے ہوا اور دیکھو اس میں یوٹرن، آپ کہتے ہیں جو نقصان ہوا ہماری وجہ سے ، جو قرض لیا غلط لیا گیا تو آپ اپنے ہی وزیر سے پوچھیں ،اگر قر ض لیا گیا تو اس نے لیا اگر خرچ کیا تو اس نے خرچ کیا۔بات یہاں ختم نہیں ہوتی ، ہمارے بیچارے فواد بھائی کو کیوں نکالا ، سرور کو کیوں نکالا۔ وزیر کو نکالنے سے ہمارا سلیکٹڈ وزیراعظم اپنی نا اہلی اور ناکامی نہیں چھپا سکتے۔ اگر یہ واقع ہی ہمارے سلیکٹڈ وزیراعظم کے فیصلے تھے ۔بلاول بھٹو زرداری کہتے ہیں کالعدم تنظیموں سے تعلق رکھنے والے وزیروں کو فارغ کرنا پڑے گا۔ہم نے پہلے بھی مطالبہ کیا اور آج بھی ہمارا مطالبہ ہے کہ جو وزیر کالعدم تنظیموں سے تعلق ر کھتے ہیں ان کو فارغ کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں:  سانحہ مشرقی پاکستان کے بعد کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنا دوسرا بڑا واقعہ ہے:آصف علی زرداری

[the_ad id=”4237″]

یہ آپ نے کیسا وزیر داخلہ بنا لیا ہے جس پر الزام ہے سنگین الزام ہے۔یہ ڈینل کے کیس میں ملوث ہے۔آپ کیا پیغام بھیج رہے ہو کہ ہم دہشت گردوں کے سہولت کار ہیں۔یہ نہیں ہوسکتا یہ کس قسم کی حکومت ہے یہ کیوں اعتراض کر رہے ہیں۔ میں آنکھ سے دیکھوں تو پاکستان پیپلز پارٹی کی حکومت نظر آتی ہے دوسری آنکھ سے دیکھو تو مشرف کی حکومت نظر آتی ہے۔اگر یہ نااہل ہیں نالائق ہیں تو ہمارے سلیکٹڈ وزیراعظم کو گھر بھیج دیتے۔ ہمارا سلیکٹڈ وزیراعظم نا اہل ہے نالائق ہے۔ گھر جانا پڑے گا خود کو فارغ کر نا پڑے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں