amla

آملہ بالوں کا سنگھار

EjazNews

اب تک آپ اپنے بالوں کی قسم سے واقف ہو چکی ہو ں گی، ماہرین کہتے ہیں کہ بالوں کی بنیادی طور پر تین ہی اقسام ہو تی ہیں خشک، روکھے سخت اور دو مہنے، روغنی یا متوازن اور نارمل۔۔۔۔۔ اپنے بالوں کی خود پہچان کرنا ایساشکل کام نہیں مگر یہ جان لینا بھی ضروری ہے کہ اگر کسی کے بال خشک ہوں تو کیوں۔ اصل میں اگر آپ کے غدود روغنی جز خارج نہیں کر رہے آپ نے کبھی حد سے زیادہ لیموں کے اجزا پر مشتمل شیمپوں استعمال کرلیا ہے اور جلد میں روغنیات جمع ہونے اور خارج ہونے کا عمل سست روی کا شکار ہے یا اگر آپ دھوپ میں زیادہ نکلتی ہیں سر ن ہیں ڈھانپتیں اور بالوں میں تیل نہیں لگاتیں یا اگر آپ بالوں کو رنگنے کا شکار ہے یا اگر آپ دھوپ میں زیادہ نکلتی ہیں سر نہیں ڈھانپتیں اوربالوں میں تیل نہیں لگاتیں یا اگر آپ بالوں کو رنگنے والے کیمیکل زیادہ استعمال کرتی یں تو بھی غدود اپنے افغال جاری نہیں رکھ سکتے۔ یہ کیمیائی عناصر غدودوں کے سرے گھلے نہیں رہنے دیتے اور ان میں روغن بلاک ہو کر رہ جاتا ہے۔ ایسی صورت میں اگر آپ ایک ماہ میں تین سے چار مرتبہ کیمیائی اجزا استعمال کر رہی ہیں تو خواہ ہر ہفتہ تیل بھی لگائیں یہ اثر کھو دیتا ہے یہ آپ کے بالوں کی جڑوں میں نہیں پہنچتا بلکہ مسام بنورت میں بالوں کی سروں پر بہہ جاتا ہے۔

روغنی بال وہی ہوتے ہیں کہ جنہیں ہر تیسرے روز دھونے کی ضرورت آن پڑے اور وہ میلے نظرآئیں۔

ڈاکٹر سعدیہ مسعود ماہر جلد ہیں ان کے مطابق ’’بیشتر، خواتین اپنے بالوں کی صحیح قسم سے ناواقف ہیں اگر وہ جان جائیں تو ان کی دیکھ بھال بھی کرنے لگیں گی۔ خشک بالوں کے لئے ہفتہ میں ایک دفعہ کے بجائے ہر روز تیل لگانا ضروری ہوتا ہے اور تیل خواہ ناریل کا ہو، کیسٹر آئل یا زیتون کے تیل کے چند قطرے ملا کر لگایا جائے یا ان میں سے کوئی بھی ایک لگا لیا جائے فائدہ دیتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  کیل مہاسوں سےپریشان نہ ہوں

رگنے والے بالوں کو ہلکے شیمپو کی مدد سے دھویا جائے۔ عام شیمپو آپ کے بالوں کی اوپر تہہ جو پروٹین کا احاطہ کرتی ہے اسے نقصان پہنچاتا ہے اسی لئے شیمپو انڈسٹری میں کئی ایسی اقسام کے شیمپو دستیاب ہو رہے ہیں جن میں پروٹین کی مقدار شامل کی جاتی ہے اس کے علاوہ کوئی بھی سخت قسم کا شیمپو سر کی جلد کو خشک کر سکتا ہے اسی لئے کنڈیشنر کا استعمالکیا جاتا ہے۔

رنگنے والے بالوں کو ہلکے شیمپو کی مدد سے دھویا جائے۔ عام شیمپو آپ کے بالوں کی اوپر تہہ جو پروٹین کا احاطہ کرتی ہے اسے نقصان پہنچاتا ہے۔ اسی لئے شیمپو انڈسٹری میں کئی ایسی اقسام کے شیمپو دستیاب ہو رہے ہیں جن میں پروٹین کی مقدار شامل کی جاتی ہے اس کے علاوہ کوئی بھی سخت قسم کا شیمپو سر کی جلد کو خشک کر سکتا ہے اسی لئے کنڈینشنر کا استعمال کیا جاتا ہے۔

رنگنے والے بالوں کو ہلکے شیمپو کی مدد سے دھویا جائے۔ عام شیمپو آپ کے بالوں کی اوپر تہہ جو پروٹین کا احاطہ کرتی ہے اسے نقصان پہنچاتا ہے۔ اسی لئے شیمپو انڈسٹری میں کئی ایسی اقسام کے شیمپو دستیاب ہو رہے ہیں جن میں پروٹین کی مقدار شامل کی جاتی ہے اس کے علاوہ کوئی بھی سخت قسم کا شیمپو سر کی جلد کو خشک کر سکتا ہے اسی لئے کنڈینشنر کا استعمال کیا جاتا ہے۔

روغنی بالوں کے لئے نانیوں دادیوں کا آزمودہ نسخہ ، بیسن سے سر دھونا اور لیموں کے چند قطرے نیم گرم پان یمیں ڈال کر تھوڑا سا مساج کر کے بالوں کو نتھار لینا ہے۔ متوازن یا نارمل بالوں کوآئیڈیل ٹائپ کیا جاتا ہے۔ عموماً انہی خواتین کے ہوتے ہیں جو متوازن خوراک لیی ہیں، تاہم کچھ متوازن خوراک لینے والی خواتین کے بال بھی خراب ہو سکتے ہیں اگر وہ اپنے بال بلیچ کروائیں یا شیمپو بدلیں، کیمیکلز لگا کر بالوں کی مختلف اسٹائلنگ کروائیں تو ٹیکسچر بدل جاتا ہے بالوں کی جسامت بگڑتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  بینڈانا :بالوں کے سنگھار میںشمار کیا جاتا ہے

مردوں کا گنج پن جینیاتی تبدیلی کے باعث ہوتا ہے یا پھر انفرادی بیماریوں کی وجہ سے ، ک چھ گنج اس طرح کے ہوتے ہیں جن کا کوئی علاج نہیں ہوتا ماسوائے ہیئر ٹرانسپلانٹ کے تاہم اگر ان کے ہارمونز متوازن ہوں اور وہ کوئی سخت قسم کی دوا نہ کھارہے ہوں یا کوئی کیمپو تھراپی کے عمل سے نہ گزر رہا ہے تو نئے بالوں کے ئے علاج کروانا مناسب فیصلہ ہے۔ اگر آپ کی زندگ یمیں پریشانیاں زیادہ ہوں، نیند پوری نہ ہو رہی ہو ،متوازن خوراک کا حصول ممکن نہ ہو تو اس کا اثر جہاں باقی جسم لے گا وہاں بال بھی اس حساسیت کاش کار ہو جائیں گے۔

مردوں اورخواتین دونوں ہی کو مشورہ دیا جاتا ہے کہ آپ ایک چائے کا چمچہ آملہ (پیس لیں) ایک چائے کا چمچہ لیموں کا رس اور پانی کو تھوڑی سی مقدار ملا کر کیمیائی اجزاء سے پاک مکسچر (محلول) بنالیں اور ا قدر شیمپو سے بال دھو کر دیکھیں ، فرق صاف ظاہرہو جائے گا۔

ناریل کا تیل بالوں کی غذائیت کے لئے بہترین ہے۔ اگر آپ مستقل اس تیل کا استعمال کریں تو خشکی اور جوئوں سے نجات ملی رہے گی۔ یہ قدرتی کنڈیشنر ہے اور متاثرہ بالوں کی افزائش نو کے لئے بہترین ٹوٹکا بھی ہے۔ ہر قسم کے بالوں کے لئے کھوپڑی کی جلد پر انگلیوں سے مساج کریں اور اس طرح ہونے والی خون کی گردش سے نئے بال بھی اگیں گے۔

بچیوں کے بالوں کی ٹائٹ پونیاں بنا کر اگر آپ مطمئن ہ جاتی ہیں تو غلطی پر ہیں، تیل لگے یا بغیر تیل کے بالوں کی ٹائپ پونی سے ماتھے کے اطراف گنج پن کی شکایت ہو سکتی ہے ۔ بچوں کے سروں کے خاتمے کے لئے ہومیو پیتھک ذریعہ علاج میں اینٹی لائس کے نام س ایک دوا موجود ہے۔ سکول جانے والے بچوں کے سروں میں کئی اینٹی سپیٹک لوشن لگانے سے کہیں بہتر ہے کہ دوا پلانے کا محفوظ ترین راستہ اختیار کیا جائے اور سر میں پیدا ہونے والی جوئوں کی افزائش کا فوری سدباب کیا جائے ۔ ہمارے یہاں امونیا فری ہیئر کاسمیٹکس بھی دستیاب ہیں۔ اگر آپ گرے بالوں کی رنگت تبدیل کرنا چاہتی ہیں تو اچھی ساکھ رکھنے والی کمپنیوں کے ایمونیا فری ہیئر کلرز استعمال کریں او اپنے بالوں کو صاف ستھرا رکھیں۔

یہ بھی پڑھیں:  دیکھ بھال کے لحاظ سے مشکل ترین جلد کمبی نیشن اسکن

آپ مرد ہوں یاخاتون، دونوں ہی اصناف کو اپنے بالوں یک مناسب دیکھ بھال کرنی چاہئے۔ مثلاً ایلوویرا ، جیل دونوں ہی استعمال کر سکتے ہیں۔ خشک اور بے رونق بالوں کے لئے گھیکوار کا گودا صاحب اور خاتون دونوں ہی بقدر ضرورت استعمال کر سکتے ہیں۔

روغنی بالوں والے آملہ کے پائوڈر میں دہی ملا کر سر کا مساج کریں۔

بے رونق بالوں کوسرسوں کے تیل اور گھیکوار کے گودے سے نکھار ا جاسکتا ہے اس کے بعد نباتاتی یا جڑی بوٹیوں سے تیار کئے ہوئے شیمپو اورکنڈیشنر سے بال دھوئیں۔

آرگینک بھی نامیاتی طریقہ کاشت سے تیار شدہ خوراک کا استعمال بالوں کی صحت اور افزائش پر حیرت انگیز اثرات مرتب کرتا ہے اگر آپ سونے سے پہلے نرم بش سے بال صاف کریں تو بھی ان کی ورزش ہوتی ہے اور اس وقت ہلکا سا تیل لگا ہو تو نیند بھی اچھی آتی ہے۔ ہر وقت تیللگا رہنا سر میں خشکی کا باعث بن سکتا ہے یعنی جب کھوپڑی کا قدرتی تیل باہم سے غدودوں میں انفیکشن ہوتا ہے اس طرح خشکی بھی ہوتی ہےاور بال بھی گرتے ہیں۔ بال جیسے بھی ہوں آپ سے قدرے زیادہ وقت اور توجہ چاہتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں