masarat alam bhat

تہاڑ جیل میں قید آل پارٹیز حریت کانفرنس کے نئے رہنمانے کتنے سال جیل میں گزارے؟

EjazNews

مقبوضہ کشمیر میں سید علی گیلانی کی شہادت کے بعد آل پارٹیز حریت کانفرنس نے اپنا نیا چیئرمین منتخب کر لیا ہے۔سید علی گیلانی کے بعد حریت رہنما مسرت عالم بھٹ نئے چیئرمین بن چکے ہیں۔

50سال مسرت بھٹ نے اپنی زندگی کا آدھا حصہ تو انڈین جیلوں میں گزارا ہے یعنی وہ اس وقت 50سال کے ہیں تو تقریباً 24 سال کے قریب تو وہ جیلوں میں رہ چکے ہیں۔

مسرت عالم بھٹ کے بارے میں ملنے والی معلومات کے مطابق انڈین حکام ان کو 38مرتبہ گرفتار کر چکی ہے۔

ان کے بارے میں یہ بھی کہا جاتا ہے کہ وہ ایشیاء کے وہ شخص ہیں جو سب سے زیادہ سیاسی قیدی بنے ہیں۔سنگاپور کے ڈاکٹر چائی تھائے وہ شخصیت تھے جنہوں نے ایشیا میں سب سے زیادہ سیاسی قیدی گزاری۔لیکن مسرت بھٹ نے ان سے بھی زیادہ سیاسی قیدی کاٹ ہے۔

1971ء میں پیدا ہونے والے والے 50سالہ مسرت بھٹ صرف 19سال کی عمر میں پہلی مرتبہ گرفتار کیے گئے تھے۔ تاہم وہ ان خاموش سپاہیوںمیں سے ایک تھے جنہوں نے آزادی کی جنگ لڑی لیکن نام نہیں کمایا۔

یہ بھی پڑھیں:  اگر ارادوں میں پختگی ہو اور سمت ٹھیک ہو تو اپوزیشن مطالبہ منوا ہی لیتی ہے

مسرت عالم بھٹ ان رہنمائوں میں سے ایک ہیں جنہیں2008ء میں کشمیر سے باہر جیلوں میں رکھا گیا تھا ۔ ان سے قبل کسی رہنما کو کشمیر سے باہر جیل میں نہیں رکھا گیا تھا۔

عملی جدوجہد انہوں نے کشمیر کی زمینوں کو آل ہندو شرائن بورڈ کو منتقل کیے جانے کے خلاف بغاوت کا اعلان کیا۔

کل جماعتی حریت رہنما پر 27کے قریب فوج داری کے مقدمات درج ہیں ۔ ان 27میں سے ایک مقدمہ ان پر اس بات کا بھی ہے کہ انہوں نے کشمیر میں پاکستانی پر چم لہرایا تھا۔

حریت کے نئے رہنما اپنی تنظیم کو از سر نو کرنے کیلئے آزاد نہیں ہیں بلکہ وہ انڈیا کی بدنام زمانہ جیل تہاڑ میں قید ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں