Teachers

دارالحکومت میں اساتذہ کو کس قسم کا لباس پہننے کی ہدایات جاری ہوئی ہیں؟

EjazNews

اسلام آباد کے سرکاری تعلیمی اداروں میں اساتذہ کے لیے ڈریس کوڈ جاری کر دیا گیا ہے۔

یہ ڈریس کوڈ کیوں جاری کیا گیا ہے اس کی وضاحت تو نہیں بتائی گئی لیکن دیر آئید درست آئید والی بات یہاں مناسب لگتی ہے۔ اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ استاد رول ماڈل جانا جاتا ہے اور طالبعلم استاد سے متاثر ہوئے بغیر نہیں رہتے ان پر استاد کی چھاپ کم از کم عالم شباب میں ضرور لگی نظر آتی ہے اور یہی و ہ وقت ہوتا ہے جب انسان بعض اوقات غلط فیصلے بھی کر لیتا ہے۔

نوٹیفکیشن کے مطابق خواتین اساتذہ کے جینز اور ٹائٹس پہننے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے جبکہ مرد اساتذہ کے جینز اور ٹی شرٹ پہننے پر بھی پابندی ہوگی۔دوسری جانب پردہ کرنے والی خواتین اساتذہ کو صاف ستھرا سکارف اور حجاب پہننے کی اجازت دی گئی ہے۔

اس جاری ہونے والے نوٹیفکیشن کے مطابق خواتین اساتذہ کو سینڈل اور سنیکرز پہننے کی اجازت ہو گئی جبکہ چپل پہننا منع ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  ملک کو اچھی خبر ملنے والی ہے: وزیراعظم عمران خان

مرد اساتذہ کو سردیوں میں گرم چادر اوڑھنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ اس کے بجائے وہ سردیوں میں سوئیٹر اور کوٹ پہن سکتے ہیں۔اسی طرح مرد اساتذہ شلوار قمیض کے ساتھ ویسکوٹ پہن سکتے ہیں۔
اسی طرح اساتذہ کو اس بات پر بھی احکام جاری ہوئی ہیں کہ وہ کلاس میں ٹیچنگ گاون اور لیبارٹری میں لیب کوٹ پہنیں۔

نوٹیفکیشن میں ایریا ایجوکیشن افسران کو ڈریس کوڈ پر عمل درآمد یقینی بنانے کی ہدایت کی گئی ہے۔

اپنے ماحول اور معاشرے کے مطابق لباس پہننا ضروری ہوتا ہے اور یہ ڈریس کوڈ کو اگر ذاتیات پر نہ لیا جائے تو یہ دارالحکومت میں لیا گیا ایک اچھا فیصلہ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں