Quran_Tasbhi

کلام الٰہی کی برکت

EjazNews

حقیقت پر مبنی یہ ناقابلِ فراموش واقعہ میرے بھائی کے ساتھ پیش آیا، جو اُسی کی زبانی پیش کررہی ہوں۔ ’’یہ اُن دنوں کی بات ہے، جب میرا داخلہ سیال کوٹ کے ایک سرکاری کالج میں ہوا۔ گھر سے کالج کافی دُور تھا، بسوں میں آنے جانے میں کافی وقت ضائع ہوجاتا تھا، لہٰذا موٹر سائیکل خریدنے کے لیے والد صاحب کو بڑی منّت سماجت کے بعد قائل کیا، وہ اس شرط پر بائیک دلانے پر راضی ہوئے کہ ٹریفک قوانین کی پابندی کرتے ہوئے انتہائی احتیاط سے چلائوں گا۔ والد صاحب نے موٹر سائیکل دلوادی، تو میں روز اُسی پر صبح گھر سے کالج اور کالج سے گھر آنے جانے لگا۔

ایک روز حسبِ معمول چھٹی کے بعد کالج سے گھر جارہا تھا۔ سڑک پر ٹریفک معمول سے کچھ زیادہ ہی تھا اور گرمی بھی شدّت کی تھی، میں جلد از جلد گھر پہنچنے کے چکّر میں بائیک تیز چلارہا تھا۔ مین شاہ راہ پر پہنچا، تو وہاں رش کچھ کم تھا، میں برق رفتاری سے آگے بڑھ رہا تھا اور میرے آگے آگے ایک بڑا سا فُل لوڈڈ ٹرک جا رہا تھا، جسے کئی بار اوور ٹیک کرنے کی کوشش کی، مگر کام یاب نہ ہوسکا، کیوں کہ سڑک ٹو وے تھی، جیسے ہی ٹرک سے آگے نکلنے کی کوشش کرتا، سامنے سے کوئی نہ کوئی تیز رفتار گاڑی دیکھ کر ٹرک کے پیچھے ہولیتا۔ کچھ دیر بعد مخالف سمت سے آنے والی گاڑیوں کا رش کچھ کم ہوااور مجھے ٹرک کو اوورٹیک کرنے کا موقع ملا، تو ایک بار پھر اپنی بائیک آگے نکالنے کی کوشش کی، لیکن جیسے ہی کچھ آگے بڑھا ، اچانک سامنے سے ایک اور ٹرک آتا دکھائی دیا، جسے دیکھ کر میرے اوسان خطا ہوگئے۔ مَیں اپنے آگے چلنے والے ٹرک کے متوازی اور سامنے سے آنے والے ٹرک کے بالکل سامنے آچکا تھا اور عین ممکن تھا کہ سامنے سے آنے والے ٹرک سے ٹکرا جاتا۔ اس اچانک افتاد سے میرے اوسان خطا ہوگئے، مجھے بائیک پرگرفت ڈھیلی پڑتی محسوس ہوئی۔ کچھ سمجھ نہیں آرہا تھا کہ کیا کروں، مارے خوف کے میری آنکھیں بند ہوگئیں اور لاشعوری طور پر زبان سے ’’بسم اللہ‘‘ نکلا۔

یہ بھی پڑھیں:  دنیا کے مقابلے میں امریکہ کے پاس کتنا سونا ہے؟

اگلے ہی پَل جب میں نے آنکھیں کھولیں، تو خود کو محفوظ پاکر اطمینان کی ایک گہری سانس لی۔ سامنے سے آنے والا ٹرک تیزی سے میرے برابر سے گزر گیا تھا اور مجھے خراش تک نہیں آئی تھی۔ حالاں کہ سامنے والا ٹرک جب میرے برابر والے ٹرک کو کراس کرتا ہوا گزرا، تو اس وقت ان دونوں کے درمیان فاصلہ بالکل بھی نہیں تھا اور میرا ان دونوں کے بیچ کچلا جانا یقینی تھا، لیکن سچ ہے کہ ’’جسے اللہ رکھے، اُسے کون چکھے۔‘‘ بلاشبہ، یہ بسم اللہ کی برکت تھی کہ دو ٹرکوں کے درمیان سینڈوچ بننے کے باوجود میں زندہ سلامت رہا۔ آج بھی جب یہ واقعہ یاد آتا ہے، تو دل خوف سے کانپ اٹھتا ہے۔ بلاشبہ یہ میری زندگی کا ناقابلِ فراموش واقعہ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں