Newzealand

یہ بے حسی پر مبنی ایک پرتشدد حملہ تھا:جیسنڈا آرڈرن

EjazNews

غیر ملکیمیڈیا کے مطابق جیسنڈا آرڈرن نے سپر مارکیٹ واقعے کو دہشت گرد حملہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ حملہ آور سری لنکن تھا جو داعش سے متاثر تھا۔

انہوں نے کہا کہ سکیورٹی ایجنسیاں اس شخص کے حوالے سے باخبر تھیں اور ہر وقت اس کی نگرانی کر رہی تھیں۔

ان کا کہنا تھا کہ قانون کے مطابق اس شخص کو جیل میں نہیں ڈالا جاسکتا تھا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ چاقو کے حملے کا نشانہ بننے والوں میں سے 3 شدید زخمی ہیں۔

جیسنڈا آرڈرن کا کہنا تھا کہ یہ بے حسی پر مبنی ایک پرتشدد حملہ تھا اور اس واقعے پر میں معذرت خواہ ہوں۔

نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ چونکہ حملہ آور کی مسلسل نگرانی کی جارہی تھی، اس لیے پولیس کی نگراں ٹیم اور خصوصی صلاحیت رکھنے والے گروپ کے اہلکاروں نے حملہ شروع ہونے کے 60 سیکنڈز کے اندر فائرنگ کر کے حملہ آور کو ہلاک کردیا۔

یہ بھی پڑھیں:  بیروت دھماکہ:پورے لبنان میں سوگ کی فضاء

پولیس کمشنر انڈریو کوسٹر کا کہنا تھا وہ اس شخص کے نظرئیے کے حوالے سے تشویش میں تھے اور اس پر گہری نظر رکھی گئی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے جمعہ کو اس شخص کا گھر سے سپر مارکیٹ تک پیچھا کیا تھا۔

انڈریو کوسٹر نے کہا کہ وہ شخص اسٹور میں داخل ہوا اور اس نے وہیں سے چاقو اٹھایا۔

انہوں نے کہا کہ نگرانی کرنے والی ٹیمیں جتنے قریب سے ممکن ہوا اس کی سرگرمیوں کی نگرانی کر رہی تھیں۔

پولیس کمشنر نے کہا کہ ہنگامہ شروع ہوا تو خصوصی گروپ کے دو پولیس اہلکار اسٹور کی طرف بھاگے۔

ان کا کہنا تھا کہ حملہ آور چاقو کے ہمراہ اہلکاروں کی طرف بڑھا لہٰذا انہوں نے اسے فائرنگ کرکے ہلاک کردیا۔

سپر مارکیٹ سے اندر بنائی گئی ایک ویڈیو میں تیزی سے 10 گولیاں فائر ہوتے سنی گئیں۔

وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن کا کہنا تھا کہ قانونی رکاوٹیں انہیں وہ سب کچھ کہنے سے روکتے ہیں جو وہ اس کیس سے متعلق کہنا چاہتی ہیں، لیکن انہیں توقع ہے کہ یہ رکاوٹیں جلد ختم ہوجائیں گی۔

یہ بھی پڑھیں:  بس اسی کی کمی تھی: ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنا سوشل میڈیا متعارف کر ادیا

سپر مارکیٹ میں کچھ خریداروں نے تولیوں اور ڈائپرز کے ذریعے زخمیوں کی مدد کرنے کی کوشش کی۔

جیسنڈا آرڈرن کا کہنا تھا کہ میں سوچ بھی نہیں سکتی جو لوگ وہاں موجود تھے اور جو اس ہولناک واقعے کے عینی شاہد ہیں وہ اس حملے کے بارے میں کیا سوچیں گے، لیکن ان لوگوں کی مدد کے لیے آگے بڑھنے کا شکریہ جنہیں آپ کی ضرورت تھی۔

واضح رہے کہ آکلینڈ میں کورونا وائرس کے بڑھتے ہوئے کیسز کے باعث سخت لاک ڈاؤن نافذ ہے، زیادہ تر کاروبار بند ہیں اور لوگوں کو صرف اشیائے ضروریہ، ادویات کی خریداری یا ورزش کے لیے گھروں سے نکلنے کی اجازت ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں