human right watch

ہیومن رائٹس کی عالمی رپورٹ:بھارت کے کالے قانون پر سخت تنقید

EjazNews

ہیومن رائٹس واچ نے اپنی عالمی رپورٹ 2021میں بھارت سمیت سو سے زائد ممالک میں انسانی حقو ق کی صورتحال کا جائزہ لیا ۔ رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ مقبوضہ جموںوکشمیر میں نافذ اس کالے قانون کے تحت بھارتی فورسز کے اہلکاروںکو انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں پر مسلسل استثنیٰ حاصل ہے ۔

گزشتہ سال جولائی میں بھارتی فورسز نے ضلع شوپیاںمیںتین کشمیریوںکوعسکریت پسند قراردیتے ہوئے قتل کیا ۔ تاہم ان کے اہلخانہ نے سوشل میڈیا پرجاری ہونے والی تصاویر کے ذریعے انکی شناخت کرتے ہوئے فورسز کے دعویٰ کو مستردکردیا ااور کہاکہ وہ محنت کش تھے۔

ستمبر میں بھارتی فوج نے کہاتھا کہ تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ فوجی اہلکار کالے قانون آر مڈ فورسز اسپیشل پاورز ایکٹ کے تحت حاصل اختیارات سے تجاوز کررہے ہیں اور انکے خلاف تادیبی کارروائی کی جائے گی ۔

بھارتی فورسز مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے مسلسل مہلک پیلٹ گنز کا استعمال جاری رکھے ہوئے ہیں جسے سے لوگ شدید زخمی اور بصارت سے محروم ہو رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  مردہ بچے کی پیدائش یا حمل کے ضیاء پر والدین کو تین چھٹیاں بمعہ تنخواہ ملیں گی

بھارت اپنی بین الاقوامی ذمہ داریوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مظاہرین کے خلاف پیلٹ گنز کا استعمال مسلسل استعمال جاری رکھے ہوئے ہے۔

مقبوضہ جموںوکشمیر میں ذرائع ابلاغ پر قدغن کے حوالے سے ہیومن رائٹس واچ نے اپنی رپورٹ میں کہاکہ جون میں بھارتی انتظامیہ نے مقبوضہ جموں وکشمیر میں ایک نئی میڈیا پالیسی متعارف کرائی جس میںقابض حکام کوجعلی خبریں، سرقہ اور غیر اخلاقی یا ملک دشمن سرگرمیوںکا تعین کرنے اورمیڈیا گروپوں ، صحافیوں اور ایڈیٹرز کے خلاف کارروائی کا اختیار دیا گیا ہے ۔

رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ بھارتی حکومت نے نقادوں ، صحافیوں ، اور انسانی حقوق کے کارکنوں پر بھی پابندیاں عائد کر رکھی ہیں۔

اگست2019سے مقبوضہ جموںوکشمیرمیں مواصلاتی نیٹ ورکس تک رسائی پرپابندی عائد ہے جس سے وادی کشمیر میں لوگوں کے روزگار خصوصا سیاحت کے شعبہ سے وابستہ افراد بری طرح متاثرہو رہے ہیں۔

ہیومن رائٹس واچ نے کشمیر چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریز کا حوالہ دیتے ہوئے کشمیری تاجروں کی مشکلات کواجاگر کیا۔

یہ بھی پڑھیں:  امریکی صدر کی میکسیکو کو دھمکی

رپورٹ میں واضح کیاگیا ہے کہ مارچ میں بھارت بھر میں لاک ڈان کے ابتدائی ہفتوں میں بھارتی فورسز کئی ریاستوں میں کورونا وبا کی روک تھام کیلئے حاصل خصوصی اختیارات کا بے جا استعمال کرتے ہوئے اشیائے ضروریہ کے حصول کیلئے گھر وں سے باہر نکلنے والے لوگوںکو بھی بدترین تشدد کا نشانہ بنایا بھارت میں پولیس کی حراست میں تشدد اور ماورائے عدالت قتل کے واقعات بھی مسلسل سامنے آرہے ہیں۔

گزشتہ سال کے پہلے دس ماہ کے دوران بھارتی انسانی حقوق کمیشن میں پولیس کی حراست میں 77ہلاکتوں، عدالتی تحویل میں ایک ہزار338ہلاکتوںاور62ماورائے عدالت قتل کے واقعات رپورٹ ہوئے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں