mineral water bottle

صاف پانی بیچنے والی کمپنیوں نے8 کروڑ روپے قومی خزانے میں کیوں جمع کرائے؟

EjazNews

پاکستان بھر میں زمین سے نکال کر صاف پانی بیچا جارہا ہے۔اس پانی کو ایک عرصے تک کمپنیاں منرل واٹر کا نام دے کر پاکستانی صارفین کو بے وقوف بناتی رہی ہیں اور یہی کہہ کر اربوں روپے پاکستانی صارفین کی جیبوں سے نکلوائے ۔

سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میںصاف پانی بیچنے والی ان کمپنیوں نے8 کروڑ روپے قومی خزانے میں جمع کرادئیے ہیں۔

سیکرٹری ماحولیات محمد اسلم غوری اور ڈائریکٹرجنرل سندھ نعیم احمد مغل کے احکامات پر ڈپٹی ڈائریکٹرزکامران راجپوت اورمنیرعباسی نے کمپنیوں کے ریکارڈ کی چھان بین کے بعد رقم کاتعین کیا۔

عدالت عظمی پاکستان نے آئینی درخواست نمبر26/2018کے تحت زمین سے معدنیاتی پانی نکال کر پینے کے لیئے تیارکرکے فروخت کرنے پر رقم سرکاری خزانے میں جمع کرنے کاحکم دیاتھا۔

اگر دیکھا جائے تو ایسے بہت زیادہ معاملات ہیں جس میں پاکستانی صارفین کو دونوں ہاتھوں سے لوٹا جارہا ہے اور جن لوگوں کا کام ان کو روکنا ہے ان کی آنکھوں پر پٹی بندھی ہوئی ہے اب یہ پٹی کس چیز کی بندھی ہوئی اس کا اندازہ کرنا کوئی مشکل کام نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  کابل میں سیاسی اجتماع پر حملہ

اگر سپریم کورٹ مداخلت نہ کرے تو ان کمپنیوں سے کیا آنکھوں پر پٹی باندھے شخص پیسے لے کر ان کی سمت کا تعین کر سکتے تھے؟ ۔کچھ لوگوں کی شنوائی مرتے دم تک نہیں ہوتی اور کچھ لوگ ملک عزیز میں فائلوں کو پہیے لگا دیتے ہیں ۔جب بابوں کے انصاف کا تقاضا یہی ہوگا تو پھرلوگ درخواستیں لے کر سپریم کورٹ پہنچیں گے تو مجبوراً ان کمپنیوں کو پیسے دینے پڑتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں