sheikh_rasheed

ہم یہ نہیں چاہتے کہ پاکستانی سرزمین کسی بھی طرح افغان تنازع میں استعمال ہو:وزیر داخلہ

EjazNews

وزارت داخلہ کے ماتحت کام کرنے والی ایف سی بلوچستان اور نیم فوجی دستے کو سرحدی گشت سے واپس بلایا گیا تھا۔وزیر داخلہ نے کہا کہ اب نیم فوجی دستوں کو تبدیل کرنے کے بعد فوج نے باقاعدہ دستے سرحد کا انتظام سنبھال رہے ہیں۔

شیخ رشید نے مزید کہا کہ یہ فیصلہ سرحد پار سے غیر مستحکم صورتحال کے پیش نظر کیا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ افغانستان سے آنے والے مہاجرین کی آمدورفت کو روکنے اور پاکستان میں مسلح جوانوں اور عسکریت پسندوں کے داخلے کو روکنے کے لیے کیا گیا۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ فرنٹیئر کانسٹیبلری، لیویز، رینجرز سمیت نیم فوجی دستے سرحدوں پر تعینات تھے تاکہ غیر قانونی تارکین وطن، اسمگلنگ وغیرہ سمیت دیگر امور سے نمٹا جاسکے تاہم افغانستان میں موجودہ غیر مستحکم صورتحال کا تقاضہ ہے کہ سرحد کے ساتھ باقاعدہ فوجی دستے تعینات کیے جائیں۔

آئی ایس پی آر( کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل بابر افتخار نے ایک ٹی وی چینل پر کہا تھا کہ فوج سرحدوں کی نگرانی کر رہی ہے اور اس اقدام سے افغانستان کی سرزمین یا ایرانی حدود سے تنازعات میں اضافے کو روکنے میں مدد ملے گی۔

یہ بھی پڑھیں:  کینیڈا میں پاکستانی خاندان پر حملے کیخلاف سخت ایکشن لینا ہوگا:وزیراعظم

بعدازاں مسلح افواج کے ذرائع نے بتایا تھا کہ موجودہ منظر نامہ میں سب سے سنگین چیلنج صرف مہاجرین یا مہاجرین کی آڑ میں دہشت گردوں کی آمد کو روکنا ہی نہیں ہے بلکہ افغان اہلکاروں یا طالبان جنگجووں کی نقل و حرکت بھی تھی۔

ایک افسر نے بتایا کہ ہم نے دیکھا ہے کہ جولائی کے شروع میں ایک ہزار سے زیادہ افغان اہلکار طالبان کے ڈر سے تاجکستان میں فرار ہوگئے تھے لیکن افغانستان کے شمالی علاقوں میں طالبان کی موجودگی اتنی مضبوط نہیں ہے جتنی پاکستان سے متصل علاقوں میں ہے۔

انہوں نے بتایا کہ لہٰذا اگر افغان اہلکار لڑائی کرتے ہوئے پاکستان میں داخل ہوئے توامکان ہے کہ طالبان ان کا پیچھا کریں گے اور تنازع پاکستان کے اندر پھیل جائے گا۔

انہوں نے بتایا کہ پاکستان نہیں چاہتا کہ افغان فضائیہ طالبان پر حملہ کرنے کے لیے بغیر اجازت ہماری فضائی حدود استعمال کرے اور جوابی کارروائی میں عسکریت پسند پاکستانی مقامات پر حملہ کرکے ایک نیا مسئلہ کھڑا کردیں۔

یہ بھی پڑھیں:  انسانی ہمدردی کے تحت کچھ دیر کیلئے چمن سرحد کھولی گئی

علاوہ ازیں وزیر داخلہ شیخ رشید نے کہا اب وقت آگیا ہے کہ افغان سیاست دان اور ان کی عسکری قیادت اپنے مسائل سے نمٹنا سیکھیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم یہ نہیں چاہتے کہ پاکستانی سرزمین کسی بھی طرح افغان تنازع میں استعمال ہو اور ہم نے اس پالیسی کی افغان قیادت کو یقین دہانی کرائی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں