mamnoon hussain

مرحوم سابق صدر ممنون حسین کی سیاسی زندگی پر ایک نظر

EjazNews

ممنون حسین 30 جولائی 2013 کو پاکستان کے 12 ویں صدر منتخب ہوئے تھے اور بحیثیت صدر غیرجانب داری کا تاثر دینے کے لیے انتخابات کے نتائج کا اعلان ہونے کے فوراً بعد ہی مسلم لیگ (ن) کی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ممنون حسین نے بحیثیت صدر اپنی پانچ سالہ میعاد 8 ستمبر 2018 کو مکمل کی تھی۔

فروری 2020 میں ان میں کینسر کی تشخیص ہوئی تھی اور 14 جولائی 2021 کو وہ خالق حقیقی سے جا ملے۔ انہوں نے سوگواروں میں بیوی اور تین بیٹے چھوڑے ہیں۔

سابق صدر پاکستان ممنون حسین کا شمار نواز شریف کے دیرینہ اور وفادار ساتھیوں میں کیا جاتا ہے۔ 1993 میں غلام اسحاق خان کی جانب سے نواز شریف کو وزارت عظمیٰ سے ہٹائے جانے کے بعد پیدا ہونے والے ڈرامائی حالات کے نتیجے میں یہ قیاس آرائیاں کی جا رہی تھیں کہ پارٹی کی قیادت ممکنہ طور پر انہیں سونپ دی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں:  جو خیالات ہمارے مشاہدے میں آئے ان کو سن کر دکھ ہوا:چیف الیکشن کمیشن

یہ قیاس آرائیاں غلط ثابت ہوئیں البتہ وہ اس دور میں سندھ میں مسلم لیگ (ن) کے قائم مقام صدر کے منصب پر بھی فائز رہے۔ اس سے علاوہ سابق وزیر اعلیٰ سندھ لیاقت علی جتوئی کے مشیر کے طور پر بھی خدمات سرانجام دیں۔

ممنون حسین جون سے اکتوبر 1999 مختصر مدت کے لیے گورنر سندھ بھی رہے اور پھر سابق جنرل (ر) پرویز مشرف کی فوجی بغاوت کے بعد انہیں اس منصب سے ہٹا دیا گیا۔

تجزیہ کاروں کا ماننا ہے کہ یہ ان کے کیریئر کا فیصلہ کن دور تھا اور صدارت کے منصب کے لیے نامزدگی کو دراصل 1999 میں مسلم لیگ (ن) کے لیے مشکل دور میں شریف خاندان سے وفاداری کا صلہ قرار دیا گیا، البتہ مشرف کے اقتدار کے خاتمے کے بعد عام طور پر پارٹی میں زیادہ متحرک نظر نہیں آتے تھے۔

2002 میں ممنون حسین نے کراچی کے حلقہ این اے-250 سے الیکشن لڑا لیکن وہ ناکام رہے۔
2013 میں جب نواز شریف نے ان کا ایوان صدر کے لیے امیدوار کے طور پر انتخاب کیا تو وہ مسلم لیگ (ن) کے سینئر نائب صدر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے تھے اور سندھ میں ٹیکسٹائل کا کاروبار چلا رہے تھے۔

یہ بھی پڑھیں:  وزیراعظم عمران خان نے غیر یقینی صورتحال کا خاتمہ کردیا، لاک ڈاﺅن نہیں لگے گا

نواز شریف نے مسلم لیگ (ن) کی جانب سے ممنون حسین کی نامزدگی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ انہوں نے ایک ایسے شخص کا انتخاب کیا جو غیر متنازع ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں