chairman land recozition

چیئرمین لینڈ ایکوزیشن وسیم تابش گرفتار

EjazNews

چیئرمین لینڈ ایکوزیشن کمیشن وسیم تابش کو بھی گرفتار کر لیا گیا ہے۔رنگ روڈ کا مبینہ سکینڈل اس وقت سامنے آیا ہے جب مقامی میڈیا پر یہ خبریں نشر ہوئیں کہ با اثر افراد کے کہنے پر اس منصوبے کے ڈیزائن میں تبدیلی کر دی گئی ہے جس کا مبینہ مقصد اس منصوبے کے ارد گرد موجود نجی ہاؤسنگ سوسائٹیز کو فائدہ پہنچانا تھا۔

اس منصوبے کے ڈیزائن میں تبدیلی کے بعد اس پر اٹھنے والے اضافی اخراجات کا تخمینہ 25 ارب روپے لگایا گیا ہے۔

وزیر اعظم کے سابق معاون خصوصی زلفی بخاری اور وفاقی وزیر غلام سرور خان کا نام بھی سامنے آیا ہے۔

زلفی بخاری اپنے عہدے سے استعفیٰ دے چکے ہیں اور انھوں نے کہا ہے کہ تحقیقات مکمل ہونے اور ان کا نام کلیئر ہونے تک وہ کوئی سرکاری عہدہ قبول نہیں کریں گے جبکہ وفاقی وزیر برائے ہوا بازی غلام سرور خان نے ان الزامات کی سختی سے تردید کی ہے کہ ان کا کسی لینڈ مافیا سے کوئی تعلق ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  پسند کی شادی پر لاہور ہائیکورٹ کا فیصلہ

وزیرِاعظم عمران خان نے تحقیقات کا حکم دیا تھا اور کمشنر راولپنڈی ڈویژن کی سربراہی میں بنائی گئی فیکٹ فائنڈنگ کمیٹی نے اس منصوبے کے چند کرداروں کی نشاندہی کی، جس میں اگرچہ کسی سیاسی شخصیت کا براہ راست ذکر تو نہیں ہے لیکن لینڈ مافیا اور چند ہاؤسنگ سوسائٹیز کا ذکر ضرور کیا گیا۔

پنجاب کے انسداد رشوت ستانی کے محکمے نے اس ضمن میں تحقیقات کا آغاز کردیا ہے، اس کے علاوہ وفاقی تحقیقاتی ادارے یعنی ایف آئی اے اور نیب نے بھی اس معاملے کی تحقیقات کا اعلان کیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں