Muhammad amir

یہ فرنچائز کرکٹ نہیں بلکہ قومی ٹیم ہے،عامر کو مشورہ

EjazNews

ورچوئل پریس کانفرنس میں گفتگو کرتے ہوئے وقار یونس نے کہا کہ عامر کے معاملے پر بہت ساری بات چیت ہوچکی ہے لیکن اگر وہ ریٹائرمنٹ واپس نہیں لینا چاہتے اور سلیکٹرز کو متاثر نہیں کرنا چاہتے تو پھر اس کے بارے میں بات کرنا مشکل ہے۔

وقار یونس نے عامر پر زور دیا کہ یہ فرنچائز کرکٹ نہیں بلکہ قومی ٹیم ہے۔

اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس بار انگلینڈ میں تیاری کیلئے موسم اچھا نہیں ملا، باؤلرز سے توقعات زیادہ ہیں، باؤلنگ اٹیک کم بیک کریگا، سخت گرمی سے نکل کر انگلینڈ آکر ایڈجسٹ کرنا تھوڑا مشکل ہوتا ہے۔باؤلنگ کوچ کا کہنا تھا کہ حارث رؤف، شاہین شاہ آفریدی اس سیریز میں نمایاں کھیل دکھائیں گے، محمد حسنین اور شاداب خان سے بھی توقعات ہیں۔ ہم نے انگلینڈ اور سری لنکا سیریز کا بہت بغور جائزہ لیا ۔

انگلش بلے بازوں کے خلاف اچھا حکمت عملی بنائیں گے۔

یہ بھی پڑھیں:  نیشنل T20 کپ کے سکواڈ کا پی سی بی نے اعلان کر دیا

ان کا کہنا تھا کہ ورلڈ کپ کیلئے یو اے ای کی کنڈیشنز پاکستان ٹیم مدد گار ہوگی، بیٹنگ اور باؤلنگ کے شعبے میں پاکستان کو یواے ای میں ایڈواٹیج ہوگا۔
دوسری جانب مڈل آرڈر بیٹسمین حارث سہیل کی پہلے میچ میں شرکت مشکوک ہوگئی ۔

پی سی بی کے اعلامیہ کے مطابق مڈل آرڈر بیٹسمین حارث سہیل ابھی بھی اپنی دائیں ٹانگ میں درد محسوس کررہے ہیں، لہٰذا وہ 5 سے 6 جولائی تک ڈربی میں شیڈول آخری دونوں پریکٹس سیشنز میں شرکت نہیں کریں گے۔مڈل آرڈر بیٹسمین نے اسی انجری کی وجہ سے ڈربی میں کھیلے گئے دونوں انٹرا اسکواڈ پریکٹس میچز میں بھی شرکت نہیں کی تھی۔ حارث سہیل کے ری ہیب کا آغاز ہوچکا ہے تاہم ان کا ایم آرآئی اسکین 6 جولائی کو کارڈف میں ہوگا جس کا جائزہ لینے کے بعد ہی ان کی انگلینڈ کے خلاف پہلے ایک روزہ بین الاقوامی میچ میں دستیابی کا فیصلہ کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں:  بابر اعظم کیس:عدالت نے ایف آئی اے کو مقدمہ درج کرنے کا حکم دے دیا

پاکستان اور انگلینڈ کےمابین تین ایک روزہ اور تین ٹی ٹونٹی بین الاقوامی میچز پر مشتمل سیریز کا آغاز 8 جولائی کو کارڈف سے ہوگا۔قومی کرکٹ سکواڈ 6 جولائی کو ڈربی سے کارڈف روانہ ہوگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں