shah_mahmood_qurashi

یہ دیکھنا بھی ضروری ہے کہ ایف اے ٹی ایف کو سیاسی مقاصد کے لیے تو استعمال نہیں کیا جارہا؟:وزیر خارجہ

EjazNews

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کاکہنا ہے کہ اس بات کا تعین کرنا ہوگا کہ ایف اے ٹی ایف ایک تکنیکی فورم ہے یا سیاسی؟ یہ دیکھنا بھی ضروری ہے کہ اس فورم کو سیاسی مقاصد کے لیے تو استعمال نہیں کیا جارہا؟۔

واضح رہے یہ بیان ان ایف اے ٹی ایف کے گزشتہ روز دئیے گئے بیان کے بعد سامنے آیا ہے کہ پاکستان نے 26نکات پر عمل درآمد کر لیا ہے اور 27ویں نکات پر عمل درآمد کے بعد ہی پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالا جائے گا۔ حیرت انگیز بات ہے اور اس تنظیم پر شق و شبہ کرنا بنتا بھی ہے۔ کیونکہ 26نکات پر عمل ہوچکا ہے اور 27ویں نکتے پر بھی کسی حد تک عمل کیا جارہا ہے۔ لیکن ایف اے ٹی ایف پاکستان کا یہ اقدام کہ پاکستان کوگرے لسٹ میں مزید رکھا جائے گا سمجھ سے بالاتر تھا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ جہاں تک تکنیکی پہلووں کا تعلق ہے تو ہمیں 27 نکات دئیے گئے اور وہ خود تسلیم کر رہے ہیں کہ 27 میں سے 26 نکات پر ہم نے مکمل عملدرآمد کر لیا ہے۔ 27ویں نکتے پر بھی کافی حد تک پیش رفت ہو چکی ہے اور مزید کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  پیپلز پارٹی احتجاج کی سیاست کیوں نہیں کرتی؟

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میری نظر میں ایسی صورتحال میں پاکستان کو گرے لسٹ میں رہنے اور رکھنے کی کوئی گنجائش باقی نہیں رہتی۔ بعض قوتیں یہ چاہتی ہیں کہ پاکستان کے سر پر تلوار لٹکتی رہے، میں یہ بھی واضح کرنا ضروری سمجھتا ہوں کہ ہم نے جو بھی اقدامات اٹھائے وہ اپنے مفاد کو پیش نظر رکھتے ہوئے اٹھائے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہمارا مفاد یہ ہے کہ منی لانڈرنگ نہیں ہونی چاہیے، پاکستان کی منشا یہ ہے کہ ہم نے دہشت گردی کی مالی معاونت کا تدارک کرنا ہے۔جو بات پاکستان کے مفاد میں ہے وہ ہم کرتے رہیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں