Nato

نیٹو نے افغانستان سے فوجی مشن کے خاتمے کا اعلان کردیا

EjazNews

نیٹوکا 31 واں سربراہی اجلاس بیلجیئم کے شہر برسلز میں قائم ہیڈ کوارٹر میں شروع ہوا، اجلاس میں امریکی صدر جوبائیڈن سمیت نیٹو اتحاد کے 30 رکن ممالک کے سربراہان شریک ہیں۔

اس موقع پر افتتاحی خطاب میں نیٹو سیکرٹری جنرل اسٹولٹن برگ نے افغانستان سے فوجی مشن کے خاتمے کا اعلان کیا۔اسٹولٹن برگ کا کہنا تھا کہ اب صرف نیٹو کے سول منتظم کابل میں موجود ہوں گے تاہم افغان سکیورٹی اداروں کی فنڈنگ کا سلسلہ 2024 تک جاری رہےگا۔
عالمی میڈیا کےمطابق نیٹو اجلاس میں شرکا روس کے جارحانہ طرز عمل ، دہشت گردی، سائبر حملوں اور چین کے عروج سمیت ماحولیاتی تبدیلیوں کے حفاظتی مضمرات پر بھی گفتگو کی۔

مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے سیکرٹری جنرل ژینس سٹولٹن برگ نے کہا ہے کہ چین نیٹو کا دشمن نہیں مگر سیاسی، اقتصادی اور عسکری محاذوں پر اس کو جواب دینا ضروری ہے۔ یہ بات اہم ہے کہ نیٹو کے اجلاس میں چین کے حوالے سے نئی حکمت عملی وضع کی جا رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  مقبوضہ کشمیر میں قابض فوج کی نفری میں مزید 10ہزار کا اضافہ

نیٹو اجلاس کے موقع پر برسلز میں اسٹولٹن برگ نے کہا کہ چین ہر محاذ میں نیٹو کے قریب پہنچ رہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ چین مغربی اقدار سے میل نہیں کھاتا اس لیے اس کی طاقت کا مشترکہ انداز سے جواب دینا ضروری ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں