لیکوریا

نسوانیت کا دشمن لیکوریا

EjazNews

لیکوریا خواتین کی ایسی بیماری ہے جس کے بارے میں وہ کسی کو بتاتے ہوئے ہچکچاہٹ کا شکار ہوتی ہیں نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ اس بیماری کے اثرات کے سبب خواتین اندر سے اتنی کمزوری کا شکار ہو جاتی ہیں کہ ان کے لی شادی کے بعد ماں بننا ایک دشوار امر ہو جاتا ہے ۔

خواتین کی بہت سی بیماریاں ایسی ہیں جن کے بارے میں بات نہیں کی جاتی لیکوریا بھی ان بیماریوں میں سے ایک ہے۔بہت سی لڑکیاں اور عورتیں اس انفیکشن میں مبتلا ہوتیں ہیں لیکن وہ شرمندگی کے باعث ایسی بیماری پر بات بھی نہیں کرتیں لیکن یہ غلط ہے ،کوئی بھی بیماری جب شدت پکڑتی ہے تووہ انسانی صحت کا بہت نقصان کر دیتی ہے۔

اکثر خواتین اپنا یہ مسئلہ ڈاکٹرز کو بھی بتانے سے گریز کرتیں ہیں جس کی وجہ سے یہ بڑھتاچلاجاتاہے۔یہ بیماری کئی وجوہات کی وجہ سے ہوسکتی ہے۔اس کا بروقت علاج بہت ضروری ہے۔یہ انفیکشن ہماری قوت مدافعت میں کمی کرتا ہے۔بہت سی خواتین اس مسئلے کی وجہ سے بہت پریشان ہوتیں ہیں۔اس انفیکشن کی وجہ ناقص غذااوررہن سہن کی وجہ سے بھی ہوسکتی ہے۔اس لیے ہمیں چاہیے کہ اگر یہ بیماری کسی بھی لڑکی کو ہووہ جلد ڈاکٹر سے معائنہ کرے۔

لیکوریا کیا ہے؟

لیکوریا عورت کی رحم سے نکلنے والاسفید یا پیلا رطوبت ہے۔اسے لیکوریا کہتے ہیں ۔ یہ بیماری عورتوں میں عام ہوتی ہے۔اس بیماری کے بہت نقصان ہیں جو عورت کی صحت پرمرتب ہوتے ہیں۔

لیکوریا کی اقسام

یہاں لیکوریا کی دو اقسام مندرجہ ذیل ہیں؛
فزیولوجیکل لیکوریا یا طبعی لیکوریا
لیکوریا کی یہ قسم تب ہوتی ہے جب ہارمونز میں تبدیلی آتی ہے ،یا لڑکیوں کے بلوغت کےوقت یا حیض کے سائیکل کے دوران اس کے علاوہ کم عمری میں سیکس کی ایکساٹمنٹ بھی اس لیکوریا کی وجہ بنتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  بریسٹ کینسر:آپ نے خود اپنی حفاظت کرنی ہے

پتھولوجیکل لیکوریا

لیکوریا کی یہ قسم تب ہوتی ہےجب ہم نا مناسب غذا کا استعمال کرتے ہیں یہ لیکوریا صحت کی خرابی کی وجہ سے بھی ہوتا ہے۔جنیاتی ٹریک کی وجہ سے بھی یہ ہوسکتا ہے۔

لیکوریا کی وجوہات کیا ہیں؟

لیکوریا کی کیا وجوہات ہوسکتی ہیں اس کی علامات مندرجہ ذیل ہیں؛
نامناسب طرزِزندگی
غیرمتوازن کھانے کی عادت
ہارمونل تبدیلی
بدہضمی
فنگل انفیکشن
قبض
خون کی کمی
ذیابیطس
کثرتِ حیض
پریشانی یا صدمہ کاہونا

بہت سی لڑکیوں کو یہ بیماری حیض شروع ہونے کے ایک سال پہلے یا بعد میں ہوسکتا ہے۔بعض خواتین میں ڈلیوری کے بعداس مرض کا شکار ہوتی ہیں۔اس طرح کے معاملات یوٹرائن انفیکشن کی نشاندہی کرتے ہیں۔اس لیے فوری طور پرعلاج ضروری ہے تاکہ انفیکشن سے بچا جاسکے۔یہ مرض اچانک شدت اختیار نہیں کرتا۔لیکن یہ مرض خواتین کے تولیدی نظام کے دوسرے اجزاکو بھی نقصان دے سکتا ہے۔

لیکوریا کی علامات

لیکوریا کی علامات ہر عورت میں مختلیف ہو سکتی ہیں لیکن بعض میں ایک ساتھ کئی علامات ہوسکتی ہیں جو مندرجہ ذیل ہیں؛
اندامِ نہانی سے سفید یا پیلابدبودار مادےکااخراج
پنڈلیوں اور ریڑھ کی ہڈی میں درد
سستی اور کاہلی
پیٹ کے حصے میں بھاری پن
اندامِ نہانی میں خارش
نظامِ انہظام کے مسائل
چڑچڑاپن
ہمیں کیا کرنا چاہیے
زیادہ سےزیادہ پانی کا استعمال کریں۔
تازہ پھل اور سبزیوں کا استعمال کریں۔
اپنی غذا میں کیلا،سنترہ اور کینو کا شامل کریں۔
ہرےپتوں والی سبزیاں،دہی اور پیاز کا استعمال کریں۔
کاربوہائیڈریٹ والی غذاکا استعمال کریں۔
کم چکنائی والی چیزوں کا استعمال کریں۔
صفائی کا خاص خیال رکھیں۔
ذہنی دباؤ سے بچیں کیونکہ اس سےہارمونز کا توازن بگڑتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  آسٹیوپوروسس مردوں کی نسبت یہ مرض عورتوں میں زیادہ پایا جاتا ہے،کیوں؟

نسوانیت کے دشمن لیکوریا کا دیسی علاج

نصف صدی پہلے کی زندگی اور آج کے حالات میں کوئی مماثلت نہیں رہی۔ ایسے امراض سے واسطہ پڑ چکا ہے جو کبھی سنے نہیں گئے تھے۔ لیکوریا کا مرض بھی اتنی شدت پر نہ تھا۔ آج تو لڑکی جوں ہی ہوش سنبھالتی ہے، لیکوریا اس کو دبوچ لیتا ہے۔ آج اس مرض میں شدت کی وجوہات ماضی سے بالکل مختلف ہیں۔ ہمارے ہاں جانوروں کا دودھ اتارنے کے لیے انھیں جو انجکشن آکسی ٹوسن لگایا جاتا ہے، یہ جنسی امراض کی بنیاد بن چکا ہے۔

خون میں ایک مادہ جسے ایڈر نے لین (Adrenaline) کہتے ہیں، کی ریزش ہوتی رہتی ہے۔ اس سے اختلاج قلب، سوء ہضم، نفخ، درد سر یا دوسرا کوئی بھی بے نام مرض پیدا ہوتا ہے۔ اس کا مقابلہ ہماری قوت وتوانائی کرتی ہے، لیکن اس قوت کی بڑھوتری کے اسباب بھی ہونے چاہیں۔ ورنہ صحت کے کئی مسائل پیدا ہوں گے۔ جوانی کا احساس خیالات سے ہے، کسی مقوی غذا سے نہیں اور خیالات تبھی ٹھیک ہوں گے جب اعضائے رئیسہ تندرست ہوں گے۔

یہ بھی پڑھیں:  عورتوں میں صحت کی خرابی کی وجوہات

موٹے اناج جوار، باجرہ، جو، چنے وغیرہ کی جگہ باریک آٹے نے شوگر کا مرض پیدا کر دیا ہے۔ حلوہ پوری، برگر، چپس، پیزا، مرغ مسلم، فاسٹ فوڈ نے جو حشر برپا کر رکھا ہے، اس کا ہمیں احساس ہی نہیں۔ علامہ مشرقی نے ساری زندگی چھان بورہ کی چائے پی اور موٹے آٹے کی روٹی کھائی۔ ہمارے پڑوس میں ہنزہ ہے جہاں کے گورے چٹے اور خوب صورت لوگوں کی صحت قابل رشک ہے۔ یہ لوگ ہماری طرز بود وباش سے متنفر ہیں۔ بوتلوں کے بند پانی یعنی کولا مشروبات کو ہاتھ نہیں لگاتے۔ بھرپور سردی میں یخ ٹھنڈی لسی،مکھن اور دودھ ان کا من بھاتا کھاجا ہے۔

۱۔ گندم سات کلو، جو ۲ کلو، کالے چنے ایک کلو۔ سب کو ملا کر آٹا پسوا لیں اور اس کی روٹی کھایا کریں۔ لیکوریا کے علاوہ شوگر اور دیگر کئی خطرناک امراض سے ان شاء اللہ آپ کی جان چھوٹ جائے گی۔ بے ہودہ ناول، ننگی فحش تصاویر اور فلمیں، مخلوط تعلیم، کھٹائی، اچار، چٹ پٹی اشیاء، گرم اور تلی ہوئی چیزوں سے پرہیز کریں۔

۲۔ بھنڈی کے پودے کو جڑوں سے جدا کر کے اس سے پھلیاں اتار لیں اور جڑوں کو کوٹ کر باریک کر لیں۔ ذائقہ کے لیے مناسب مقدار میں میٹھا ساتھ ملا کر صبح شام نصف چمچ چائے والا پانی کے ساتھ کھائیں۔ لیکوریا کے ساتھ جریان، احتلام، سرعت انزال بھی ان شاء اللہ ختم ہو جائیں گے۔

حکیم محمد عمران مغل

اپنا تبصرہ بھیجیں