crocker_fish

72لاکھ کی قیمت،مچھلی اتنی مہنگی کیوں ہے؟

EjazNews

کروکر مچھلی کو مقامی بلوچی زبان میں کر اور اردو میں سوا کہتے ہیں۔

اس مچھلی کے گوشت کی قیمت بھی عام مچھلیوں کی طرح دو سو روپے سے تین سو روپے فی کلو ہے۔ اصل قیمت کروکر کے اندر پائے جانے والے سفید رنگ کے ایئر بلیڈر کی ہے جسے بلوچی زبان میں پھوٹو کہتے ہیں۔ اس ایئر بلیڈر کی چین، سنگا پور، ہانگ کانگ اور کئی یورپی ممالک میں بڑی مانگ ہے۔

ایئر بلیڈر کا استعمال ادویات، خوراک اور سرجری میں استعمال ہونے والے دھاگوں میں ہوتا ہے۔ اسے جسمانی اور جنسی قوت بڑھانے اور ہڈیوں کی مضبوطی کے لیے بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ اس بلیڈر سے بننے والے دھاگے کو آپریشن کے بعد نکالنا نہیں پڑتا اور وہ انسانی جسم میں جذب ہوجاتا ہے۔

مچھلی کے بلیڈر کو چین، سنگا پور اور ہانگ کانگ وغیرہ میں خاص قسم کے سوپ میں استعمال کیا جاتا ہے۔ہمارے ہاں عام شخص اسے شاید پینا بھی پسند نہ کریں مگر جسمانی طاقت بڑھانے کے لیے استعمال ہونے والا یہ پرتعیش کھانا چین کے امراء کے لیے سٹیٹس سیمبل کی حیثیت رکھتا ہے۔ وہ مہنگے ہوٹلوں میں کروکر مچھلی کے سوپ کے لیے بڑی سے بڑی قیمت بھی دینے کے لیے تیار ہوتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  روس میں روبوٹ کلرک بھرتی ، بے ایمانی کے اندیشے کم

ایرانی سرحد سے متصل بلوچستان کے ساحلی شہر جیونی سے ایک ہفتے کے دوران ماہی گیروں کو دو ایسی مچھلیاں ملی ہیں جو 80 لاکھ روپے سے زائد میں فروخت ہوئیں۔

کروکر نامی ان دو مچھلیوں کا وزن 48 کلو اور 26 کلو تھا جسے ناخدا عبدالوحید اور ماہی گیر عبدالحق نے پکڑا تھا۔ مچھلیوں کو فروخت کے لیے جیونی کی مقامی مچھلی مارکیٹ میں لایا گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں