Moulana_fazal_rehman_2

پیپلز پارٹی کی قیادت ابھی میچور نہیں ہے کہ سیاستدانوں کے پروٹوکول کو فالو کر سکے:مولانا فضل الرحمن

EjazNews

اسلام آباد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ پی ڈی ایم کی جانب سے آپ کا پورا احترام رکھا گیا لیکن آپ کے جواب نے پی ڈی ایم کی توہین کی ہے جس کا ازالہ آپ کو کرنا پڑے گا۔

پی پی پی کے بیان سے متعلق ایک اور سوال پر ان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کی قیادت ابھی میچور نہیں ہے کہ سیاستدانوں کے پروٹوکول کو فالو کر سکے۔

جو کام تین سال میں نہیں ہوسکا وہ کیا 2 سالوں میں ہوجائے گا؟ کے جواب میں مولانا نے کہا کہ جب تک تحریک اپنے اصولوں پر قائم ہے تو اس سے مستقبل وابستہ کیا جاسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایم کی تحریک اپنے اصولوں پر قائم ہے جس کے لیے کچھ دوستوں کی قربانی بھی دی، اس بنیاد پر ہم پاکستان کو ایک روشن مستقبل دینے کے لیے پر امید ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  پنجاب کے 60لاکھ خاندانوں کو صحت کارڈ دے چکے ہیں:وزیراعظم عمران خان

پیپلز پارٹی اور اے این پی کی دوبارہ پی ڈی ایم میں شمولیت سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ان جماعتوں کو پی ڈی ایم کے سربراہی اجلاس میں مدعو کرنے کی کوئی تجویز موجود نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ جو جماعتیں پی ڈی ایم کا حصہ ہیں انہی کے سربراہان اجلاس میں بیٹھیں گے، غور و فکر اور فیصلہ کریں گے، اس طرح ہوائی طور پر فیصلے نہیں ہوا کرتے۔

کیا شہباز شریف سے ملاقات میں پیپلز پارٹی یا اے این پی کی واپسی کے حوالے سے کوئی بات ہوئی؟ کے جواب میں مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ طے کیا گیا ہے کہ اس حوالے سے کوئی بھی فیصلہ پی ڈی ایم کے اجلاس میں کیا جائے گا۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ ہر ایک اپنے آئینی دائرہ کار میں رہے اس حوالے سے کسی کو کوئی بات بری نہیں لگنی چاہیے، ملک کو سیاست دان اکیلے نہیں چلاتے اس میں بیوروکریسی اور اسٹیبلشمنٹ بھی ساتھ چلتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  کشمیریوں آپ ہمارے اور ہم تمہارے ہیں، کوئی طاقت ہمیں جدا نہیں کر سکتی:امیر جماعت اسلامی

ان کا کہنا تھا کہ ضمنی الیکشن میں واضح ہوگیا اسٹیبلشمنٹ کردار ادا کرے تو نتیجہ کیا ہوتا ہے اور نہ کرے تو کیا ہوتا ہے۔

سربراہ جے یو آئی (ف) نے کہا کہ جے یو آئی (ف) کی مرکزی مجلس شوریٰ نے وقف املاک ایکٹ کو مسترد کرتے ہوئے قرآن و سنت اور آئین کے منافی قرار دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس قانون کو واپس لے کر اسے نظر ثانی کے لیے اسلامی نظریاتی کونسل میں بھیجا جائے، حکومت نے نئے بورڈز کی منظوری دے کر مدارس کے نظم و ضبط کو تباہ کرنے کی کوشش کی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ جے یو آئی سے کسی طرح بھی وابستہ کوئی بھی مدرسہ کسی سرکاری بورڈ میں شمولیت اختیار نہیں کرے گا، ہم سمجھتے ہیں حکومت کے یہ اقدامات مدارس کو کمزور کرنے کے عالمی قوتوں کے ایجنڈے کی تکمیل کے لیے کیے گئے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ ہمارا عزم ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کی پشت پناہی میں بنائے گئے یہ بورڈ اسی طرح غیر مؤثر کردیے جائیں گے جیسے پرویز مشرف کے ماڈل مدرسہ بورڈ کے منصوبے کو ناکام بنایا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:  گھریلو تشدد کی ممانعت اور تحفظ کا بل سینیٹ میں منظور

انہوں نے کہا کہ ہمارا اصولی مؤقف ہے کہ پاکستان کی فضائی اور زمینی حدود کسی کو استعمال کرنے کی اجازت نہ دی جائے، یہ کہنا کہ القاعدہ پھر زندہ ہوگئی ہے، یہ القاعدہ ساری زندگی امریکی مفادات کے لیے زندہ ہوتی رہے گی جسے بنیاد بنا کر وہ ساری دنیا میں فوجیں بھیجتے رہیں گے لیکن یہ ڈرامے اب نہیں چلیں گے۔