palestin_attack

اس بات کو تسلیم کرنا ہوگاکہ یہ ایک خوف زدہ اور صدمے سے دوچار آبادی ہے:اقوام متحدہ (ریلف اینڈ ورک ایجنسی)

EjazNews

فلسطینی پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کی نے کہا ہے کہ اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ بندی کے بعد اُن کی ترجیح غزہ کی پٹی میں بے گھر افراد کو ڈھونڈنا اور ان کی مدد کرنا ہے۔

غزہ میں اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی کے سربراہ میتھائس شمیلے نے کہا ہے کہ اِس کا آغاز انفراسٹرکچر کو ہونے والے نقصان کا تخمینہ لگانے کے کام سے ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ جنگ بندی ہو چکی ہے تاہم ایسا محسوس ہوتا کہ یہ جنگ بندی آسانی سے ختم بھی ہو سکتی ہے۔

ویڈیو لنک کے ذریعے جینیوا میں صحافیوں سے گفتگو میں میتھائس شمیلے نے کہا کہ ساڑھے تین سال کا عرصہ غزہ یہاں گزارنے کے بعد مجھے اس بات کا یقین ہے کہ اگر بنیادی وجوہات کی طرف توجہ نہ دی گئی تو ہم جنگ کی جانب واپس چلے جائیں گے۔

میتھائس شمیلے نے صحافیوں کو بتایا کہ غزہ میں اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی ہنگامی ریسپانس سے اب ابتدائی بحالی کے لیے کام کر رہی ہے اور ایجنسی کی تین ترجیحات ہیں جس میں ایک بے گھر افراد کو ڈھونڈنا اور ان کی مدد کرنا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  عالمی وبا کا اختتام تب ہو گا جب ہم اس کے ساتھ جینا سیکھ لیں گے:ڈبلیو ایچ او

رات کو، 66 ہزار سے زیادہ افراد جنہوں نے ہمارے 59 سکولوں میں پناہ لی وہ اپنے گھروں کو لوٹ چکے ہیں۔ ابھی صرف چند سو افراد باقی ہیں، یہ وہ لوگ ہیں جو اپنے گھر کھو چکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہماری دوسری ترجیح نقصانات کا اندازہ لگانا ہے اور تیسرا یہ کہ اس بات کو تسلیم کرنا کہ یہ ایک خوف زدہ اور صدمے سے دوچار آبادی ہیں۔

ہم صرف انفراسٹرکچر کی تعمیر نو کی جانب نہیں دیکھ سکتے۔ ہمیں زندگیوں کی تعمیر نو کرنے کی ضروت ہے یا پھر سے زندگیاں بنانے میں مدد کرنے کی۔