bitcoine

چین کی اپنی مالیاتی اداروں کو ہدایات:بٹ کوئن کی قدر زمین پر آگئی

EjazNews

چین کی جانب سے مالیاتی اداروں کو کرپٹو کرنسی کی سہولیات استعمال کرنے سے روکنے کے بعد بٹ کوئن سمیت دیگر کرپٹو کرنسیوں میں ریکارڈ کمی دیکھنے میں آئی ہے۔

بٹ کوئن رواں سال جنوری کے مہینے کے بعد اپنی کم ترین سطح پر آگیا ہے۔ بٹ کوئن کی قدر 19 فیصد کم ہو کر 35 ہزار ڈالر فی بٹ کوئن سے نیچے آ گئی ہے۔

چین کی جانب سے مالیاتی اداروں کو کرپٹو کرنسی کی سہولیات استعمال کرنے سے روکنے کے بعد بٹ کوئن سمیت دیگر کرپٹو کرنسیوں میں ریکارڈ کمی دیکھنے میں آئی ہے۔

برطانوی میڈیا کے مطابق اس کے علاوہ گذشتہ 24 گھنٹوں میں دوسری مشہور کرپٹو کرنسی ایتھیریم کی قدر میں 27 فیصد کمی دیکھنے میں آئی ہے اور دیگر کرنسیز کی قدر میں بھی 30 سے 35 فیصد تک کمی دیکھی گئی ہے۔چین نے بدھ کو اپنے بینکوں کو کرپٹو کرنسیز میں ٹرانزیکشن کرنے سے خبردار کیا تھا اور ساتھ ہی سرمایہ کاروں کو بھی قیاس آرائیوں پر مبنی تجارت سے گریز کرنے کا کہا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:  کشمیر میں کھیلے جانے والے کھیل کا ایک رخ

ویسے تو چین کی جانب سے کرپٹوکرنسی میں کاروبار کرنے پر 2019 میں ہی پابندی عائد کر دی گئی تھی اور اس کی وجہ لوگوں کو پیسہ ملک سے باہر لے جانے سے روکنا ہے۔

اس کے علاوہ الیکٹرک گاڑیاں بنانے والے امریکی ارب پتی ایلون مسک کی جانب سے بٹ کوئن کے ٹیسلا گاڑیوں کی خرید و فروخت میں استعمال نہ کرنے کے بعد بھی بٹ کوئن کی قدر کو دھچکا لگا تھا۔

معروف جریدے فوربس کے مطابق گذشتہ ایک ہفتے میں کرپٹو مارکیٹ کی مالیت میں 700ارب ڈالر کی کمی آئی ہے۔تاہم اس وقت کرپٹو کرنسی بٹ کوائن کی قیمت 48500 ڈالر تک گری تھی مگر اب کی بار بٹ کوائن کی قیمت 30 ہزار ڈالرتک گر گئی تاہم اس کی قیمت میں قدرے اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

ان چینی مالیاتی اداروں نے جنھیں چینی ریاست کی حمایت حاصل ہے، لوگوں کو خبردار کیا کہ اگر انھیں کرپٹو کرنسی کی تجارت کے دوران کسی قسم کے نقصان کا سامنا کرنا پڑا تو انھیں کوئی تحفظ حاصل نہیں ہو گا۔

یہ بھی پڑھیں:  کرونا سے سب سے زیادہ متاثر ترقی یافتہ ممالک ہیں

ان اداروں نے لوگوں کو خبردار کیا کہ کرپٹو کرنسی کی مالیت میں حالیہ تبدیلی لوگوں کے اثاثوں کے حفاظت کی خلاف ورزی ہے اور عام معاشی اور مالی امن کو متاثر کر رہی ہے۔