GazaUnderAttack

اسرائیل کی فلسطین پر مسلسل گولہ باری ،63بچوں سمیت شہداء کی تعداد227سے زائد ہوگئی

EjazNews

غزہ پر اسرائیلی بمباری مسلسل جاری رہی ہے، اسرائیلی لڑاکا طیاروںنے رہائشی عمارتوں پر فضائی حملے کئے جس سے متعدد عمارتیں ملبے کا ڈھیربن گئیں۔ فائرنگ سے 5 فلسطینی مظاہرین جبکہ بمباری کے نتیجے میں ایک صحافی اور ایک خاندان کے معذور سربراہ، حاملہ بیوی اور انکے 3سالہ بچے سمیت مزید 13افراد شہید ہوگئے۔

غزہ کے وزارت صحت حکام کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں اب تک63 بچوں سمیت شہداء کی تعداد 227 ہو گئی ہے۔52 ہزار فلسطینی بے گھر ہو چکے ، جبکہ مجموعی زخمیوں کی تعداد 1500سے زائدہے۔مقبوضہ مغربی کنارے اوربیت المقدس میں گزشتہ روز فلسطینی مظاہرین اور اسرائیلی فوج میں جھڑپیں ہوئیں۔اسرائیلی فوج نے شیلنگ اور براہ راست فائرنگ کی جس سے متعدد افراد زخمی بھی ہوئے۔فورسز نے مغربی کنارے میں فائرنگ کر کے مزید 4 مظاہرین کو شہید کر دیا۔ فورسز نے مظاہرین پر دھاوا بول دیا، مسجد اقصیٰ کے دمشق گیٹ کے قریب فلسطینیوں پر فائرنگ کی، بے ہوش کرنے والے بم پھینکے، متعدد افراد کو گرفتار بھی کرلیا۔غزہ پر حملوں کے خلاف مغربی کنارے کے مختلف شہروں میں فلسطینیوں نے کار ریلیاں بھی نکالیں۔پر تشدد کارروائیاں دسویں روز میں داخل ہونے کے باوجود غزہ میں حماس اور اسرائیلی حکام کے درمیان جنگ بندی کی تمام سفارتی کوششیں ناکام ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  امریکی اپنی ٹیکنالوجی کو بیرون ملک ٹرانسفر کرنے پر کتنے سخت اقدامات کر رہے ہیں؟

اسرائیل کا کہنا ہے غزہ پٹی میں فائر بندی زیرغور نہیں، اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو نے حملے جاری رکھنے کا اعلان کرتے ہوئے دھمکی دی ہے کہ غزہ پر فوجی آپریشن جاری رکھا جائے گا، ہمارا ہدف حماس کو روکناہے، ضرورت پڑی تو حماس کو ختم بھی کیا جاسکتا ہے۔ اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے غزہ پر حملے روکنے سے صاف انکارکردیاجبکہ حماس نے مصر کی جنگ بندی کی تجویز مان لی۔ادھر حماس کے راکٹ حملوں سے پہلی بار اسرائیل کا بڑا تجارتی اور شپنگ نقصان ہوگیا۔اسرائیل بڑا سرپرائز دینے والے حماس رہنما محمد الضیف کی تلاش میں ہے۔

فلسطینی صدر محمود عباس کا کہنا ہے کہ اسرائیل غزہ میں منظم ریاستی دہشت گردی اور جنگی جرائم کا ارتکاب کر رہاہے، جنگی جرائم کا ارتکاب کرنے والوں کو عالمی عدالتوں میں لے جانےسےگریز نہیں کریں گے۔اسرائیلی فوج نے اردن کی سرحد کے قریب ایک ڈرون مار گرانے کا دعویٰ کیا ہے۔
ایک نشریاتی ادارے سے بات کرتے ہوئے اسرائیلی فوج کے ترجمان نے بتایا کہ انہوں نے اردن کے علاقے وادی الایون کے قریب ڈرون کو اس وقت مار گرایا جب وہ اسرائیلی سرحد کی طرف بڑھ رہا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:  دنیا کی معیشتیں خطرے کی زد میں ہیں

ادھراقوام متحدہ کے بچوں کیلئےقائم ادارہ یونیسف کے سربراہ نے غزہ میںفوری جنگ بندی کا مطالبہ کردیا جبکہ فلسطین کے مہاجرین کیلئےقائم اقوام متحدہ کےامدادی ادارے (یو این آر ڈبلیو اے)نے غزہ میں انسانی بحران سے نمٹنے کیلئے 38ملین ڈالر فنڈ زکی اپیل کردی ہے۔یونیسیف کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ہنریٹا فور نے ایک بیان میں کہاکہ غزہ کے ایک ملین بچے پرتشددواقعات کےباعث برےنتائج سے دوچار ہیں۔کئی جانیں ضائع اور خاندان بکھر چکے ہیں۔فلسطین میں فوری جنگ بندی عمل میں لائی جائے۔

امریکی نشریاتی ادارے سے تعلق رکھنے والے صحافی سے اسرائیلی فورسز کی بدسلوکی کی ویڈیو سوشل میڈیا پر گردش کررہی ہے۔سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی اس ویڈیو کلپ میں سی این این کے نامہ نگار کو اسرائیلی فورسز میں گھرے ہوئے اور ان کی جانب سے دھکے دیتے ہوئے دیکھا جاسکتا ہے۔ویڈیو کلپ میں دیکھا جاسکتا ہے کہ سی این این کے سینئر صحافی بین ویڈیمین کو اسرائیلی فوجیوں نے پتھروں سے بنی رکاوٹ کے قریب گھیر رکھا ہے اور انہیں دھکیلا جا رہا ہے۔اب تک1500 سے زائد فلسطینی اسرائیلی حملوں میں زخمی ہوچکے جبکہ حماس کے راکٹ حملوں کے نتیجے میں اسرائیل میں 2 بچوں سمیت 13 افراد ہلاک اور 300 سے زائد زخمی ہوئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  امریکہ سے اب بات چیت نہیں ،ایران کی ساری قیادت اس پر متفق ہے:سپریم لیڈر خامنہ ای