India_covid_19_emergancey

بھارت میں کوروناکا نیا عالمی ریکارڈ،متحدہ عرب امارات کی پابندی کے بعد نیا بحران شروع

EjazNews

شمشان گھاٹ اورقبرستان بھر گئے، کرناٹک میں کھلے مقامات پر آخری رسومات ہونے لگیں،دوسری جانب یواے ای ،عمان نے بھارت پر سفری پابندیاں لگادی ہیں۔

گزشتہ روز دنیا میں کہیں بھی ایک دن میں کووڈ۔19 کے نئے کیسز کی سب سے زیادہ تعداد بھارت میں ریکارڈ کی گئی اور گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران سب سے زیادہ ہلاکتوں کی تعداد بھی رپورٹ ہوئی،گزشتہ 24 گھنٹوں میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 2ہزار 104ہے جبکہ اسی دوران تقریباً تین لاکھ 14ہزار 835افراد نئے کیسز ریکارڈ کیے گئے ہیں۔

انڈیا میں کووڈ۔19کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد تقریباً ایک کروڑ 60 لاکھ کے قریب ہو چکی ہے، جو امریکاکے بعد دوسرے نمبر پر ہے۔کورونا وائرس کی دوسری لہر نے ملک کو ہلا کر رکھ دیا ہے جس سے اس کے صحت کی دیکھ بھال کے نظام کے بارے میں خدشات بڑھ رہے ہیں۔

ادھر بھارتی ماہرین نے کورونا کا پھیلاؤ روکنے کیلئے شہریوں کو ڈبل فیس ماسک استعمال کرنے کی ہدایت کر دی،کانگریسی رہنما ششی تھرور اور سپریم کورٹ کے چار جج بھی کورونا سے متاثر ہوگئے ۔

یہ بھی پڑھیں:  شہید کی قبر بھی انڈین فوج کو ڈرا رہی ہے

انڈیا کی ریاست کرناٹک میں حکومت نے کووڈ 19 کے سبب مرنے والے افراد کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیش نظر کھلے مقامات پر آخری رسومات اور تدفین کی اجازت دے دی ہے۔

دوسری جانب متحدہ عرب امارات کی نیشنل ایمرجنسی کرائسز اینڈ ڈیزاسٹرمینجمنٹ اتھارٹی اور جنرل اتھارٹی آف سول ایوی ایشن نے اعلان کیا ہے کہ وہ انڈیا سے آنے والی قومی اور غیر ملکی کیریئرز کی تمام پروازوں کو معطل کر رہے ہیں، اس کے علاوہ ان کیریئرز کی طرف سے آنے والے ٹرانزٹ مسافروں پر بھی پابندی ہو گی،رعایت صرف ان ٹرانزٹ فلائٹس کو دی جائے گی جو متحدہ عرب امارات آ رہی ہیں اور ان کی منزل انڈیا ہے۔

متحدہ عرب امارات کے لیے انڈین پروازوں پر پابندی کے اطلاق سے قبل کورونا سے خوفزدہ انڈین شہری ملک سے نکلنے کی کوششیں کر رہے ہیں۔

کورونا کی وبا میں خطرناک حد تک اضافے کے بعد انڈیا میں امیر افراد ملک سے نکلنے کی دوڑ میں لگ گئے ہیں جس کی وجہ سے نہ صرف فضائی سفر کے کرایوں میں ہوشربا اضافہ ہوا ہے بلکہ پرائیوٹ جیٹ کی مانگ بھی بڑھ گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  ہم امن چاہتے ہیں، کابل انتظامیہ کے الزامات بلا جواز ہیں:ترجمان طالبان

انڈیا میں کورونا وائرس کی صورتحال بے قابو ہونے کے بعد انڈیا سے امارات جانے والی پروازوں پر اتوار کے روز سے پابندی عائد کر دی جائے گی۔

ممبئی سے دبئی جانے والی پروازوں کا یک طرفہ کرایہ ایک ہزار ڈالر تک پہنچ گیا ہے جو عام قیمت سے دس گنا زیادہ ہے۔جبکہ دہلی سے دبئی جانے والی پرواز کا کرایہ 50 ہزار انڈین روپے سے زیادہ ہے جو عام قیمت سے پانچ گنا زیادہ ہے۔

اتوار کے لیے کوئی ایئر لائن ٹکٹ فراہم نہیں کر رہی، اس دن سے فلائٹ آپریشن دس دن کے لیے معطل کر دئیے جائیں گے۔

انڈیا میڈیا میں چل رہے بیانات کے مطابق چارٹر کمپنی ایئر چارٹر سروس انڈیا کے ترجمان کا کہنا ہے پرائیویٹ جیٹ میں لوگوں کی دلچسپی حد سے زیادہ بڑھ گئی ہے۔ ان کی چارٹر سروس کی سنیچر کو 12 پروازیں دبئی جا رہی ہیں، جس میں تمام سیٹیں بک ہوئی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  گرین زون پر ایران نے دو راکٹ فائر نہیں کیے تو پھر کون جنگ چھیڑنا چاہتا ہے؟

ایک اور چارٹر کمپنی اینتھرال ایوی ایشن کے ترجمان نےکاکہنا ہے طلب کو پورا کرنے کے لیے مزید جہازوں کی درخواست کی گئی ہے۔

عرب امارات میں تقریباً 30 لاکھ سے زیادہ انڈین رہتے ہیں جو وہاں کی آبادی کا ایک تہائی حصہ ہیں، ان میں سے اکثر دبئی میں رہائش پذیر ہیں۔