Leprosy

جذام ۔جلد اور اعصاب متاثر کرنے والامرض (طبی معلومات)

EjazNews

عالمی ادارۂ صحت کی 2020ء میں جاری کردہ ایک رپورٹ کے مطابق 2019ء میں پوری دُنیا میں 202189 افراد جذام کا شکار ہوئے، جن میں سے114451کا تعلق بھارت سے تھا۔البتہ پاکستان میں کُل 347کیسز رپورٹ ہوئے، جن میں سب سے زیادہ کیس صوبۂ سندھ سے تھے۔مذکورہ رپورٹ کی تفصیل کے مطابق سندھ میں138(40فیصد)، پنجاب میں 112(32فیصد)، خیبر پختونخوا میں 69 (20فیصد)، بلوچستان میں21(6فیصد) ، آزاد کشمیر میں 6(2فیصد) اور گلگت بلتستان میںایک(0.2فیصد) مریض تشخیص ہوا۔ ان مریضوں میں 190(55فیصد) خواتین اور23(7فیصد)بچے شامل تھے۔نیز،54 مریض ( 16فیصد) تشخیص کے وقت کسی نہ کسی جسمانی معذوری کا شکار تھے۔

پاکستان میں’’لیپروسی کنٹرول پروگرام‘‘ کی کامیابی کا سہرا بلاشبہ جرمن نژادخاتون، ڈاکٹر روتھ فائو ہی کے سَر جاتا ہے، جنہوں نے 1960ء میں کراچی سےخلوصِ نیت سے نہ صرف کام کا آغاز کیا، بلکہ عوام میں مرض کا شدید خوف ختم کرکےشعور و آگاہی عام کی۔ انہوں نے 1965ء میں جذام کے علاج کے لیے پہلا فیلڈ کلینک، ضلع سوات میں پیربابا کے مقام پر قائم کیا اور یہ اُن ہی کی کاوشوں کا نتیجہ تھا کہ 1996ء میں مشرقی بحیرۂ روم کے خطّے(Eastern Mediterranean Region) میںپاکستان پہلا ایشیائی مُلک تھا، جس نے جذام کے پھیلائو پر کامیابی سے قابو پایا، مگر افسوس کہ دیگر مُمالک کی طرح تاحال پاکستان سے بھی جذام کا مکمل طور پر خاتمہ نہیں ہوسکا،جس کی بنیادی وجہ مؤثر ویکسین کادریافت نہ ہونا ہے۔ جذام یا کوڑھ ایک متعدی مرض ہے،جسے طبّی اصطلاح میں لیپروسی کہا جاتا ہے۔ یہ ایک خاص قسم کے جرثومے مائیکو بیکٹیریم لیپری (Mycobacterium Leprae) کی وجہ سے لاحق ہوتا ہے۔ جذام کے جراثیم مریض کے چھینکنے یا کھانسنے سے ہوا میں پھیل جاتے ہیں اور سانس کے ذریعے کسی دوسرے فرد کے جسم میں داخل ہوکر اُسے بھی متاثر کردیتے ہیں۔ یہ مرض مَرد و عورت کو عُمر کے کسی بھی حصے میں لاحق ہوسکتا ہے اور اس کا موروثیت سے کوئی تعلق نہیں۔جذام کا مرض عام طور پر جِلد، اعصاب، نسوں، خصوصاً بازوئوں اور ٹانگوں کو متاثر کرتا ہے۔ ابتدا میںجلد میں ہلکے سفید یا سُرخ دھبّے (Patches) یا اُبھار (Plaques)نمودار ہوتے ہیں، جن میں خارش نہیں ہوتی۔جیسا کہ دیگر جلدی امراض میں ہوتا ہے۔ ان دھبوں یا اُبھاروں کو چُھونے سے کوئی احساس بھی نہیں ہوتا۔البتہ بعض مریضوں کی جلد پر پہلے ہلکا سا سفید یا سرخی مائل دھبّا پڑتا ہے، توکچھ کے جسم کے کسی بھی حصّے پر پیلے دھبّے ظاہر ہونے لگتے ہیں۔ بازوئوں اور ٹانگوں کی نَسوں پر اثر انداز ہونےکے نتیجے میں ہاتھوں اور پیروں میں درد ہوتاہے اورمحسوس کرنے کی صلاحیت بھی متاثرہوجاتی ہے۔ نیز،ہاتھ پاؤںکے پٹّھے بھی کم زور ہوجاتے ہیں۔ بعض مریضوںمیں کانوں کی جِلد سُرخ اور متوّرم نظر آتی ہے۔ بھنوئوں کے بال جَھڑ جاتے ہیں، تو جِلد میں دانے یا گلٹیاں بھی ظاہر ہوسکتی ہیں۔عموماً جب مرض ابتدائی مرحلے میں ہو تو زیادہ تر مریض اس سے لاعلم رہتے ہیں اور یہی لاعلمی کئی پیچیدگیوں کا باعث بن سکتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  اب نیندکی دشواریوں سے پریشان نہ ہوں

جذام کی تشخیص کے لیے جِلد کا ایک مخصوص ٹیسٹ تجویز کیا جاتا ہے، جس کے ذریعے جسم میں جراثیم کی جانچ ہوتی ہے۔یہ مرض قابلِ علاج ہے،لیکن بروقت علاج نہ کروایا جائے، تو مریض ہاتھوں، پیروں سے معذور ہوسکتا ہے۔ دراصل، اس مرض میںہاتھ پاؤں سن رہنے کے باعث مریضوں کو چوٹ، زخم، ٹھنڈے، گرم کا احساس نہیں ہوتا۔ مثال کے طور پر اگر مریض چائے پی رہا ہے، اُسے پیالی کی حدّت محسوس نہیں ہو گی۔ پائوں میں کیل یا کانٹا چبھ جائے، تو درد کا احساس نہیں ہوگا۔ چوٹ لگ جائے تو بھی پتا نہیں چلتا۔ اگر خدا نخواستہ زخم ہو جائے یا چھالا پڑ جائے، تو انفیکشن کا خطرہ بڑھ جاتا ہے، جو پھرمعذوری کی وجہ بن جاتا ہے۔ جذام کے علاج کا دورانیہ چھے ماہ سے ایک سال پر مشتمل ہے۔ اگر مرض ابتدائی مرحلے میں تشخیص ہوجائے تو مریض چھے ماہ کے علاج سے صحت یاب ہوجاتے ہیں اور کوئی پیچیدگی بھی جنم نہیں لیتی ۔ لیکن تاخیر سے تشخیص کی صُورت میں علاج کا دورانیہ ایک یا دو سال تک بڑھ جاتا ہے۔ واضح رہےکہ دُنیا بَھر میں عالمی ا دارۂ صحت کی جانب سے لیپروسی کی تجویز کردہ ادویہ مفت فراہم کی جاتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  آنتیں دوسرا دماغ ہوتی ہیں، صحت مند رہنے کیلئے ان کا خیال رکھنا بھی ضروری ہے

پاکستان میںحکومت کے اشتراک سے جذام کے علاج کے لیے دو بڑےادارے کام کررہے ہیں۔ ایک ادارہ ’’میری ایڈیلیڈ لیپروسی سینٹر‘‘(Marie Adelaide Leprosy Centre) 1965ء سے سندھ، بلوچستان، خیبر پختونخوا، گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر میں صوبائی محکمۂ صحت کے تعاون سے کام کررہا ہے،جب کہ دوسرا ’’ایڈ ٹو لیپروسی پیشنٹس‘‘(Aid to Leprosy Patients) بھی تقریباً اتنے ہی عرصے سے پنجاب سمیت خیبرپختون خوا کے ہزارہ ڈویژن میں خدمات انجام دے رہا ہے۔مُلک بَھر میں ایم اے ایل سی کے157سینٹرز قائم ہیں۔ہیڈ آفس اور ہسپتال کراچی میں واقع ہے،جبکہ اے ایل پی کا مرکزی ہسپتال راولپنڈی میں ہے۔ان دونوں اداروں اورتمام مراکز میں مرض کی تشخیص سے لے کر علاج معالجے کی تمام تر سہولتیں مفت فراہم کی جاتی ہیں۔

بشکریہ:ڈاکٹر مطاہر ضیاء

کیٹاگری میں : صحت