Diosai-3

دیو سائی کو پہلی مرتبہ سکیٹنگ کے ذریعے عبور کر لیا گیا

EjazNews

پاکستان میں جتنے خوبصورت اور تاریخی مقامات ہیں اور جتنی تہذیبوں کے پاکستان میں اثرات ہیں۔ دنیا کے بڑے کم ممالک ایسے ہیں جو اتنی تاریخ اور خوبصورتی اپنے اندر سموئے ہوئے ہیں۔

آپ یقین مانئے یا نا مانئے جب کوئی اچھا فوٹو گرافر پاکستان کے خوبصورت علاقوں کی تصاویر بناتا ہے اور اسے شیئر کرتا ہے تو خود پاکستانی بھی حیران ہو جاتے ہیں کہ یہ ہمارا ملک ہے کیونکہ بذات خودبہت سے پاکستانیوں نے بھی اپنا پورا ملک نہیں دیکھا ہوتا۔

Diosai_1
دیو سائی ایک ایسی جگہ ہے جہاں کے بارے میں گمان کیا جاتا ہے کہ یہاں خلائی مخلوق بھی آتی ہے۔

تحریک انصاف کی حکومت نے ٹوراسٹ انڈسٹری کو فروغ دینے کیلئے اپنے تئیںبہت سی کوششیں کی ہیں۔ اس کی مثال ہمیں خیبر پختونخوا میں بھی ملتی ہے کہ جب تحریک انصاف کی حکومت وہاں تھی تو وہاں ٹورسٹوں میں بہت زیادہ اضافہ ہوا۔

اب صوبائی اور سنٹرل حکومت دونوں تحریک انصاف کے پاس ہیں تو حکومت نے اس ضمن میں کوششیںاور بھی تیز کی ہیں لیکن کورونا کی وجہ سے پوری دنیا کی ٹورسٹ انڈسٹری کو بہت نقصان پہنچا ہے وہ ممالک جن کی معیشت ہی ٹورسٹ تھی وہ ہل کر رہ گئے ہیں کیونکہ دنیا ایک قسم کی بند ہو گئی تھی اپنے شہروں ، محلوں اور گھروں تک۔ جیسے جیسے کورونا کے اثرات کم ہو رہے ہیں ٹورسٹ انڈسٹری بھی پھلنا پھولنا دوبارہ سے شروع ہو رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  پہلی دفعہ مرکزی عبادت گاہ پہنچنے پر خوشی سے ان کی آنکھیں پُر نم ہوئیں

وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر لکھا کہ پاکستان میں سیاحت اور اس کی ریزورٹس کے مقامات کا جائزہ لے رہے ہیں۔ پہلی بار موسم سرما میں دیوسائی میدان کو سکیٹنگ کے ذریعے عبور کیا گیا۔وزیر اعظم عمران خان نے دیوسائی میدان کی خوبصورت تصاویر بھی سوشل میڈیا پر شیئر کر دیں۔

دیو سائی ایک ایسی جگہ ہے جہاں کے بارے میں گمان کیا جاتا ہے کہ یہاں خلائی مخلوق بھی آتی ہے۔ اگر آپ نے دیو سائی نہیں دیکھا تو ضرور دیکھیں کیونکہ دیو سائی کی خاموشی اور پر اسرایت آپ کو یہ سوچنے پر مجبور کر دے کہ یہ کچھ خاص ہے۔

Diosai
پہلی بار موسم سرما میں دیوسائی میدان کو سکیٹنگ کے ذریعے عبور کیا گیا

ایک طاقتور ملک نے پاکستان سے مطالبہ کیا تھا کہ دیو سائی کے میدان انہیںتحقیق کی غرض سے دے دئیے جائیں کہ یہاں خلائی مخلوق کا گزر ہوتاہے کہ نہیں ہم دیکھنا چاہتے ہیں۔لیکن ہمارے ہمسائے ملک چین کا خیال تھا کہ یہاں سے وہ چین کی جاسوسی کرنا چاہتے ہیں نہ کہ خلائی مخلوق پر تحقیق۔ بحر کیف یہ ایک سیاسی بحث ہے ہم اس میں نہیں پڑناچاہتے۔

یہ بھی پڑھیں:  وفاقی حکومت کا عیدالفطر پر 4 چھٹیوں کا اعلان
Diosai_2
 کے ٹو جیسا سرد پہاڑ بھی آپ کو یہاں ہی ملا گا اورخپلو جیسے پر فضا مقام سے لے کر قدیم تہذیب

بلتستان میں آپ جہاز کے ذریعے بھی جاسکتے ہیں۔ اور اسلام آباد سے تقریباً آپ بیس پچیس منٹ میں ایک بوئنگ طیارے کے ذریعے گلگت بلتستان پہنچ جاتے ہیں۔ کے ٹو جیسا سرد پہاڑ بھی آپ کو یہاں ہی ملا گا اورخپلو جیسے پر فضا مقام سے لے کر قدیم تہذیب جو صرف آپ نے فلموں یا خیالوں میں سوچی ہو گی آپ کو یہاں دیکھنے کو ضرور ملے گی۔