Asad-Umar

برطانیہ سے آنے والی کورونا پچھلی لہروں کے مقابلے میں تیزی سے پھیل رہی ہے:وفاقی وزیر اسد عمر

EjazNews

کورونا کی وبائی صورتحال پر نظر رکھنے والے نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر کے سربراہ وفاقی وزیر اسد عمر نے کہا ہے کہ گزشتہ 12 دنوں کے دوران ملک میں وائرس کے کیسز کی تعداد میں تشویشناک حد تک اضافہ ہوا ہے اور ہسپتالوں میں انتہائی نگہداشت کے شعبے میں داخل ہونے والے مریضوں کی تعداد 2842 تک پہنچ گئی ہے۔

اسلام آباد میں این سی او سی کے خصوصی اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے اسد عمر کا کہنا تھا کہ کورونا کی پہلی لہر کے دوران ہسپتالوں کے انتہائی نگہداشت کے شعبے میں تشویشناک مریضوں کی زیادہ سے زیادہ تعداد 3300 تک پہنچی تھی جبکہ دوسری لہر کے دوران یہ تعداد 2511 رہی تھی۔

اسد عمر کے مطابق گزشتہ 12 دنوں میں ملک کے ہسپتالوں میں کورونا کے تشویشناک مریضوں کی تعداد میں ایک ہزار سے زائد کا اضافہ ہوا ہے۔ یہ تعداد 1800 سے کچھ اوپر تھی جو اب بڑھ کر 2800 سے بڑھ گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  اسرائیلی ادارے این ایس او نے وزیراعظم عمران خان کا ٹیلی فون ریکارڈ کر لیا ہے

ان کا کہنا تھا کہ کورونا کی برطانیہ سے آئی نئی قسم زیادہ تیزی سے پھیلتی ہے اور زیادہ مہلک بھی ہے۔ اگر اسی رفتار سے اضافہ ہوا تو اگلے چند دن کے اندر پہلی لہر کی صورتحال سے بھی خطرناک صورتحال سے دوچار ہوں گے۔
وفاقی وزیر نے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ اگر صورت حال قابو میں نہ آئی تو پہلے سے سخت بندشیں لگائی جا سکتی ہیں۔

انہوں نے پچھلی دو لہروں کا تیسری لہر سے موازنہ کرتے ہوئے کہا کہ برطانیہ سے آنے والی کورونا پچھلی لہروں کے مقابلے میں تیزی سے پھیل رہی ہے۔

انہوں نے دوسرے ممالک کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ تیسری لہر پورے خطے میں نظر آرہی ہے، انڈیا روزانہ کیسز کی تعدد 10 ہزار کے قریب تھی جو یکدم 47000 تک جا پہنچی ہے۔

انہوں نے انتباہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر احتیاط نہ کی گئی تو خدانخواستہ ہم پہلی لہر سے بھی آگے نکل سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  حکومت زراعت کے شعبے میں جدت لانا چاہتی ہے: وزیراعظم عمران خان

انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ زیادہ سے زیادہ احتیاط کریں اور اپنے ساتھ ساتھ اپنے پیاروں کا خیال رکھیں۔