child-abuse

4سالہ بچی کو زیادتی بعد قتل کیا گیا

EjazNews

4سالہ بدھ کی دوپہر سے لاپتا تھی جس کی رپورٹ ان کے دادا نے چوکی ملز ایریا میں درج کرائی تھی اور بچی کو ان کے لواحقین اور پولیس نے رات بھر تلاش کیا تھا۔

جمعرات کو بچی کی لاش خٹک کالونی کے علاقے میں نالے سے برآمد کی گئی تھی اور مقدمے میں قتل کی دفعہ بھی شامل کر لی گئی تھی۔
واقعہ کے خلاف متاثرہ بچی کے لواحقین اور علاقہ مکینوں نے کوہاٹ کے یونیورسٹی روڈ پر احتجاجی مظاہرہ کیا تھا اور حکومت سے انصاف کا مطالبہ کیا تھا۔

جمعرات کو بچی کی لاش خٹک کالونی کے علاقے میں نالے سے برآمد کی گئی جسے پوسٹ مارٹم کے لیے ڈویژنل ہیڈ کوارٹرز کے ڈی اے ہسپتال منتقل کردیا گیا تھا۔

ڈی پی او کوہاٹ سہیل خالد نے بتایا کہ مقتول بچی کی میڈیکل رپورٹ میں زیادتی کی تصدیق ہوگئی ہے اور اسے زیادتی کے بعد گلا دبا کر قتل کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں:  اسلام آباد تشدد کیس:وزیراعظم کی ہدایت پر پولیس نے فوری ملزمان کو گرفتار کیا:شہباز گل

انہوں نے بتایا کہ بچی سے زیادتی اور قتل کے کیس میں درجنوں مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا اور ان کے ڈی این اے نمونے لیبارٹری بھیج دئیے گئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ میڈیکل رپورٹ میں موت کی وجہ گلا دبانے کی وجہ سے سانس بند ہونے سے ہوئی۔

دوسری جانب 4 سالہ حریم فاطمہ کی نماز جنازہ آبائی قبرستان بابل خیل میں ادا کردی گئی۔

نماز جنازہ میں ڈپٹی کمشنر کرک عبد الغفور شاہ، ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر طارق حبیب سابق رکن قومی اسمبلی شاہ عبد العزیز مجاہد سمیت سیاسی و سماجی رہنماؤں نے بھر پور شرکت کی اور واقعہ کی شدید مزمت کرتے ہوئے حکومت سے قاتلوں کی فوری گرفتاری اور نشان عبرت بنانے کا مطالبہ کیا۔

واضح رہے کہ گزشتہ سال پولیس کے اعداد و شمار کے مطابق پہلے آٹھ ماہ میں بچوں سے زیادتی کے 182 کیسز رجسٹرڈ ہوئے تھے، جن میں سے چار کیسز میں بچوں کو زیادتی کے بعد قتل کردیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:  ملک بھر کے 41 کنٹونمنٹ بورڈز میں کانٹے کا مقابلہ ہوا،پی ٹی آئی نے میدان مار لیا