pdm

مولانا فضل الرحمن پریس کانفرنس ادھوری چھوڑ کر چلے گئے، لانگ مارچ ملتوی

EjazNews

اسلام آباد میں پی ڈی ایم کے اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ پی ڈی ایم کا سربراہی اجلاس منعقد ہوا جس میں نواز شریف، آصف علی زرداری، بلاول بھٹو زرداری اور ڈاکٹر جمالدینی صاحب وڈیولنک کے ذریعے شریک ہوئے۔

ان کا کہنا تھا کہ اجلاس کا ایجنڈا 26 مارچ کے لانگ مارچ کے حوالے سے تھا اور یہ لانگ مارچ یہاں پر ہوتو اسمبلیوں سے استعفے بھی دیے جائیں۔

انہوں نے کہا کہ لانگ مارچ کسے ساتھ استعفوں کو وابستہ کرنے کے حوالے سے 9 جماعتیں اس کے حق میں جبکہ پی پی پی کو اس سوچ پر تحفظات تھے اور وقت مانگا ہے کہ ہم اپنی پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹیو کمیٹی کی طرف رجوع کرکے پی ڈی ایم کو آگاہ کریں گے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ ہم نے ان کو موقع دیا ہے اورہمیں ان کے فیصلے کا انتظار ہوگا جب تک 26 مارچ کا لانگ مارچ ملتوی تصور کیا جائے گا۔

پی ڈی ایم کے صدر مولانا فضل الرحمٰن نے پی پی پی کے جواب تک لانگ مارچ ملتوی کرنے کا اعلان کرکے پریس کانفرنس چھوڑ کر چلے گئے تاہم پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز اور پی پی پی کے سینئر رہنما اور سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے سوالوں کے جواب دیے۔

یہ بھی پڑھیں:  پاکستان نے امن کیلئے انڈین پائلٹ کو رہا کر دیا

مریم نواز نے میڈیا کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ جب تک پی پی پی واپس آکر ہمیں جواب نہیں دیتی اس وقت تک قیاس آرائی نہیں کرنا چاہتی ہوں۔

اجلاس میں آصف زرداری کی جانب سے سخت مؤقف کے حوالے سے سوال پر انہوں نے کہا کہ زرداری صاحب نے کہا کہ میاں صاحب آپ اور باقی سب لوگ بھی تشریف لائیں سب مل کر جدوجہد کرتے ہیں تو اس پر میں نے ادب سے کہا کہ نواز شریف کو واپس لانا ان کی زندگی کو قاتلوں کے حوالے کرنے کے مترادف ہوگا، جو نہ مسلم لیگ (ن) کے عہدیدار اور نہ ہی مسلم لیگ (ن) کا ووٹ بینک چاہتا ہے کہ ان کی جان کو کوئی خطرہ ہو۔

مریم نواز نے کہا کہ پاکستان کے عوام کے لیڈرز کو دہائیاں لگتی ہیں، ہمیں زندہ لیڈرز چاہئیں اور ہمیں لیڈرز کی لاشیں نہیں چاہئیں، ہمیں لیڈرز کا قتل نہیں بلکہ زندہ لیڈرز چاہئیں۔

انہوں نے کہا کہ میں نے زرداری صاحب سے عرض کیا کہ نواز شریف کی جدوجہد اور قربانیاں ہیں وہ کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہیں، اس ظالمانہ اور انتقام کے دور میں سب سے سخت اور سب سے لمبی جیل کاٹی ہے، اپنی بیمار بستر مرگ پر موجود اہلیہ کو چھوڑ کر اپنی بیٹی کا ہاتھ تھام کر جانتے ہوئے کہ یہ انتقام تھا اور یہ ایک جھوٹے مقدمے میں جھوٹی سزا ہوئی تھی لیکن وہ پاکستان واپس آئے اور بہادری سے جیل کاٹی۔

یہ بھی پڑھیں:  پاکستان جونیئر ایشیا ہاکی کپ کے فائنل میں پہنچ گیا

ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کو جیل میں دل کے دورے پڑے لیکن بہادری سے برداشت کیا، اس حکومت کے ہاتھ پاؤں اس وقت پھولے جب ان کی زندگی خطرے میں آگئی اور ان کو لگا کہ خدانخواستہ ان زندگی کو کچھ ہو نہ جائے تو آناً فاناً اس حکومت نے ان کو باہر بھیجا۔

مریم نواز نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) اور مسلم لیگ (ن) کا کروڑوں پر مشتمل ووٹ بینک اور میں بطور بیٹی سمجھتی ہوں کہ کسی کو حق نہیں ہے ان کو واپس بلانے کا، میں نہیں سمجھتی کہ اللہ نے ان کی زندگی بچائی اس کو واپس ان کے قاتلوں کے حق میں سونپ دی جائے۔
اس موقع پر سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ 26 مارچ کی ریلی استعفوں سے مشروط تھی تو چیئرمین بلاول اور میں نے پی ڈی ایم کی پوری قیادت سے گزارش کی کہ ہمیں آپ مہلت دیں کیونکہ سی ای سی کا پہلا فیصلہ استعفوں کے حق نہیں تھا، اگر آپ چاہتے ہیں ہمیں استعفے دینے چاہئیں تو ہمیں سی ای سی میں واپس جانے کے لیے وقت دیں تاکہ ان سے اجازت لے کر پھر آپ کے پاس آئیں گے، اس لیے انہوں نے متفقہ طور پر ہمیں وقت دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  لاہور ہائیکورٹ نے خواجہ آصف کی ضمانت منظور کر لی

ان کا کہنا تھا کہ سی ای سی کا پہلا مؤقف تھا کہ ہم پارلیمانی طرز حکومت ہیں تو اس کی طرف جانا چاہیے تو اس کے تحت پی ڈی ایم نے پی پی پی سے کہا ہے کہ سی ای سی اجازت لیں اور بہت جلد یہ فیصلہ ہوگا۔

مریم نواز نے ایک سوال پر کہا کہ پی ڈی ایم ایک دوسرے کے ساتھ کھڑی ہے اور عملاً ساتھ ہیں اور تعاون بھی کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کو پاکستان بلا کر ان قاتلوں کے حوالے ہیں کرسکتے، جن کا نام عمران خان ہے، اللہ تعالیٰ نے نواز شریف کو نئی زندگی دی ہے اور یہ ان کےخون اور زندگی کے درپے ہیں ان کے حوالے نہیں کرسکتے، مسلم لیگ (ن) کو ان کی بصیرت کی ضرورت ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف انگلینڈ میں موجود ہیں لیکن ان کی جماعت فعال ترین ہے، پوری جماعت ان کی قیادت میں متحد ہے اور لڑ رہی ہے، میں مسلم لیگ (ن) اور نواز شریف کی نمائندہ ہوں، جس نے نواز شریف سے بات کرنی ہے وہ پہلے مجھ سے بات کرے۔