world_health organisation

کرونا سے ایران میں 12ہزار سے زائد ہلاکتیں،امریکہ عالمی ادارہ صحت سے باقاعدہ دستبردار

EjazNews

ایران کی وزارت صحت کی ترجمان ڈاکٹر سیما سادات لاری کے مطابق ملک کے مختلف ہسپتالوں میں مزید1ہزار 625 افراد کو داخل کرالیا گیا ہے۔ اور ملک بھر میں 2لاکھ48ہزار378 افراد کرونا کے شکار ہوچکے ہیںاور اب تک اس وبا کی وجہ سے وفات پانے والے افراد کی مجموعی تعداد12ہزار84 ہوگئی ہے۔
ڈاکٹر سادات کا کہنا تھا کہ اب تک 2لاکھ 9ہزار463 افراد مکمل طورپر صحتیاب ہوکر گھروں کو لوٹ چکے ہیں۔ انہوں نے عوام سے دعا کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت مختلف ہسپتالوں میں زیر علاج 3ہزار309 افراد کی حالت تشویشناک ہے۔سیمالاری کا کہنا تھا کہ 1ملین8لاکھ72ہزار391 افراد کا ٹیسٹ کیا جاچکا ہے۔
دوسری جانب امریکی حکام نے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹریش کو عالمی ادارہ صحت سے باضابطہ طور پر دستبردار ہونے کا نوٹیفیکیشن جمع کرا دیاہے۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مئی کے اواخر میں عالمی ادارہ صحت پر کرونا وائرس کے پھیلاؤ سے متعلق بروقت اور شفاف معلومات فراہم نہ کرنے اور اس کا جھکاؤ چین کی طرف زیادہ ہونے کا الزام عائد کیا اور عالمی ادارے کی 50 کروڑ ڈالر کے سالانہ فنڈز روکنے کی دھمکی بھی دی تھی جس پر انہوں نے عالمی داراہ صحت سے باضابطہ طور پر دستربرداری کا نوٹیفیکیشن اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کو جمع کرا دیا ہےغیر ملکی میڈیا کے مطابق تصدیق سیکرٹری جنرل کے ترجمان سٹیفن دوجریک نے کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ کی عالمی ادارہ صحت سے دستبرداری آئندہ سال 6 جولائی سے نافذالعمل ہو جائے گی۔ بعدازاں عالمی ادارہ صحت نے اپنی ویب سائٹ پر کہا کہ امریکہ جو آئندہ سال 6 جولائی کو عالمی ادارہ صحت کی فنڈنگ سے دستبردار ہو جائے گا، اس وقت ایک رکن ملک کی حیثیت اس کے ذمہ ہماری 200 ملین ڈالر سے زیادہ امداد واجب الادا ہے۔
امریکی صدر کے اس اقدام پر ماہرین اور اپوزیشن جماعت ڈیموکریٹ پارٹی نے تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ٹرمپ انتظامیہ کرونا وائرس کے خلاف اقدامات میں ناکامی کا الزام دوسروں پر عائد کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  یہ نہ کہیں کہ میں نام کیوں لیتا ہوں:سابق وزیراعظم نواز شریف

اپنا تبصرہ بھیجیں