PTi

پی ٹی آئی نے اپنے دو اراکین کو پارٹی سے کیوں نکالا؟

EjazNews

سینیٹ انتخابات سے چند روز قبل پی ٹی آئی سندھ کے رہنما خرم شیر زمان نے دعویٰ کیا تھا کہ ان کے اراکین کو اغوا کرلیا گیا ہے۔

تاہم اس کے بعد 3 اراکین صوبائی اسمبلی کی ویڈیوز منظر عام پر آئی تھیں جن میں انہوں نے اپنے اغوا کی تردید اور اپنی پارٹی سے اختلاف کرتے ہوئے سینیٹ انتخابات میں اپنی مرضی سے ووٹ دینے کا اعلان کیا تھا۔

بعدازاں اگلے روز ہونے والے سندھ اسمبلی کے اجلاس میں ہنگامہ آرائی دیکھنے میں آئی اور پی ٹی آئی کے اراکین نے اپنی پارٹی کے امیدواروں کے حق میں ووٹ نہ دینے کا اعلان کرنے والے منحرف ساتھیوں پر مبینہ طور پر حملہ کیا۔

اس صورتحال کے بعد پی ٹی آئی اراکین ایک منحرف ساتھی کو اپنے ہمراہ اسمبلی سے لے جانے میں کامیاب رہے تاہم دیگر بدستور اپنے موقف پر قائم رہے اور سینیٹ انتخابات کے بعد ہونے والے سندھ اسمبلی کے اجلاس میں حکومتی بینچز پر بیٹھے نظر آئے جس پر اسمبلی میں ایک مرتبہ پھر شورو غل ہوا۔
یہاں یہ بات مدِ نظر رہے کہ سینیٹ انتخابات سے قبل پی ٹی آئی اراکین کی اختلافی ویڈیوز کے بعد پی ٹی آئی، ایم کیو ایم اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس (جی ڈی اے) نے اپنے صوبائی قانون سازوں کی سیکیورٹی کے پیش نظر ایک ہوٹل میں رہنے کا انتظام کیا تھا جہاں سے ووٹ ڈالنے سندھ اسمبلی پہنچے تھے۔
جس پر پیپلز پارٹی کے سینٹرل الیکشن سیل کے انچارج تاج حیدر نے اای سی پی کو ایک خط لکھ کر سندھ اسمبلی کے چند ممبران کے پراسرار طرز عمل کی تحقیقات کرنے کی اپیل کی تھی۔

یہ بھی پڑھیں:  آسٹریلیا دوسرا ون ڈے بھی جیت گیا

پی ٹی آئی کی قائمہ کمیٹی برائے نظم و احتساب غربی سندھ، کراچی نے متفقہ فیصلہ جاری کرتے ہوئے اراکین کو پارٹی سے نکالنے کے بارے میں آگاہ کیا۔
اس ضمن میں جاری بیان کے مطابق سندھ اسمبلی کے حلقہ پی-ایس ون جیکب آباد-ون سے منتخب ہونے والے اسلم ابڑو اور پی-ایس 18/گھوٹکی-ون سے سندھ اسمبلی کے رکن بننے والے شہریار خان شر کو پارٹی سے نکال دیا گیا ہے۔

اس کے علاوہ تحریک انصاف کی قیادت سے دونوں اراکین کے خلاف الیکشن کمیشن آف پاکستان سے رجوع کرنے کی بھی سفارش کی گئی ہے۔پی ٹی آئی اسکیڈ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ سینٹ انتخابات کے دوران اسلم ابڑو اور شہریار شر نے جماعتی احکامات سے روگردانی کی۔

پارٹی کے مطابق دونوں اراکین سندھ اسمبلی کو اپنی صفائی پیش کرنے کا موقع دیا گیا، تاہم واضح اور حتمی شواہد کی جانج پڑتال اور ملزمان کی جانب سے صفائی پیش نہ کیے جانے پر معاملہ نمٹا رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  10سال بعد بعد ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس کا فیصلہ آگیا

حکم نامے میں کہا گیا کہ اسلم ابڑو اور شہریار شر کی بنیادی رکنیت ختم کرکے دونوں کو فوری جماعت سے نکالا جائے اور الیکشن کمیشن سے رجوع کرکے دونوں اراکینِ سندھ اسمبلی سے اسمبلی رکنیت بھی واپس لی جائے۔

پارٹی بیان میں مزید کہا گیا کہ ملزمان قائمہ کمیٹی برائے نظم و احتساب غربی سندھ، کراچی کے اس فیصلے کے خلاف مرکزی سکیڈ کے روبرو 7 یوم میں اپیل دائر کرنے کا حق رکھتے ہیں۔