khadam_husaain

علامہ خادم حسین رضوی سپر د خاک، نئے امیر مقرر

EjazNews

لاہور کے گریٹر اقبال پارک (مینار پاکستان )میں خادم حسین رضوی کی نماز جنازہ ان کے بڑے بیٹے حافظ سعد حسین رضوی نے پڑھائی۔نماز جنازہ میں ہزاروں کی تعداد میں عوام نے شرکت کی جبکہ خادم حسین رضوی کے جسد خاکی کو ایمبولنس کے ذریعے جنازہ گاہ لایا گیا تھا۔

جنازہ سے پہلے مقررین نے خطاب بھی کیا ۔ تا حد نظر صرف انسان ہی انسان تھے۔
علامہ خادم حسین رضوی کی نماز جنازہ کے موقع پر سکیورٹی کے بھی خصوصی انتظام کیے گئے تھے۔

نماز کی ادائیگی کے بعد جسد خاکی کو لاہور کے مختلف راستوں نیازی شہید انٹرچینج، بند روڈ، بابو سابو انٹرچینج سے لے جاکر یتیم خانہ چوک کے قریب مسجد و مدرسہ رحمت الالعالمین کے احاطے میں سپردخاک کیا جائے گیا۔واضح رہے کہ خادم حسین رضوی اسی مسجد میں امامت کے فرائض بھی انجام دیتے تھے۔
سربراہ ٹی ایل پی کے جنازے کے موقع پر سکیورٹی ہائی الرٹ رہی۔

یہ بھی پڑھیں:  بنگلہ دیش کیخلاف ٹی ٹونٹی ٹیم کا اعلان، بہت سے منجھے کھلاڑی آؤٹ

19 نومبر کی دوپہر کو ان کی طبیعت بگڑی تھی جس پر انہیں شیخ زید ہسپتال لے جایا گیا تھا جہاں رپورٹس کے مطابق انہیں مردہ قرار دیا گیا تھا تاہم ان کے اہل خانہ انہیں نزدیکی نجی ہسپتال لے کر گئے جہاں ان کی وفات کی تصدیق کی گئی تھی۔

مولانا خادم حسین رضوی کے انتقال پر چند لوگوں نے ان کی موت کی وجہ کووڈ 19 کو قرار دیا تھا جبکہ دیگر نے کہا تھا کہ حرکت قلب بند ہونے کی وجہ سے ان کی وفات ہوئی تاہم ان کے اہل خانہ اور ان کی پارٹی کی جانب سے باضابطہ طور پر موت کی وجہ نہیں بتائی گئی تھی۔خادم حسین رضوی کے سوگواران میں دو بیٹے، تین بیٹیاں اور بیوہ شامل ہیں۔
ادھر نماز جنازہ کے موقع پر ٹی ایل پی کے نئے امیر کا بھی اعلان کردیا گیا اور خادم حسین رضوی کے بڑے بیٹے حافظ سعد حسین رضوی کو نیا سربراہ مقرر کیا گیا۔
19 نومبر کو تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی 54 برس کی عمر میں لاہور کے مقامی ہسپتال میں انتقال کرگئے تھے۔

یہ بھی پڑھیں:  ورلڈ کپ 2019 کیلئے پاکستانی کرکٹ ٹیم کی تیاریاں