imran_khan

جتنے فنڈ ہماری حکومت نے بلوچستان کو دئیے ہیں کسی اور حکومت نے نہیں دئیے: وزیراعظم

EjazNews

اصل انسان جو ہمیں اللہ کی دوسری مخلوق سے امتیاز دیتاہے وہ ہے علم اور مسلسل جدوجہد علم کی تلاش ہے۔ اور اگر آپ مسلمانوں کی سولائزیشن دیکھیں تو اس میں آپ کو مدینہ کی ریاست ملے گا ۔ جس میں انسانیت تھی ۔ قانون کے سامنے سب برابر تھے۔ جب جنگ بدر کے بعد قریش کے قیدی آئے تو انہوں نے علم کی تلاش کی بنیاد رکھ دی اور اس وقت کئی مسلمانوں کے پاس ہتھیار بھی نہیں تھے بغیر ہتھیار کے لڑے۔ غریب طبقہ تھا۔ آپ کنسپٹ چیک کریں جو دس مسلمانوں کو پڑھا لکھا دے گا اس کو آزادی مل جائے گی ۔ یہی وجہ تھی کہ مدینہ کی ریاست کی جو بنیاد رکھی گئی تھی کئی سو سال تک ٹاپ کے مسلمان تھے وہ تعلیم میں سب سے آگے تھے اور ہمارے علاقے بھی جو سب سے پیچھے رہ گئے ہیں وہ کم تعلیم یافتہ ہیں اور میری کوشش ہے کہ جو علاقے پیچھے رہ گئے ان کو ترقی دیں کسی دور میں اتنی فنڈنگ نہیں کی گئی جتنی ہمارے دور میں کی گئی۔ اور آپ ہیں جنہوں نے بلوچستان کو اوپر اٹھانا ہے اور اس لیے انشاءاللہ ہم پورا زور لگائیں گے ہم آپ کی ہر طرح کی مدد کریں اور خاص کر تعلیم کی ۔

یہ بھی پڑھیں:  علیم خان کے جوڈیشل ریمانڈ میں20اپریل تک توسیع

ان کا کہنا تھا دنیا میں اور بڑا انقلا ب آرہا ہے انفارمیشن ٹیکنالوجی کا۔ اس سے آپ کہیں بھی بیٹھے بیٹھے لوگوں کو تعلیم دے سکتے ہیں۔
وزیراعظم نے نوجوانوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مشکلات سے گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے ۔ ان سے سیکھنے کی ضرورت ہے ۔ فیکلیر سے سیکھیں اور آگے بڑھیں ۔

بلوچستان یونیورسٹی کی تقریب سے خطاب کے بعد وزیراعظم نے بلوچستان کے عمائدین سے گفتگو کی جس میں وزیراعظم نے ملک کے حالات پر اپنے خیالات کا اظہار بھی کیا۔

تربت میں عمائدین سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ بلوچستان میں ترقی نہ ہونے کی وجہ ماضی کے حکمران ہیں، ماضی میں بلوچستان کے سیاسی رہنماؤں نے بھی ذاتی مفادات کو ترجیح دی اور بدقسمتی سے ملک میں ایسے سیاسی رہنما آئے جنہوں نے وطن سے زیادہ ذاتی مفاد پر توجہ دی۔
انہوں نے کہا کہ ایسے وزیر اعظم بھی آئے جو بلوچستان کے بجائے لندن زیادہ گئے اور ایسے صدر آئے جو دبئی زیادہ گئے بلوچستان کم آئے۔

یہ بھی پڑھیں:  جماعت الدعوۃ اور فلاح انسانیت فاونڈیشن کالعدم قرار، نوٹیفکیش بھی جاری

ان کا کہنا تھا کہ کمزور طبقے کو اوپر نہ لایا جائے تو قوم ترقی نہیں کرتی، کئی لوگ بلوچستان کی محرومیوں کا فائدہ اٹھانے کی کوشش کرتے ہیں، ہم سب سے زیادہ زور بلوچستان کو اوپر اٹھانے پر لگائیں گے، سیاسی مفاد سے بالاتر ہوکر بلوچستان پر خصوصی توجہ اس لیے دی جارہی ہے کہ یہ ترقی میں پیچھے ہے، کوئی قوم آگے نہیں جاسکتی اور ترقی نہیں کر سکتی جب تک کوئی چھوٹا سا طبقہ پیچھے رہ جائے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ دنیا میں کرونا وائرس کی دوسری لہر نے تباہی مچا رکھی ہے، ہمیں احتیاط کرنی ہوگی کیونکہ ملک میں بھی کورونا کیسز کی تعداد بڑھ رہی ہے، ہم مشکل حالات سے نکل ہی رہے تھےکہ کرونا وبا آگئی لیکن برصغیر میں کوئی بھی ملک کرونا سے اس طرح نہیں نکلا جس طرح سے پاکستان نکلا۔

انہوں نے کہا کہ چین کے ساتھ اقتصادی راہداری ہمارے لیے ترقی کا زینہ بنے گی، ہماری خوش قسمتی ہے کہ ہم چین سے جُڑے ہوئے ہیں، چین دنیا میں سب سے زیادہ تیزی سے ترقی کرنے والا ملک ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  علی وزیر کو فی الفور پروڈکشن آرڈر ملنے چاہیے:بلاول بھٹو زرداری