Peanut

مونگ پھلی سردیوں میں کتنی مفید ہے

EjazNews

موسم سرمامیں نمک لگے پستہ کھانے کا مزہ ہی کچھ اور ہے اگر چہ پستہ کا استعمال منہ کاذائقہ تبدیل کرنے کی غرض سے کیا جاتا ہے تاہم اس کی غذائی و دوائی افادیت بہت زیادہ ہے۔ حرارت پیدا کرتا ہے۔ دل، دماغ، معدہ اور اعضائے رئیسہ کے لئے مفید ہے۔ جسم کوفر بہ کرتا اور توانائی دیتا ہے۔ کھانسی میں فائدہ مند رہتا اوربلغم کے فساد کو دور کرتا ہے۔ 100گرام پستے میں 594حرارے ہوتے ہیں۔ جسم میں کولیسٹرول کی سطح کم کرتا ہے اور دل کی شریانوں میں خون کے تھکے ختم کرتا ہے۔ قوت مدافعت بڑھاتا جگر کے سدوں کو کھولتا ہے اور خون صاف کرتا ہے۔ پستے کا استعال موسم سرمامیں ضرور کریں مگر حد اعتدال میں۔

لوگ اپنی روزانہ کی خوراک میں بلا خطر خشک میوے کی گریوں کو شامل کر سکتے ہیں بلکہ اگر چاہیں تومحض خشک میوہ کھا کر ہی اپنی بھوک مٹا سکتے ہیں۔ خشک میوے میں Unsaturated Fat اور High Fiber ہوتا ہے جو وزن بڑھائے بغیر جسم کو توانائی مہیا کرتا ہے۔ پوری دنیا میں ہونے والے معیاری اور حقیقی مطالعوں کا نئے انداز سے جائزہ لینے کے بعدمحققین نے یہ انکشاف کیا ہے۔ یونیورسٹی آف میڈیسن اینڈ ڈینٹسٹری آف نیو جرسی کے سربراہPro.Dr. david bleich کے مطابق تمام تحقیقی مطالعوں سے یہ بات واضح ہوئی ہے کہ خشک میوے کی گریوں کے استعمال سے جسمانی وزن بالکل نہیں بڑھتا اور اگر کوئی ایسا سوچتا ہے تو وہ غلط ہے۔ سپین کے محقق Gemma Flores Mateo University of Tarragonaاور ان کے ساتھی محققین کہتے ہیں کہ پچھلے مطالعوں میں بھی گر یوں( Nuts)| کے استعمال کو ذیابیطس اور ہائی بلڈ پریشر کے خطرے کو کم کرنے کے لئے مفید بتایا گیا تھا۔ پروفیسر ڈاکٹربلیخ کہتے ہیں کہ ان کی ذاتی تحقیق میں بھی یہ واضح بات سامنے آئی ہے کہ ذیابیطس کے مریضوں نے جب ان کے مشورے پر خشک میووں کی گریوں کا استعمال شروع کیا تو ان کے بلڈ میں شوگر لیول کم ہوا۔ اگر آپ خوراک میں چکنائی ( Fat) کا استعمال بڑھاتے ہیں تو آپ اپنے جسم میں Insulin Resistance کا سامنا کرتے ہیں لیکن گر یوںکی چکنائی (Fat) یہ صورتحال پیدا نہیں کرتی۔ گریاں اپنی چکنائی کے ذریعے نا صرف آپ کی جھوک کو مٹاتی ہیں بلکہ ریشوں اور پروٹین کے لئے دن کی ضرورت کو بھی پورا کرتی ہیں۔ دوران تحقیق یہ حقیقت اس وقت محققین پر واشگاف ہوئی جب انہوں نے تحقیق میں شامل شرکاءکے دو گروپوں میں سے ایک گروپ کو نارمل خوراک دی اور دوسرے گروپ کو کم مقدار میں مگر اس کے ساتھ خشک میووں کی گریاں بھی دو سے پانچ ہفتے تک دیں۔ پانچ ہفتوں کے بعد ان کا معائنہ کرنے پر پتہ چلا کہ خشک میوے کی گریاں کھانے والے گروپ کا فالتو وزن ایک اعشاریہ پانچ پائونڈ کم ہوا، ان کی کمر بھی ایک انچ کم ہوئی اور ان کی صحت اور جسمانی چستی مزید بہتر ہوئی جبکہ گریاں نہ کھانے والے گروپ میں کچھ ایسا نہیں ہوا۔ گو کہ یہ فرق کوئی زیادہ نمایاں نتائج کا حامل نہیں ہے تا ہم اس سے یہ بات ثابت ہوئی کہ خشک میوے وزن نہیں بڑھاتے۔ اس تحقیق کا انکشاف محقق گیما فلورس میٹی نے ایک مضمون میں کیا ہے جو امریکی جریدے جرنل آف کلینکل نیوٹریشن کی اشاعت میں چھپاہے۔ اس مضمون میں فلور میٹو نے کہا کہ ہماری در یافت اس امر کی حمایت کرتی ہے کہ غذا کو صحت مند بنانے اور عوارض قلب سے بچنے کے لئے روزانہ کی خوراک میں خشک میووں کو شامل رکھا جائے۔

یہ بھی پڑھیں:  الائچی :فرحت بخش احساس ، گرم مصالحوں کی ملکہ

فربہی پر تحقیق کرنے والے ڈاکٹر ایڈم کہتے ہیں کہ وہ لوگوں کو یہ مشورہ نہیں دیں گے کہ وہ اپنی خوراک میں خشک میووں کو سرفہرست رکھیں بلکہ دیگر مفید اور صحت افروز چیزوں کے ساتھ انہیں بطور معاون صحت استعمال کریں۔ نیو انگلینڈ جرنل آف میڈ مین میں چھپنے والی تحقیقی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ جو لوگ خشک میووں بطورخاص مونگ پھلی پر مشتمل خوراک کھاتے ہیں وہ عارضہ قلب، ذیا بیطس ٹائپ 2 اور سرطان جیسے موذی مرض کا شکار ہوتے ہیں جو آج کی دنیا کے سب سے زیادہ ہلاکت خیز امراض ہیں۔ جتنی زیادہ آپ مونگ پھلی کی گریاں کھائیں گے اتنے ہی زیادہ صحت کے حوالے سے آپ مستفیض ہوں گے۔ یہ رپورٹ 1980سے لے کر اب تک ان جائزوں کے ڈیٹا پرمشتمل ہے جو مختلف ماہرین اس عرصے میں لیتے رہے ہیں۔ جولوگ خشک میوے بشمول مونگ پھلی کی گریاں نہیں کھاتے تھے ان کے مقابلے میں ہفتے میں ایک مرتبہ کھانے والے گیارہ فیصد، پانچ مرتبہ کھانے والےبیس فیصد اور روزانہ کھانے والے انتیس فیصد کم موت کا شکار ہوئے تحقیق کے مطابق خشک میوے بشمول مونگ پھلی کو استعمال کرنے والوں کو موت کے اسباب میں سرطان، ذیا بطیس اور سانس کی بیماریوں کی شرح بہت کم تھی۔

یہ بھی پڑھیں:  کیا آپ جانتے ہیں کینو آپ کی صحت کیلئے کتنا فائدہ مند ہے؟

ڈانا فار بر کینسر انسٹی ٹیوٹ ، بوسٹن، امریکہ کے پروفیسر ڈاکٹر چارلیس جو مذکورہ بالا تحقیقی مطالعے کے سینئر رائٹر ہیں کے مطابق خشک میوے کی گریوں اور بطور خاص مونگ پھلی کی گری میں صحت انسانی کے لئے فوائدپوشیدہ ہیں۔