turky Earth Quick

ترکی میں ہولناک زلزلہ کئی عمارتیں زمین بول

EjazNews

امدادی کارکنان امدادی سرگرمیوں میں مصروف ہیں وہ ملبے تلے دبے ہوئے افراد کو نکالنے میں مصروف ہیں اور ملبے تلے دبے افراد کی آہ و بکا باہر کھڑے ہوئے لوگوں کو سنائی دے رہی ہے۔

یہ زلزلہ سمندر اور سموس کے ایجین جزیرے میں چھوٹے سونامی کے نتیجے میں آیا جس سے ترکی کے مغربی ساحلی علاقے دریا کا منظر پیش کرنے لگے۔امریکی جیولوجیکل سروے کے مطابق زلزلے کا مرکز سموس میں یونان کے علاقے کارلوواسی سے 14 کلومیٹر دور تھا اور ریکٹر اسکیل پر زلزلے کی شدت 7 ریکارڈ کی گئی۔

زلزلہ کے جھٹکے استنبول اور ایتھنز میں بھی محسوس کیے گئے ۔سب سے زیادہ نقصان ترکی کے ساحلی شہر ازمیر میں ہوا جو 30لاکھ نفوس پر مشتمل ہے اور یہاں موجود بڑے بڑے اپارٹمنٹ ملبے کا ڈھیر بن گئے ہیں۔ازمیر کے میئر ٹنگ سویر نے کہا کہ 20 عمارتیں مکمل تباہ ہو گئی ہیں اور ریسکیو کارکنان کی توجہ ان میں سے 17 پر مرکوز ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  انڈیا میں نامعلوم بیماری سے 93بچے ہلاک

ترکی ڈیزاسٹر ریلیف ایجنسی کے مطابق زلزلے سے 24 افراد ہلاک اور 800 زخمی ہو گئے جبکہ یونان میں دو کم عمر بچے سکول سے واپسی پر دیوار گرنے سے ہلاک ہو گئے۔زلزلے سے ہونے والی تباہی کو دیکھتے ہوئے لگتا ہے کہ ہلاکتوں کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

ترکی کے مذہبی امور کے ڈائریکٹوریٹ نے بے گھر ہونے والے افراد کی رہائش کے انتظام کے لیے مساجد کھول دی ہیں۔ سوشل میڈیا پر جاری ویڈیوز میں ازمیر کی سڑکوں پانی کو دریا کی روانی سے چلتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے جبکہ کئی مقامات پر عمارتیں زمین بوس ہونے سے سفید دھوئیں کے بادل اٹھے۔

زمین بوس ہونے والی ایک 7منزلہ عمارت کے ملبے سے ریسکیو کارکنان سراغ رساں کتوں اور زنجیر کی مدد سے ملبے تلے دبے افراد کو نکالنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

زلزلے کے مرکز اور یونان کے جزیرے سموس میں لوگ گھبرا کر سڑکوں پر نکل آئے اور ڈپٹی میئر گیورگوس ڈیونسوئی نے کہاکہ ہم نے شہر میں اس طرح کی افرا تفری کا ماحول پہلے کبھی نہیں دیکھا۔

یہ بھی پڑھیں:  برطانوی وزیراعظم تھریسامے کا مستعفی ہونے کا اعلان

ترکی اور یونان دنیا کے سب سے زیادہ متحرک زلزلے کے زون میں واقع ہیں اور اس زلزلے کے نتیجے میں دونوں پڑوسی اور حریف تصور کیے جانے والے ممالک کے سربراہان مملکت نے سفارتی ذریعے کا استعمال کیا اور کال کر کے ایک دوسرے سے یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی۔