mask

کرونا کی دوسری لہر : ملک بھر میں ماسک پہننا لازمی قرار

EjazNews

وفاقی وزیر اسد عمر کی زیر صدارت این سی او سی کا اجلاس ہوا جس میں کرونا کی دوسری لہرکے پیش نظرحکمت عملی پرتبادلہ خیال کیا گیا۔اجلاس میں وفاقی وزیرداخلہ، سیکرٹری صحت اور چاروں صوبوں کے نمائندے بذریعہ ویڈیو لنک شریک ہوئے۔کرونا وائرس کا پھیلاو کم کرنے کیلئے فیصلہ کیا گیا کہ شہری گھروں سے باہر نکلتے وقت ماسک لازمی پہنیں۔ حکومتی اور نجی سیکٹرز کے دفاتر میں کام کرنے والوں کے لیے ماسک پہننا لازم ہوگا۔

صوبائی حکومتوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ بازاروں، شاپنگ مالز، پبلک ٹرانسپورٹ، ریسٹورنٹس میں ایس او پیز اور ماسک کو لازم قرار دیں۔این سی او سی کے مطابق ملک کے 11شہروں میں کورونا وباتیزی سے پھیل رہی ہے۔ پاکستان میں اسی فیصد کورونا کیسز گیارہ بڑے شہروں سے رپورٹ ہوئے۔

کراچی، کوئٹہ ، لاہور ، اسلام آباد، راولپنڈی، حیدر آباد ، گلگت، مظفر آباد اور پشاور بھی کرونا کے زیادہ کیسز رپورٹ ہوئے۔ ملک کے چار ہزار تین سو چوہتر علاقوں میں مائیکرو اسمارٹ لاک ڈاون نافذ کیا گیا ہے۔اجلاس میں تمام صوبوں کو ایس او پیز اور ماسک پہننے پر عملدرآمد کو یقینی بنانے کی ہدایت کی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  کرکٹ ورلڈ کپ2019،جو بھی جیتے تاریخ ضرور رقم ہوگی

وفاقی حکومت نے ملک میں بڑھتے ہوئے کورونا وائرس کے کیسز کے باعث پابندیاں سخت کرنے کا عندیہ بھی دیا ہے۔معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا کہ پاکستان میں کورونا وائرس کی دوسری لہر بتدریج شروع ہو چکی ہے۔ یومیہ کرونا کیسزکی تعداد 700 سے تجاوز کر چکی ہے۔دوسری لہر سے نمٹنے کے لیے ایس اوپیز پر سختی سے عمل کرنا ہو گا۔ این سی او سی حکام کا کہنا ہے احتیاطی تدابیر پرعمل پیرا ہو کر ہم کورونا کی دوسری لہرسے نمٹ سکتے ہیں۔