hamza

حمزہ شہباز کا کروناٹیسٹ مثبت آگیا

EjazNews

نیب نے حمزہ شہباز کو 11 جون 2019 کو لاہور ہائی کورٹ سے گرفتار کیا تھا۔لاہور ہائی کورٹ نے رمضان شوگر مل کیس اور منی لانڈرنگ کیس میں حمزہ شہباز کی ضمانت قبل از گرفتاری مسترد کی تھی جس کے بعد انہیں عدالت کے احاطے سے حراست میں لیا گیا تھا۔
بعد ازاں عدالت نے حمزہ شہباز کو رمضان شوگر مل کیس میں ضمانت بعد از گرفتاری دے دی تھی لیکن منی لانڈرنگ کیس میں ضمانت نہ ملنے پر انہیں رہائی نہیں ملی۔
10 ستمبر 2020 کو طبیعت ناساز ہونے پر حمزہ شہباز کو منی لانڈرنگ کیس کی سماعت کے لیے احتساب عدالت میں بھی پیش نہیں کیا گیا تھا جبکہ ان کے والد شہباز شریف اور بہن احتساب عدالت میں پیش ہوئی تھیں۔جیل سپرنٹنڈنٹ نے حمزہ شہباز کی میڈیکل رپورٹ عدالت میں پیش کی تھی۔
رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ حمزہ شہباز کی طبیعت ناساز ہے اس لیے آج عدالت پیش نہیں کر سکتے جس پر تبصرہ کرتے ہوئے نیب وکیل نے کہا کہ حمزہ شہباز نے ایک پیناڈول کھائی اور بیڈ ریسٹ پر لیٹ گئے ہیں تاہم عدالت نے آئندہ سماعت پر حمزہ شہباز کو پیش کرنے کا حکم دیا تھا۔
میاں شہباز شریف کا بیٹی کی بیماری کا پتہ لگنے کے بعد کہنا ہے کہ مشرف دور میں نیب مقدمات کا ڈٹ کر مقابلہ کرنے کے بعد وہ اب نیب نیازی گٹھ جوڑ کے سیاسی انتقام کا انتہائی جراتمندی و ثابت قدمی سے سامنا کر رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ میری آپ سب سے درخواست ہے کہ حمزہ کی جلد صحت یابی کے لیے خصوصی دعا کریں۔
سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی اور مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے ٹوئٹر میں اپنے بیان میں کہا کہ یہ حکومت سیاسی مخالفین کو انسانیت سوز حالات میں رکھ کر ان کی صحت کے ساتھ کھیل رہی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ میرے بھائی حمزہ شہباز اس ظلم کا شکار ہیں اور ان کا کووڈ 19 کا ٹیسٹ مثبت آیا ہے جبکہ مطلوبہ طبی توجہ نہیں دی جارہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  بنگلہ دیش کو 106رنز سے شکست