Doogs

کیا کتوں کے مالکان ان کی زبان سمجھ سکتے ہیں؟

EjazNews

تحقیق دانوں کی تحقیقات کسی ایک سمت میں نہیں رہتیں لیکن جو بھی کرتے ہیں کچھ مختلف کرنے کی کوشش ضرور کرتے ۔تحقیق دانوں نے 40رضا کاروں کے درجنوں کتوں پر تحقیق کے بعد یہ کہا ہے کہ کتوں کے مالکان ان کی زبان کو کسی حد تک سمجھ سکتے ہیں۔ کتوں کا غرانا اور بھوکنا ان کی سمجھ میں آتا ہے۔

کتے امریکہ میں ہر دوسرے تیسرے گھرانے کے لیے پریشانی کا باعث بنے ہوئے ہیں۔ کتا ایک اچھا جانور ہے لیکن اس کا بھوکتے رہنا اور غرانا ہماری برداشت سے باہر ہے، بلکہ امریکہ میں تو بھوکتے کتوں کا منہ بند کر نے کے لیے قوانین بن چکے ہیں یعنی کتوں کی چیخ و پکار کیخلاف اس کا ہمسایہ پولیس سے رجوع کر سکتا ہے۔
کتوں سے پیار کرنے والوں نے یہ انکشاف کیا ہے کہ یہ ان کی غراہٹ کو سمجھتے ہیں۔ جانور یونہی کوئی حرکت نہیں کرتا۔ اس کا کوئی نہ کوئی محرک ضرور ہوتا ہے۔ جانور مختلف طریقوں سے انسان کو اپنے اندر کی بات بتانے کی کوشش کرتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  ایک دن میں 13ارب ڈالر کمانے والا شخص

یہ موضوع ہنگری کی یونیورسٹی میں ڈاکٹر Tamas sargoاور اس کی ٹیم کا بھی تھا۔ ان کی تحقیق جرنل رائل سوسائٹی اوپن سائنس میں شائع ہوئی۔ اس کا موضوع بھی کتوں کی غراہٹ تھا۔ وہ کہتے ہیں کتوں کی زبان کو مردوں سے بہتر عورتیں جانتی ہیں۔ ان کی غراہٹ اور بھوکنے کا انداز مختلف صورتوں میں مختلف ہوتا ہے۔ جارحانہ غراہٹ اور خوف زدہ غراہٹ میں فرق باآسانی محسوس کیا جاسکتاہے۔ کھیل کود کے وقت کتے مختلف انداز میں گراتے ہیں جبکہ کھانا کھاتے وقت اس کا انداز مختلف ہوتا ہے۔ انسان کی طرح کتے بھی خوف ، مایوسی، خوشی، کھیل کود یا جارحیت کے جذبات کا اظہار مختلف انداز میں کرتے ہیں۔ انسان انہیں ذرا سی کوشش کے ذریعے سے سمجھ سکتا ہے۔ سائنسدانوں کے مطابق ”ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ کتے اپنا مافی الضمیر یا اپنی خواہشات انتہائی دیانت داری کے ساتھ بیان کرتے ہیں“اگر انہیں کسی اجنبی سے خوف ہے تو اس کا اظہار بھی مخصوص انداز میں کرتے ہیں۔ اندرونی کیفیت انسان کی طرح کتے بھی چھپانے کے باوجود چھپا نہیں سکتے اور کتے پالنے کے شوقین ان کی تمام عادات سمجھتے ہیں اور اس کے مطابق ہی عمل کرتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  پل بنانے والی حیران کن مشین