afghanistan-taliban-release

افغان امن عمل :فریقین پھونک پھونک کا قدم رکھ رہے ہیں

EjazNews

افغان امن عمل میں دونوں طرف سے فریقین پھونک پھونک کر قدم رکھ رہے ہیں ۔ بڑی لے دے کے بعد 4سو افغان قیدیوں میں سے 80کو رہا کر دیا گیا ہے۔ یہ افغان امن عمل کی جانب ایک واضح پیش رفت ہے۔ان تمام قیدیوں کو کابل کی پل چرخی جیل سے رہا کیا گیا ہے۔

ان قیدیوں کی رہائی کے بعد امید کی ایک کرن پھر سے پھوٹ پڑی ہے کہ برسوں سے جنگ کا شکار یہ ملک شاید امن کی جانب گامزن ہو جائے۔
افغانستان کی نیشنل سکیورٹی کونسل نے سوشل میڈیا پر ایک ٹویٹ شیئر کی ہے کہ بلا واسطہ مذاکرات اور ایک پائیدار اور ملک گیر جنگ بندی کی کوشش میں تیزی لانے کیلئے طالبان نے وعدہ کیا ہے کہ اب زندگی امن کے ساتھ گزاریں گے اور جنگ نہیں کریں گے۔

افغانستان میں امن لانے کیلئے امریکہ سب سے اہم کڑی ہے۔ کیونکہ طالبان کے مذاکرات امریکہ کے ساتھ ہو رہے ہیں ناکہ افغان حکومت کے ساتھ۔ اس لیے بے یقینی کی ایک فضا اپنی جگہ قائم ہے ۔

یہ بھی پڑھیں:  عراقی دانشوروں کاقتل

طالبان پوری طرح امریکہ پر بھروسہ نہیں کرتے اسی لیے یہ مذاکرات کئی دفعہ ڈیڈ لاک کے بعد دوبارہ شروع ہوئے۔ اسی طرح امریکہ بھی احتیاط کے دامن کو پکڑے ہوئے ہے۔ اور جہاں تک افغان حکومت کی بات ہے تو افغان اپنی جگہ کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے کہ کسی طرح ان کے ملک میں امن و امان قائم ہو جائے ۔