karach_stock Exchange

8منٹ میں حملے کو روکا اور 25منٹ میں عمارت کلیئر کر دی تھی:میجر جنرل عمر بخاری

EjazNews

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دہشت گرد جب حملہ کرنے آئے تو انہوں نے فائرنگ کی جس کے نتیجے میں کچھ راہگیر زخمی ہوئے۔ سکیورٹی گارڈز نے دو دہشت گردوں کو پہلے ہی مار گرایا تھا جبکہ دو آگے آگئے تھے اور اس دوران ایک پولیس اہلکار بھی شہید ہوگیا تھا۔اگلے کچھ دیر میں ہی رینجرز اور پولیس موقع پر پہنچ گئی تھی اور انہوں نے تمام دہشت گردوں کو مار گرایا۔پاکستان کے قانون نافذ کرنے والے ادارے کسی بھی واقعے سے نمٹنے کے لیے تیار ہیں جس کی وجہ سے اس حملے کو ناکام بنایا گیا۔
سوشل میڈیا پر بلوچستان لبریشن آرمی کے مجید گروپ کی جانب سے حملے کی ذمہ داری قبول کرنے کے دعوے کے بارے میں انہوں نے کہا کہہ ہم اس کی تحقیقات کر رہے ہیں۔دہشت گرد اسٹاک ایکسچینج کی عمارت میں داخل ہوکر لوگوں کو یرغمال بنانا چاہتے تھے۔ انٹیلی جنس ادارے اپنا کام کر رہے ہیں اور انٹیلی جنس کی وجہ سے ہی ہم تیار تھے جس کی وجہ سے ہم کامیاب ہوئے۔ہمیں یقین ہے کہ یہ کراس اسپانسرڈ حملہ ہوسکتا ہے اور ہم خطروں کے حساب سے اپنے رد عمل کو اپ ڈیٹ کرتے رہتے ہیں۔
میجر جنرل عمر بخاری کا کہنا تھا کہ 8 منٹ میں حملے کو روکا اور 25 منٹ میں ہم نے عمارت کلیئر کردی تھی، عوام کو پیغام ہے کہ سکیورٹی اداروں پر اعتماد رکھیں اور ہم اپنی خدمت جاری رکھیں گے۔ دہشت گرد دنیا کو پیغام دینا چاہتے تھے کہ پاکستان غیر محفوظ شہر ہے جبکہ انہوں نے یہ کام کرکے اپنا ہی منہ کالا کیا ہے اور سب کو پتہ لگا ہے کہ جو یہ کام کرتا ہے اس کا کیا حال ہوتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  کیا امیر مقام کے بیٹے کی گرفتاری سیاسی انتقال ہے؟