kitchen

کچن کی تزئین وآرائش پر خصوصی توجہ دیں

EjazNews

وہ دن چلے گئے جب ہمارے کچن قید خانے ہواکرتے تھے۔
تاریک سا کمرہ بے پناہ گھٹن اور جلتی ہوئی آگ دھواں تپش اور ان کے درمیان گھری ہوئی خاتون خانہ جسے اپنے دن کا بیشتر حصہ گھر کے اسی گوشے میں گزارنا پڑتا۔
وہ بے چاری ان ہی پریشان کن حالات میں کھانا بنایا کرتی لیکن اب وقت بہت بدل گیا ہے اور آج کل شاید گھر کے کسی حصے میں اتنی ڈرامائی تبدیلی نہ آسکی ہوجتنی صرف کچن میں آئی ہے۔
جدید کچن روشن صاف ہوادار اور اس طرح سجے ہوتے ہیں کہ پورے گھر کا قابل فخر گوشہ بن جاتے ہیں۔ خاتون خانہ بھی یہاں وقت گزارنے میں خوشی محسوس کیا کرتی ہیں۔
آج کل ایک درجنوں کمپنیاں ہیں جو آپ کے کچن کی زمین اور آرائش کے کام کرتی ہیں۔ بلکہ ان کی سجاوٹ ایک آرٹ کا درجہ اختیار کر گئی ہے۔ مغربی انداز کے کچن سے لے کر آپ مشرقی انداز کے کچن کی خوبصورت سجاوٹ کرواسکتی ہیں۔

آئیے خوبصورت موم بتیاں بنا کر گھر سجاتے ہیں

ایک ڈیکوریٹر کہتا ہے کہ گھر وہ جگہ ہے جہاں آپ کا دل رہتا ہے اور کچن وہ مقام ہے جہاں آپ کی روح رہتی ہے اور ایک بات اور بھی ہے کہ آج صرف خاتون خانہ ہی کچن میں اکیلی کام کرتی ہوئی دکھائی نہیں دیتیں بلکہ گھر کے بقیہ افراد بھی اس کا ہاتھ بٹاتے ہوئے نظر آتے ہیں۔
کچن اب ایک ایسی جگہ ہوگئی ہے۔ جہاں گھر کے افراد ایک ساتھ بیٹھ کر گپ شپ کرتے اور ایک دوسرے کی خیریت معلوم کرتے رہتے ہیں۔
چند ہدایات:
اگر آپ بالکل نیا کچن سیٹ کرنا چاہتی ہیں یا پرانے کچن کی نئے انداز سے سجاوٹ کرنا چاہتی ہیں تو دونوں صورتوں میں آپ کو احتیاط اور سلیقے سے کام لینا ہوگا۔
یہاں آپ کے لئے چند مفید مشورے درج کئے جارہے ہیں۔
فوری طور پرکچن کو مسمار کر کے یا توڑ کر نئے انداز سے بنانے کا فیصلہ نہ کریں۔ چاہے آپ کا بلڈر آپ پر کتنا ہی زور دے رہا ہو۔ بلکہ اس سلسلے میں کچن کے حوالے سے جو میگزین اور ماہرین کی رائے وغیرہ شائع ہوتی رہتی ہیں انہیں پڑھیں ۔تصویریں دیکھیں خوب غور کریں۔ اس کے بعد کوئی فیصلہ کریں۔
مقصد یہ کہ اس کام میں جلدی نہ کریں۔
پہلے لوکیشن پر غور کریں جگہ دیکھیں گنجائش دیکھیں آپ کو کچن کی تعمیر کے وقت بہت سی چیزوں کا خیال رکھنا پڑتا ہے۔ ہوا کی آمد ورفت روشنی ،پانی سیوریج وغیرہ۔
کچن کی ڈیزائننگ خاص کر اس طرح کرنی چاہیے کہ آپ کے اخراجات بھی نہ بڑھیں اور آپ اپنی پسند کی ڈیزائنگ بھی کروالیں۔
ایک بات اور ہے کہ آپ کے کچن کو افراد خانہ کی ضروریات کے مطابق ہونا چاہیے۔گھر کے افراد کی تعداد کے مطابق۔ چاہے فیملی ممبرز بہت زیادہ ہوں یا صرف دو میاں بیوی ہوں یا بہت چھوٹے بچے ہوں یا معذور لوگ ہی ہوں۔ غرض یہ کہ کچن ایسی جگہ ہونی چاہیے جہاں ہر ایک کی ضرورت کا خیال رکھا جا سکے اور اس لئے کچن کو آپ کی مکمل توجہ کی ضرورت ہوتی ہے۔ اگر آپ بہت مصروف خاتون ہیں اور وقت کی کمی کا شکار ہیں تو ایسی صورت میں باورچی خانے میں استعمال ہونے والے برتن اور دوسری چیزیں ایسی ہونی چا ہیں جو فوری طور پر اور آسانی سے دھوئی جا سکیں۔
اگر آپ کے گھر کے افراد کو کھانے پینے میں ایسی چیزیں پسند ہیں جنہیں ہم فاسٹ فوڈ کہہ سکتے ہیں تو اس کے لئے کاونٹر بنایا جاسکتا ہے یا چھوٹی میز رکھی جاسکتی ہے تا کہ فوری طور پر ایسی چیزیں تیار کر کے وہیں سرو کردیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں:  فینسنگ کے جدید رجحانات

ایک بات یادرکھیں کہ آپ کے کچن کی بناوٹ اور سجاوٹ پورے گھر کی طرز تعمیر سے ہم آہنگ ہونی چاہے۔ ایسانہ ہو کہ پورے گھر کا طرزتو کچھ اور ہے اور کچن کی اور انداز کا ہے۔
چاہے مغربی ہو یا مشرقی ،فارمل ہو یا انفارمل آپ کو اس کا ضرور دھیان رکھنا چاہیے۔
کچن میں ہمیشہ ایسا میٹریل استعمال کیا جائے جودیرپا بھی ہو اور فائر پروف بھی ہو۔ کچن میں کبھی نائلون یا اس قسم کے کسی میٹریل کے پردے وغیرہ استعمال نہ کریں۔ چاہے وہ آپ کو کتنے ہی سستے کیوں نہ پڑتے ہوں اور آسانی سے دستیاب ہی کیوں نہ ہو جاتے ہوں۔
کچن کا ایک ر خ کھڑکی وغیرہ باہر کی طرف کھلتی ہو تو زیادہ بہتر ہے کہ آپ کچن میں مصروفیت کے دوران بھی بچوں کو باہر کھیلتے ہوئے دیکھ سکتی ہیں۔
کچن کے اندر کی پلاننگ :
آپ کچن کے اندر کی پلاننگ کر رہی ہیں تو بہتر یہی ہے کہ باقاعدہ نقشہ بنا کر ناپ تول کے لحاظ سے پلاننگ کی جائے۔
کچن کا کاو¿نٹر اور اس کے دوسرے حصے مختلف ڈیزائن کے ہوسکتے ہیں۔
آنے جانے کے راستے کوریڈور اسٹائل کے ہو سکتے ہیں۔ اس میں گنجائش زیادہ نکل آتی ہے۔ لیکن اس اسٹائل کے ساتھ قباحت یہ ہوتی ہے کہ گھر کے افراداس کوریڈور کو راستے کے طور پر استعمال کرنے لگتے ہیں۔
خدانخواستہ اگر گھر کا کوئی فردوہیل چیئر پر ہے اور وہ کچن میں آنا چاہتا ہے تو دیوار اور کاو¿ نٹر کے درمیان کم از کم نو فٹ کا فاصلہ ضرور ہونا چاہیے تا کہ اسے آنے جانے میں آسانی رہے۔
U انداز کے کچن دیکھنے میں اچھے لگتے ہیں اور اوون یا چو لہے وغیرہ سے ورکنگ ایریا کا فاصلہ زیادہ معلوم ہوتا ہے۔
L انداز کے کچن زیادہ عام ہیں۔ کیونکہ اس کی بناوٹ ایسی ہوتی ہے کہ بیک وقت کئی افراد یہاں کام کر سکتے ہیں۔
مغرب میں U یا جزیرہ نما اسٹائل بہت زیادہ عام ہیں۔ آئی لینڈ کا ونٹر یا میز کا سائز 2.6 یا 3 فٹ سے زیادہ نہیں ہونا چاہیے۔ آپ اس میز پر پیاز یا آلوکاٹ سکتی ہیں۔ اس کے علاوہ اس پر کھانا بھی کھایا جاسکتا
ہے لیکن یہ صرف اس وقت ممکن ہے جب آپ کا کچن سائز میں بہت بڑا ہو۔
خاص باتیں :
اب ہم آپ کو ایسے چند مشورے دے رہے ہیں جن کو اختیار کرنے کے بعد آپ کا کچن آپ کے گھر کا اہم ترین حصہ دکھائی دے گا۔

گھر کی آرائش بھی ایک آرٹ ہے

ایک عدد چھوٹا صوفہ یا دو تین چھوٹی کرسیاں کچن کے ایک گوشے میں رکھی جاسکتی ہیں جس پر دو تین میگزین بھی ہوں تا کہ آپ کھانے تیار ہونے کے دوران کچھ دیر بیٹھ کر آرام کرسکیں۔
ممکن ہوتو ایک عددٹی وی بھی رکھا جاسکتا ہے۔لیکن یہ سب اس وقت ہوسکتا ہے جب آپ کے کچن میں بہت زیادہ گنجائش ہو۔
اگر کچن کے برابر میں کوئی کمرہ ہے تو ان کو بڑا کرنے کے لئے درمیانی دیوار گرادیں اور درمیان میں ایک کاو¿نٹر سا بنا کر اسٹول رکھ دیں۔ اس طرح کچن اور کمرہ الگ ہوجائے گا۔ اس طرح آپ کچن میں مصروف رہنے کے باوجود کمرے میں موجود لوگوں سے رابطہ میں رہیں گی اور کھانا بنانے کے دوران ان سے آپ کی گپ شپ بھی ہوتی رہے گی۔
کچن میں رنگ ایسے کروائیں جو آنکھوں کو بھی دکھائی دیں اور کچن کو ایک لگژری لک دیں۔ اگرکچن کے دروازوں کے ہینڈل اور نابس وغیرہ چمکتی ہوئی دھات کے ہوں تو ایک خوش گوار اور بھر پور تاثر قائم ہوتا ہے۔
یاد رکھیں کہ کچن کوصرف اس لئے نہیں ہونا چاہیے کہ وہاں کھانے بنائے جاتے ہیں۔ بلکہ گھر کی خوبصورتی میں اس کا بھی اہم کردار ہونا چاہیے۔
چھوٹے کچن:
کچن چھوٹے ہوں تو اس میں استعمال کی چیزوں کے سائز بھی چھوٹے ہونے چاہیے۔
مثال کے طور پر ڈش واش بیسن اوون اور ریفریجریٹر وغیرہ۔ یہ کوئی عقل مندی نہیں ہے کہ چھوٹے سے کچن میں جہازی سائز کا ریفریجریٹر رکھ دیا جائے۔ اس سے آدھے کچن کی جگہ گھر جاتی ہے۔ اوون اور CookTop کوساتھ ساتھ رکھیں۔
میز ایسی ہو جو آسانی سے فولڈ ہو سکے۔ کونے یوں ہی بغیر استعمال کے پڑے رہتے ہیں۔ لہٰذا ان کو سامان رکھنے کے لئے استعمال کریں۔ غیر ضروری دروازے اور کھڑکیاں وغیرہ جن میں نہ ہوں۔
اگرممکن ہوتو کچن اور ملحقہ کمرے کی دیوار ہٹادیں تا کہ ایک بڑے پن کا تاثر پیدا ہو سکے۔
رنگوں کے استعمال میں احتیاط برتیں، برتنوں اور کچن میں استعمال ہونے والی چیزوں کے رنگ بہت ہلکے ہونے چاہئے۔ بھاری اور تیز رنگ کی چیزیں استعمال نہ کریں۔
کچن میں لائٹنگ ایسی ہونی چاہیے جو پوری طرح کچنکوروشن نہ کرے بلکہ نیم اندھیرے اور نیم روشنی کا تاثر دیں۔ کچن کی زائد اشیاءکو جمع کرنے کے لئے ایسی باسکٹس کا استعمال کیجئے جو آسانی سے مل سکتی ہوں۔ کچرا پھینکنے کے لئے ڈسٹ بن رکھیں تا کہ فوراً ہی فالتو چیزیں اس میں ڈال سکیں اور وہ کچن میں بھری ہوئی دکھائی دیں۔
کیبنٹ سنک وغیرہ:
کچن کے کیبنٹ بنوانے میں اچھے خاصے اخراجات ہوجاتے ہیں۔ لیکن میں پائیدار کینٹس مدتوں استعمال میں رہتے ہیں۔ چونکہ کیبنٹ بناتے ہوئے بہت توجہ مہارت اور سلیقے کی ضرورت ہوتی ہے۔ لیکن بہت سوچ بچار کے بعد انہیں کسی ماہر کاریگر سے ہی تیار کروائیں۔
اس کی بناوٹ کا اچھی طرح جائزہ لیں۔ اندر اور باہر سے اس کے جوڑوں کا خاص طور پر معائنہ کریں۔سنک ایسے ہونے چاہئیں جن پر آسانی سے خراشیں نہ پڑھیں۔ آج کل اسٹین لیس اسٹیل کے سنک بہت عام ہیں۔ ایسے اسٹائل کا انتخاب کریں جو آپ کی ضروریات کو پورا کر سکے۔ سنک میں پانی کے اخراج کا راستہ صاف ستھرا اور کشادہ ہونا بہت ضروری ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  اپنی بالکنی، گیلری اور ٹیرس کو پھولوں اور پودوں سے سجائیں

سیڑھیوں کے نیچے کی جگہ خوبصورتی سے قابل استعمال بنائیے

فرش اور دیواریں
فرش کے انتخاب میں بھی بہت احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے۔ ٹائلز استعمال کر رہی ہیں تو انہیں لگواتے ہوئے معیاری کوالٹی کی وائٹ سیمنٹ استعمال کروائیں اورمزدوروں کو ہدایت دیں کہ تمام ٹائلز اچھی طرح ایک دوسرے سے چپکے ہوئے ہوں۔ ان کے درمیان کسی قسم کا خلا نہیں ہونا چاہیے۔ ورنہ گندا پانی ان میں جمع ہوتارہے گا اور ان کے ٹوٹنے کا خطرہ بھی رہے گا۔
اگر آپ ونائل ٹائلز کا استعمال کر رہی ہیں تو اس بات کی تصدیق کر لیں کہ یہ آپس میں خوب اچھی طرح چپکے ہوئے ہیں۔ آپ سرامک کو ونائل موزائیک ماربل فلورنگ یا اس قسم کی کسی اور چیز کا انتخاب فرش کے لئے کر سکتی ہیں۔
اگر آپ نے لکڑی کے فرش کا انتخاب کیا ہے تو اطمینان کر لیں کہ پانی کی وجہ سے وہ کہیں بربادتو نہیں ہورہے ہیں۔ کچھ خواتین کچن میں قالین کا استعال بھی کیا کرتی ہیں۔
اگر آپ کو بھی اس کی خواہش ہے تو پورے کچن میں قالین نہ بچھائیں بلکہ کسی خاص جگہ پر بچھا لیں اور اس بات کا اطمینان کر لیں کہ وہ قالین آگ کی پہنچ سے دور ہے۔
کچن کی دیواریں بھی عام طور پر ٹائلز کی ہوا کرتی ہیں۔ آپ بھی خوش نما اور خوش رنگ ٹائلز لگواسکتی ہیں۔ ان سے ان کی خوبصورتی میں اضافہ ہو جائے گا اور یہ دیواریں آپ کی آنکھوں کو بھلی لگیں گی ۔دیواریں ایسی ہونی چاہئیں کہ جن پر نشانات نہ پڑیں اور آسانی سے دھوئی جا سکیں۔ ان کو مزید خوبصورت بنانے کے لئے اگر آپ چاہیں تو باسکٹ میں پھل اور پھولوں کی سجاوٹ بھی کرسکتی ہیں۔
مزید مشورے :
اپنے کچن کو کیڑے مکوڑوں سے پاک رکھیں۔
اس لئے دیواروں میں کسی قسم کا خلاءیا سوراخ وغیرہ نہیں ہونا چاہیے۔ کھڑ کیوں اور کیبنٹس وغیرہ میں کاکروچ اپنے گھر آباد کر لیتے ہیں۔ پانی کی اخراجی نالیوں (Drains) میں کاکروچ کو روکنے کے لئے جالی لگائیں اور وقتا فوقتاً پورے کچن میں اسپرے کرتی رہیں۔
ہمیشہ کچن میں کچرا ڈالنے والا ایسا ڈسٹ بن رکھیں جس کے اوپر ڈھکنا ہو۔ رات کے وقت بھی بھی کھانے پینے کی چیزیں کھلی ہوئی نہ رہنے دیں۔
دیواروں پر خوبصورت پرکشش کچن ڈیکوریشن پیسزلگائیں اور کچن کے ساتھ بھی سوتیلی ماں والا سلوک نہ کریں کیونکہ گھر کا یہ حصہ آپ کے ذوق کا آئینہ دار ہے۔ یادرکھیں کہ آپ کو اس جگہ اپنے دن کے کئی گھنٹے گزارنے پڑتے ہیں اس کے لئے اسے سجا سنوار کر رکھیں۔
ایک ماہر ڈیزائنر کا کہنا ہے کہ رفتہ رفتہ ماڈرن کچن گھر کا اہم ترین حصہ بنتا چلا جارہا ہے اور یہ بات بالکل درست ہے۔ لہٰذا آپ کاکچن ایسا ہونا چاہیے جسےآپ کے خوبصورت خواب ہوتے ہیں اور اس سلسلے میں کوئی سمجھوتہ نہ کریں۔

یہ بھی پڑھیں:  گھر کی آرائش بھی ایک آرٹ ہے