Dr fasial kartar pur-1

کرتار پور راہداری ۔ پاکستان اور انڈیا کے درمیان معاہدہ طے پا گیا

EjazNews

ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل نے کرتارپور راہداری منصوبے کے معاہدے پر دستخط کی یادگار کے تحت ایک پودا بھی لگایا۔پاکستان اور بھارت کے درمیان کیے گئے معاہدے کے تحت روزانہ 5 ہزار سکھ یاتری بغیر ویزا گردوارہ کرتار پور صاحب میں اپنی مذہبی رسومات ادا کرسکیں گے۔معاہدے کے تحت 5 ہزار سکھ یاتری، انفرادی یا گروپ کی شکل میں یاتری پیدل یا سواری کے ذریعے صبح سے شام تک سال بھر ناروال میں کرتارپور آسکیں گے تاہم سرکاری تعطیلات اور کسی ہنگامی صورتحال میں یہ سہولت میسر نہیں ہوگی۔علاوہ ازیں سکھ یاتریوں کو موثر بھارتی پاسپورٹ پر کرتارپور راہداری استعمال کرنے کی اجازت ہوگی، بیرون ملک رہائشی سکھ یاتریوں کو بھارتی اوریجن کارڈ پر اس سہولت کا فائدہ اٹھانے کی اجازت ہوگی۔اس سلسلے میں بھارتی حکومت سکھ یاتریوں کی فہرست 10 دن قبل پاکستان کے حوالے کرے گی۔
ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان 9 نومبر کو کرتارپور راہداری کا باضابطہ افتتاح کریں گے جس کے لیے پروقار تقریب کا انعقاد بھی کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں:  100ارب کے قرضوں میں سے25ارب خواتین کو ملیں گے:وزیراعظم
ترجمان دفتر خارجہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے

اس موقع پر پاکستان کی جانب سے ترجمان دفتر خارجہ اور ڈائریکٹر جنرل جنوبی ایشیاو سارک ڈاکٹر محمد فیصل نے جبکہ بھارت کی جانب سے بھارتی وزارت امور خارجہ کے جوائنٹ سیکریٹری اور مذاکراتی ٹیم کے سربراہ ایس سی ایل داس نے دستخط کیے۔