india-mag

بھارتی ملٹری انڈسٹری میں نا اہلی اور کرپشن کا راج

EjazNews

بھارت کا پہلا طیارہ بردار جہاز بھارتی انجینئروں کی نااہلی اور نا تجربہ کاری کی بھینٹ چڑھ گیا اور اب حال ہی میں یہاں ہونے والی چوری کی واردات نے مزید کئی سوال کھڑے کردئیے ہیں۔ حالیہ حادثے میں چور،جہاز میں نصب کئے جانے والے 4کمپیوٹر چوری کر کے فرار ہوگئے۔ پولیس نے مقدمہ درج کر لیا ہے ۔ تاہم صرف اتنا کہا ہے کہ کمپیوٹر میں کوئی ایسی انفارمیشن نہیں تھی جس سے بھارتی فوج پر کوئی اثر پڑ سکے۔ لیکن پھر بھی اس واردات نے بھارتی سکیورٹی کے انتظامات کو ناقص ثابت کر دیا ہے۔ واضح رہے کہ بھارت کا پہلا طیارہ بردار جہاز وکرانت کو چین شپ یارڈ میں بنایا جارہا ہے۔ اس جہاز کی تیاری 2008ء میں شرو ع ہوئی تھی اور اسے2013ء کو مکمل ہونا تھا، لیکن، ناتجربہ کاری اور صلاحیت نہ ہونے کی وجہ سے اسے 2013ء تک مکمل نہ کیا جا سکا۔ اسے اب تک 30فیصد تک مکمل کیا جا سکا ہے۔ حالانکہ اسے دوبارہ پانی میں اتارا گیا، لیکن یہ صحیح طریقے سے کام نہ کر سکا جس پر اسے دوبارہ شپ یارڈ منتقل کر دیا گیا۔ بھارتی اخبارات نے بھارتی ہنر مندوں اور انجینئروں کی صلاحیتوں کا پول کھولتے ہوئے کہا ہے کہ ہندوستان الٹروناٹکس لمیٹڈ جو کہ بھارت میں طیارہ سازی کا واحد ادارہ ہے۔وہ بھی غفلت اور نالائقی کی بھینٹ چڑھ گیا ہے۔ کیونکہ یہاں جو طیارے تیار ہوتے ہیں ان میں حادثات کی شرح دنیا بھر میں سب سے زیادہ ہے، یہاں جو مگ جہاز اور ہال کئے گئے، یا بنائے گئے، ان میں سے درجنوں گر کر تباہ ہو گئے۔ بعض مبصرین نے اس سلسلے میں باقاعدہ اعداد و شمار بھی دئیے ہیں جو ہوشربا ہیں۔ مبصرین نے بھارتی انڈین ملٹری انڈسٹری کی ایک بڑی وجہ یہ بتائی ہے کہ بھارتی فوج زیادہ تر درآمد شدہ پرزوں پر انحصار کرتی ہے خود نہیں بناتی۔ ایک وجہ بھارت کی کمزور صنفی بنیادو ں کو بھی بتایا جارہا ہے۔ مثال کے طورپر طیارہ بردار جہاز کی تیاری میں تاخیر کی ایک وجہ یہ بھی بتائی جارہی ہے کہ بھارت میں سٹیل کا کارخانہ اتنی پیداوار میں ناکام رہا جس قدر جہاز کی تیاری میں ضرورت تھی۔ ایک اور بڑی وجہ بھارت میں ملٹری انڈسٹریل ٹیلنٹ کی کمی کو بھی بتایا جارہا ہے جس کی وجہ سے بھارت کے منصوبے تاخیر کا شکار ہو جاتے ہیں۔ مثلاً ناگ اینٹی ٹینک میزائل کی تیاری 1980ءکی دہائی میں شروع ہوئی تھی جواب 2019ء میں مکمل ہوئی ہے۔ فوجی مبصرین نے بھارتی فوج میں کرپشن کو بھی منصوبوں کی ناکامی کا ایک اہم سبب قرار دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  عالمی سیاست، ملکی مفادات سب کی ترجیح ہوتے ہیں