imran khan-islamabad

کشمیری اپنا وہ حق مانگ رہے ہیں جو عالمی برادری، اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل نے دیا تھا:وزیراعظم

EjazNews

دارالحکومت اسلام آباد میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے بڑی تعداد میں عوام سڑکوں پر نکلی اور اس سلسلے میں ایک انسان ہاتھوں سے زنجیر بھی بنائی گئی، جس میں صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی اور وزیراعظم عمران خان بھی شریک ہیں۔مظاہرین اسلام آباد کے ایکسپریس چوک سے ڈی چوک تک احتجاجی مظاہرہ کرتے رہے،عوام کے ساتھ صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی اور وزیراعظم عمران خان خود بھی شریک تھے۔شرکا نے ہاتھوں میں پاکستان کے ساتھ ساتھ آزاد کشمیر کا جھنڈا بھی تھاما ہوا تھا۔
وزیراعظم نے اس احتجاج سے خطاب بھی کیا جس میں وزیراعظم کا کہنا تھا آج یہاں ہم اس لیے جمع ہیں کہ کشمیریوں کو پیغام دیں کہ پاکستانی قوم کشمیر کے لوگوں کے ساتھ کھڑی ہے اور کھڑی رہے گی۔انہوں نے کہا کہ ہم بار بار دنیا کو یہ پیغام دیں گے کہ 80 لاکھ انسانوں کو بھارت کی فوج نے کرفیو میں بند کیا ہوا ہے، جسے 2 ماہ سے زیادہ ہوگیا ہے، عالمی میڈیا ہانگ کانگ کے احتجاج کو فرنٹ پیج، شہ سرخی اور خبروں میں بیان کررہا ہے کہ وہاں ایک جمہوری تحریک چل رہی ہے جبکہ وہاں تھوڑے لوگ زخمی ہوئے اور 2 سے 3 لوگ مرے ہیںجبکہ مقبوضہ کشمیر میں 80 لاکھ لوگوں کو ہی بند نہیں کیا، بچے، بوڑھے، خواتین، بیمار سب لوگ بند ہیں اور عالمی میڈیا میں اس کی کوریج نہ ہونے کے برابر ہے، گزشتہ 30 سال میں کم از کم ایک لاکھ کشمیریوں کی شہادت ہوئی کیونکہ وہ اپنا وہ حق مانگ رہے ہیں جو عالمی برادری، اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل نے دیا تھا اور وہ حق خودارادیت ہے۔
ان کا کہناتھا کشمیریوں کو حق دیا گیا تھا کہ وہ اپنی زندگی کا فیصلہ خود کریں گے لیکن وہ حق نہ ملنے پر احتجاج کرتے ہیں، جس پر بھارتی فوج ظلم کرتی ہے لیکن بھارتی ظلم کی یہ داستانیں کبھی کبھی عالمی اخباروں میں آتی ہیں۔ آج دنیا کے سامنے اس ‘دہرے معیارکو سامنے رکھنا چاہتا ہوں کہ ایک طرف ایک مظاہروں کو اتنا دکھایا جاتا جبکہ دوسری طرف اتنا ظلم ہورہا اسے نہیں دکھایا جاتا، ہانگ کانگ تو چین کا حصہ ہے جبکہ مقبوضہ کشمیر تو بھارت کا حصہ بھی نہیں ہے وہ تو ایک متنازع علاقہ ہے۔ افسوس سے یہ کہنا پڑ رہا ہے کہ یہاں دنیا یہ دیکھتی ہے کہ ایک ارب افراد سے زائد کا ایک ملک ہے، جس سے تجارت ہوسکتی ہے، ممالک کے لیے پیسہ انسانوں سے زیادہ اہم ہے۔ ہم کوشش کر رہے ہیں اور کرتے رہیں گے، ہماری پوری قوم کوشش کرے گی اور کشمیریوں کے بتائیں گے کہ ہم آپ کے ساتھ کھڑے ہیں، انشااللہ ہماری یہ تحریک سمندر بن جائے گی۔ یہ ایک تحریک، جدوجہد ہے، نریندر مودی نے جو حماقت کی ہے اور اپنا آخری پتہ کھیل دیا ہے، کشمیر کے لوگ جس حالت پر پہنچ گئے ہیں انہیں موت کا خوف ختم ہوچکا ہے، جیسے کرفیو اٹھے گا لاکھوں کشمیری سڑکوں پر نکلیں گے اور میرا ایمان ہے کہ یہ راستہ کشمیریوں کی آزادی کا ہے۔
واضح رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں 5 اگست کو بھارت نے مقبوضہ کشمیر کو ہتھیانے کی کوشش کی اور وہاں 2 ماہ سے زائد عرصہ گزرنے کے باوجود لاک ڈاؤن اور کرفیو لگا ہوا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  سکول کھل چکے ہیں ، ا یس او پیز پر عملدرآمد کے ساتھ