kashmir1

کشمیری اور پاکستانی رہنما آرٹیکل 370کے متعلق کیا کہتے ہیں؟

EjazNews

صدر آزاد کشمیر مسعود خان کا کہنا تھا بھارت کا چہرہ دنیا کے سامنے بے نقاب ہوگیا ہے۔ بھارت منفی حربوں سے مقبوضہ کشمیر کی حیثیت تبدیل کرنا چاہتا ہے۔
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کہتے ہیں سیکولر بھارت کی شکل تبدیل ہو رہی ہے، بھارت میں آج آر ایس ایس کی سوچ بڑھ رہی ہے، جس کا خدشہ تھا بھارت نے آج وہ حرکت کر دی۔ بھارتی ترامیم کو اقوام متحدہ سمیت کوئی تسلیم نہیں کرے گا، بھارت خون خرابے پر تلا ہوا ہے۔
اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف کا کہنا ہے کہ آرٹیکل 370کاخاتمہ اقوام متحدہ کے خلاف اعلان بغاوت اور جنگ ہے۔ان کا کہنا تھا کہ جن قوتوں نے فلسطین کے حقوق پر ڈاکہ ڈالا وہی قوتیں اب کشمیر میں بھی سرگرم ہیں۔
بلاول بھٹو زرداری نے مسئلہ کشمیر پر مشترکہ پارلیمانی اجلاس بلانے کا مطالبہ کر دیا ہے۔

وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کہتی ہیں کشمیری بھائیوں کی جدوجہد کو سلام پیش کرتے ہیں۔بھارت نے سلامتی کونسل کی قراردادوں کی بے توقیری کی ہے۔
ترجمان دفتر خارجہ کا کہناہے کہ کشمیر میں جغرافیائی تبدیلیوں سے خدشات بڑھ رہے ہیں۔
محبوبہ مفتی کہتی ہیں دو قومی نظریہ ٹھکرانے کا فیصلہ آج الٹا پڑ گیا ہے۔
عمر عبداللہ کا آرٹیکل 370کے خاتمے کے بھارتی فیصلے کو چیلنج کرنے کا فیصلہ۔

یہ بھی پڑھیں:  یہ بیماری تیزی سے تب پھیلتی جب ہم احتیاط نہیں کریں گے:وزیراعظم

علی امین گنڈا پور کہتے ہیں عالمی برادری ایل او سی پر بھارتی خلاف ورزیوں کا نوٹس لے۔اور کشمیر میں بھارت کو کسی انتہائی اقدام اٹھانے سے روکے۔

وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کہتے ہیں مودی سرکار کا اقدام پاگل پن ہے ، کشیدگی میں اضافہ ہوگا۔