i q leavel

معیشت حکومت کو مضبوط کرنے کیلئے کی جاتی ہے یاعوام کو

EjazNews

پاکستان کی معیشت میں ڈالر اور پٹرول خون کی حیثیت رکھتی ہے۔ اور ان دونوں کے اتار چڑھائو سے معیشت تو ڈوبتی ہی ڈوبتی ہے ساتھ میں مہنگائی بھی بڑھتی ہے۔ ملک عزیز کا شمار ان ممالک میں ہوتا ہے جہاں انڈسٹری نام کی چیز ختم ہورہی ہے اور باہر سے بنی بنائی چیزیں منگوانے کا رواج بڑھتا ہی گیا ہے۔

آج ہماری حالت یہ ہے کہ بچوں کے سکول میں استعمال ہونے والی پنسلیں بھی ہم بیرون ملک سے منگوا رہے ہیں اس کے باوجود وہ مقامی پنسلوں سے ڈیرھ سستی ہیں جبکہ ملک میں بننے والی اشیاء مہنگی ہیں۔ تحریک انصاف کی حکومت میں ڈالر کا جس طرح سے اتار چڑھائو ہو رہا تھا ایک تو اس سے خاصی مہنگائی بڑھی ہے دوسرا آپ غور کیجئے ایک اور طوفان مہنگائی کا بڑھے گا اس پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں سے اس کے ساتھ ساتھ ملک میں معیشت کا پہیہ سلو ہونے سے بیروزگاری بڑھی ہوئی ہے اس ساری صورتحا میں پس تو عوام ہی رہے ہیں۔ جن کیلئے یہ سب کچھ ہورہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  سیاست میں کوئی دشمن نہیں ہوتا تقریریں سنتے ہوئے یہ خیال رکھیں

وزیراعظم اکثر و بیشتر مثال دیتے ہیں قرض میں گھرے ہو گھرانوں کی کہ وہ بچت کر کر کے اپنے قرض اتارتے ہیں اور جن لوگوں نے ان کے پیسے چوری کیے ہیں ان سے لینے کی پوری کوشش کرتے ہیں۔ لیکن ایک سال سے زائد عرصے میں جن لوگوں پر نیب نے الزام لگایا ان سے ایک روپیہ بھی وصول ہوا۔ کیا ان پر نیب الزامات بھی ثابت کر سکی ہے۔ جواب ہے نہیں نہیں۔اب بچے عوام جو صابن سے لے کر ٹوتھ برش تک ہر چیز پر ٹیکس دے رہے ہیں۔ ڈالر مہنگا ہونے سے تو امیروں کی چاندی ہو گئی بوجھ کس پر ہڑا عوام پر۔ اب حکومت عوام پر رحم کھائے اور ان کیلئے بھی کچھ سوچے جن کیلئے معیشت مضبوط کی جاتی ہے۔