Mian Shabaz Sharif

برطانوی ا خبار ڈیلی میل کو شہباز شریف کے لندن میں وکلاء کی جانب سے لیگل نوٹس جاری

EjazNews

پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف نے برطانوی اخبار ڈیلی میل کے خلاف باضابطہ کارروائی کے لیے برطانیہ کی معروف لاء فرم کارٹر رک کی خدمات حاصل کی ہیں جو برطانیہ میں ان کا کیس لڑے گی۔
یہ کیس برطانوی اخبار ڈیلی میل اور اس کے آن لائن ایڈیشن میں ان کے متعلق شائع ہونے والی خبروں پر کیا جارہا ہے۔ شہباز شریف کی جانب سے رپورٹر کو بھی فریق بنایا گیا ہے۔
رپورٹر نے اپنی خبر میں میاں شہباز شریف پر الزا م عائد کیا تھا کہ پاکستان کو دئیے جانے والے زلزلہ زدگان کے فنڈز میں میاں شہباز شریف اور ان کے خاندان نے غبن کیا ہے۔ جبکہ میاں شہباز شریف نے اس خبر کو پہلے دن سے من گھڑت اور بے بنیاد قرار دیا تھا اور اس کی سختی سے تردید بھی کی تھی اور اب اس ادارے کیخلاف قانونی چارہ جوئی بھی شروع کر دی ہے۔
میاں شہبازشریف نے اپنے دعوے میں میل آن سنڈے، میل آن لائن اور ڈیوڈ روز کو پارٹی بنایا ہے جبکہ اس حوالے سے لاء فرم نے ڈیلی میل کے پبلشر کو ایک نوٹس جاری کیا ہے۔شہبازشریف نے اپنے نوٹس میں مطالبہ کیا ہےکہ ان کے خلاف جو آرٹیکل چھاپا گیا وہ فوری ہٹایا جائے اور اگر اخبار نے معافی نہ مانگی تو وہ لندن ہائیکورٹ جانے کا حق محفوظ رکھتے ہیں۔شہبازشریف کے نوٹس میں کہا گیا ہےکہ آرٹیکل میں ان پر 10 ملین پاؤنڈ کرپشن کا الزام عائد کیا گیا جو کہ بے بنیاد ہے اور اس الزام کا آرٹیکل میں کہیں کوئی ثبوت پیش نہیں کیا گیا ہے۔الزامات میں سچائی ہوتی تو گرفتار کرکے مقدمہ چلایا جاتا، حکومت کی ایما پر میرے خلاف سیاسی بنیادوں پر خبر چھپوائی گئی۔
میاں شہباز شریف کا کہنا تھا کہ میری ذاتی ساکھ ، شہرت اور پیشہ وارانہ کردار سب سے بڑھ کر ہے، اسے بچانے کے لیے ہر حد تک جائوں گا۔

یہ بھی پڑھیں:  شعیب اختر کا ریکارڈ ابھی بھی باقی ہے