chandryan 2

بھارت کا چندریان ٹو 384ہزار کلو میٹرکا سفر طے کر کے چاند پر ستمبر میں پہنچے گا

EjazNews

بھارتی خلائی ادارے اسرو نے چندریان ٹو کوانڈیا کے مقامی وقت کے مطابق دوپہر 2بج کر 43منٹ کو پیرکے روز روانہ کیا گیا۔ اس مشن پر 15کروڑ امریکی ڈالر کے اخراجات آئے ہیں اور تقریباً ایک ہزار انجینئرز اور سائنسدانوں نے کام کر کے اس مشن کو پورا کیا ہے۔
اس سارے پروگرام کی ڈائریکٹر متھایا ونیتھا تھیں جنہوں نے سارے عمل کی نگرانی بھی کی۔ چندریان ٹو کو چاند پر بھیجنے کے مناظر انڈیا کے ٹی وی پر بھی دکھائے گئے ۔
انڈیا کے خلائی ادارے کے سربراہ ڈاکٹر سیوان نے مشن کی کامیابی کے بعد اپنی تقریر میں کہا کہ چاند کی جانب بھارت کے تاریخی سفر کی ابتداء ہے۔
انڈیا نے اس م شن کے لیے اپنا مضبوط راکٹ جیو سنکرونس سیٹائٹ لانچ وہیکل مارک تھری استعمال کیا ۔
اس چاند گاڑی کے بارے میں خیال کیا جارہا ہے کہ چاند کے جنوبی قطب پر اترنے کی کوشش کرے گا اس حصے کو ابھی تک نہیں جانا جا سکا۔ چاند تک پہنچنے کیلئے اس مشن کو 384ہزار کلو میٹر کا سفر طے کرنا ہے۔ اور بھارتی خلائی ادارے کو امید ہے کہ یہ ستمبر کے ابتدائی تاریخوں میں چاند پر پہنچ جائے گا۔
یاد رہے اس سے قبل 15جولائی کو چاند کے لیے روانہ ہونے والا مشن مقررہ وقت سے 56منٹ قبل لانچ وہیکل سسٹم میں تکنیکی خرابی کے سبب روک دیا گیا تھا۔اس سے پہلے 2008ء میں بھی ایک مشن بھیجا گیا تھا جو چاند کی سطح پر اترنے میں ناکام رہا تھا۔ لیکن اس نے ریڈار کی مدد سے چاند پر پانی کی موجودگی سب سے تفصیلی دریافت کی تھی۔

یہ بھی پڑھیں:  طلبہ کی بے دخلی ، عدالتی حکومت کے بعد امریکی انتظامیہ نے فیصلہ واپس لے لیا