shabaz sharif

کیا اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف برطانوی میگزین پر ہتک عزت کا دعویٰ کریں گے؟

EjazNews

برطانوی میگزین ڈیلی میل نے ایک مضمون شائع کیا ۔ یہ مضمون برطانیہ کے ایک ادارے کی جانب سے پاکستان کے زلزلہ زدگان کیلئے دی جانے والی رقم کے متعلق تھا۔ اس رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے خاندان نے زلزلہ متاثرین کو ملنے والی برطانوی امداد میں غبن کیا۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ برطانوی امدادی ادارے نے لگ بھگ 50 کروڑ پاؤنڈ پنجاب حکومت کو دیئے، اس رپورٹ کے مطابق برطانوی ادارے ڈی ایف آئی ڈی کی جانب سے دئیے گئی رقم پاکستان میں خرچ ہونے کی بجائے منی لانڈرنگ کے ذریعے واپس برطانیہ آگئی تھی ۔
جبکہ امداد دینے والے ادارے کے مطابق ڈیلی میل نے اپنی سٹوری کو سچ ثابت کرنے کے لیے کم ثبوت پیش کیے۔اپنے جاری بیان میں ان کا کہنا ہے کہ 2005 کے زلزلے کے بعد برطانیہ کی جانب سے حکومت پنجاب کے ارتھ کوئک ریلیف اینڈ ری کنسٹرکشن اتھارٹی (اررا) کو سکولوں کی تعمیر کے لیے امداد دی گئی جو تعمیر ہوئے اور جن کا آڈٹ بھی کیا گیا۔ڈی ایف آئی ڈی کے ترجمان نے اپنے بیان میں یہ بھی کہا ہے کہ برطانوی ٹیکس دہندگان کا پیسہ بالکل ٹھیک جگہ پر خرچ ہوا اور اس امدادی رقم کے ذریعے زلزلہ متاثرین کی مدد کی گئی، ہم پُراعتماد ہیں کہ برطانوی ٹیکس دہندگان کے پیسے کو فراڈ سے محفوظ رکھا گیا۔
اپوزیشن لیڈر میگزین کیخلاف قانونی چارہ جوئی کرنے والے ہیں۔ سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ اپوزیشن لیڈر شہباز شریف برطانوی عدالت میں ڈیلی مل کے خلاف ہتک عزت کا دعویٰ کریں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ شہباز شریف کیخلاف اگر کسی کے پاس ثبوت ہے تو وہ برطانوی عدالت میں لے کر آئے۔ لیکن ان میں کسی کو عدالت میں پیش ہونے کی ہمت ہے نہ کوئی ثبوت۔ ان کا کہنا تھا کہ ایرا کا منصوبہ مشرف دور میں شروع ہوا۔ شہباز شریف سے تعلق نہیں ۔ بغض میں حکومتی اداروں اور ملازمین کو ملوث نہ کیاجائے۔
وزیراعظم عمران خان کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ڈیلی میل کی رپورٹ کے ردعمل میں کہنا تھا کہ ایک خاندان نے پاکستان کو بدنام کرنے کا بیڑا اٹھا رکھا ہے، اس خاندان نے پاکستان کی توقیر کو بھی تار تار کیا۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب مرزا شہزاد اکبر

جبکہ وزیراعظم کے معاون خصوصی مرزا شہزاد اکبر نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا ہے شہبازشریف کے خاندان کی دولت یکجا ہے، شہباز شریف کے خاندان کے نام پر 26ملین ڈالرز کی رقم باہر سے آئی۔ شہباز خاندان کے نام 2007 اور 2008 میں بیرون ملک سے زیادہ رقم آئی جو کہ2سوسے زائد افراد کے نام سے شہباز خاندان کو رقم بھجوائی گئی۔ جن افراد کے نام سے شہباز خاندان کے نام ملین ڈالرز آئے، وہ اتنے غریب ہیں کہ ان کے پاس کراچی سے لاہور جانے کا کرایا بھی نہیں ہے۔
معاون خصوصی برائے احتساب نے ایرا کے فنڈز سے شہباز شریف کے داماد علی عمران کے اکاؤنٹس میں کروڑوں روپے منتقلی کے دستاویزی ثبوت پیش کیے۔علی عمران کے 2011 اور 2013 کے پیمنٹ آرڈرز اور ڈیمانڈ ڈرافٹ پیش کیے جن میں کئی ملین کی رقم منتقلی دکھائی گئی ہے۔ ان کا کہنا ہے تھا کہ شہباز شریف کے داماد علی عمران کا ایسا پلازہ جو تعمیر بھی نہیں ہوا تھا، اس کو کرائے کی مد میں پیسے دئیے گئے اور یہ پیسے منصوبوں میں سے نکالے جاتے ہیں۔حمزہ شہباز کے 95 فیصد، سلیمان کے 99 فیصد اثاثے اسی رقم سے بنے جبکہ اہلیہ کے 80 فیصد اثاثے جعلی ٹی ٹیز سے بنے۔
برطانوی میگزین ڈیلی میل میں گزشتہ روز چھپنے والی خبر سے متعلق ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ “یہ خالہ جی کا گھر نہیں کہ کسی سے بھی اسٹوری کروائی جائے، مجھے اسٹوری کرانی ہوتی تو یہ دستاویزات بھی برطانوی اخبار شائع کرتا۔
معاون خصوصی نے شہباز شریف کو چیلنج کیا کہ شہبازشریف انہیں برطانوی عدالت میں بلوائیں، وہ وہاں بھی دستاویزی ثبوت پیش کریں گے۔انہوں نے صدر مسلم لیگ (ن) شہباز شریف کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اپنے وعدے اور دعوے سے مت مکرئیے گا، مقدمہ ضرور داخل کیجئے گا، آپ نے زرداری کو گھسیٹنے کا دعویٰ کیا تھا لیکن مکر گئے تھے لہٰذا اس طرح اب نہ مکر جائیےگا۔‘‘ان کا کہنا تھا کہ لوٹا ہوا مال شہباز فیملی سے برآمد کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں:  جوہوا سو ہوا، اب حالات مختلف ہیں اور ہم وفاق کی جانب دیکھ رہے ہیں:بلاول بھٹو زرداری