old man to young

کیا مستقبل میں انسان بوڑھا ہونا بھول جائے گا؟

EjazNews

جوان رہنا ہر شخص کی خواہش ہے۔ لیکن صدا جوان رہنا کسی کے بس کی بات نہیں۔ بچپن لڑکپن جوانی اور بڑھاپا ہر شخص پر آتا ہے۔ جو پیداہوا اس نے مرنا بھی ہے۔ لیکن سائنسدان انسانی زندگی کو بہتر سے بہتر بنانے کے لیے تمام تر جستجو کر رہے ہیں ۔ کبھی کامیابی کی نوید سننے کو ملتی ہے پھر جیسے کام رک سا جاتا ہے ۔ ہاورڈ میڈیکل سکول کے سائنسدانوں نے ایک ایسا مرکب تیار کیا ہے جو جینز کو بوڑھا ہونے سے روکنے میں مدد دے گا یایوں کہہ لیجئے کہ بوڑھا ہونے سے روکنے میں مدد دے گا۔ انسانی جسم کئی طرح کے پروٹین سے مل کر بنا ہے۔ ایس آئی آر ٹی آئی اور پی اے آر ٹی آئی پارٹی پروٹین کی دو اہم اقسام ہیں۔ یہ انسانی جسم کو جوان اور طاقتور رکھنے میں اپنا کر دار ادا کرتے ہیں۔ یوں سمجھ لیجئے کہ انسانی جسم کو کسی مشین کی طرح رکھنے میں مدد دیتے ہیں۔ اگر جسم آئلی نہ رہے تو یہ بڑھاپے کا شکار ہو جاتا ہے۔ سائنسدانوں نے ایسا مرکب تیار کیا جو ان جینز پر اثر انداز ہونے والے کیمیکل یاشعاعوں کوروکتا ہے۔ جس سے جینز زیادہ دیر تک جوان رہتا ہے۔
ہاورڈ میڈیکل سکول کے سائنسدانوں نے شوگر کے مرض میں مبتلا ایک چوہے کا علاج کیا۔ وہ اس پر شوگر سے متعلق مختلف ادویات کا استعمال کررہے تھے۔ مرکب کی کامیابی کو دیکھتے ہوئے انہوں نے اس پر سرطان کی بھی تحقیق کی ، اسی تحقیق کوانہوں نے جینز کو جوان رکھنے کے لیے بھی مددگار قرار دیا۔
سائنسدانوں نے اس کو اینٹی ایجی کمباﺅنڈ کا نام دیا ہے۔اسے بڑھاپا ختم مرکب بھی کہہ سکتے ہیں۔ اس مرکب کے ذریعے وہ دوا کی تیاری پر کام کر رہے ہیں۔ تحقیق کی کامیابی کے بعد یہ دوا بھی مارکیٹ میں آسکتی ہے۔ یونیورسٹی آف نیو ویس کے سائنسدانوں نے تحقیق کے دوران انسانی جنیزکو نقصان پہنچانے والے میکنزم کا پتہ چلایا۔ ایک خاص قسم کی صورتحال میں کچھ عناصر انسانی خلیوں پر اثر انداز ہو کر اسے نقصان پہنچاتے ہیں۔ جس سے وہ بوڑھا ہو جاتا ہے۔ابھی یہ پہلا مرحلہ ہے، دوسرے مرحلے میں سائنسدان بوڑھا ہونے والے جینز کی مرمت کیلئے ادویہ سازی پر توجہ دیں گے۔ پرانی تحقیق سے پتہ چلا کہ مخصوص قسم کی شعاعیں ، کیمیکلز جینز کو بڑھاپے کی طرف دھکیلتے ہیں۔انسانی جسم میں ایک خاص قسم کا کیمیکل ہوتا ہے۔ سائنسدانوں نے اسے این اے ڈی کا نام دیا۔ ایک شوگر پیشنٹ چوہے پر تحقیق سے پتہ چلا کہ یہ کیمیکل یو ایم این نامی ایک مخصوص کیمیکل پر بھی اثرانداز ہوتاہے۔اس علاج سے چوہا بالکل صحت مند ہوگیا۔ اس سے انہیں پتہ چلا کہ جنیاتی تبدیلیاں ممکن ہیں۔ عام زبان میں سمجھانے کے لیے سائنسدانوں نے بتایا کہ این اے ڈی نامی کیمیکل مختلف اقسام کی پروٹین کے مابین انٹریکشن کو کم کرتاہے اور جسم کو ایک آئلی مشین کی طرح چلانے میں مدد دیتا ہے۔ ایم اے بی کیمیکل کی تعداد عمر بڑھنے کے ساتھ کم ہونا شروع ہو جاتی ہے تو جینزمتاثر ہونا شروع ہوجاتے ہیں اور انسان پر بڑھاپے کے اثرات نمایاں ہونا شروع ہوجاتے ہیں۔بڑھتی عمر کے ساتھ اس عمل کی رفتار تیز ہونا شروع ہوجاتی ہے۔ سائنسدانوں نے یہ پتہ چلایا کہ اگر انسانی جسم میں بڑھتی عمر کےساتھ اس این اے ڈی نامی کیمیکل کی پیداوار کو برقراررکھا جائے ، کم ہونے سے روکا جائے تو چہرے کی جھریوں سے بچا جاسکتا ہے ۔ ان کا تیار کردہ مرکب یہ کام کر سکتاہے۔ محقق ڈیوڈ سب ڈئیر نے کہا کہ ایک وقت ایسے آئے گا جب وہ جینز کو نقصان پہنچانے والی شعاعوں کو روک کر پروٹین کو درکار کیمیکل کی پیداوار کو روک کر بڑھاپے کو بھگانے میں کامیاب ہوجائیں گے۔

یہ بھی پڑھیں:  برزایل : کیٹ واک کے دوران ماڈل ہلاک