mofti

ڈالر کو خرید کر اس وقت ذخیرہ کرنا ملک سے بے وفائی ہے: مفتی تقی عثمانی

EjazNews

ملک کے نامور عالم دین مفتی تقی عثمانی نے ڈالر کے مصنوعی بحران پر سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر اپنے ایک بیان میں کہا کہ موجودہ حالات میں ڈالر کو خرید کر نفع کمانے کیلئے جمع کرنا شرعاً گناہ ہے۔ یہ عمل ملک کیساتھ بے وفائی اور ذخیرہ اندوزوی بھی ہے جس پر ایک روایت میں لعنت آئی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اللہ تعالیٰ ہمیں اس گناہ اور اس کے برے نتائج سے محفوظ رکھے۔
موجودہ صورتحال جس سمت جارہی ہے کسی کو کچھ سمجھ نہیں آرہا کیونکہ ڈالر کی اڑان تو جیسے رکنے کا نام لے ہی نہیں رہی اور حکومت بھی اس ماحول میں ایسا لگ رہا جیسے بے بس کھڑی ہے ۔
آئی ایم ایف سے ڈیل ہونے کے بعد ملک بھر میں یہ افواہیں گردش کر رہی ہیں کہ ڈالر 2سو روپے کی حد کو چھوئے گا۔ جب آئی ا یم ایف سے معاہدہ کی خبریں منظر عام پر آئیں اورتبھی سے یہ افواہیں بھی زور پکڑ گئیں اور وہی ہوا کہ ڈالر کچھ ہی دنوں میں 10روپے سے زائد بڑھ چکا ہے۔ اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 152روپے تک پہنچ چکی ہے ۔

یہ بھی پڑھیں:  علی وزیر کو فی الفور پروڈکشن آرڈر ملنے چاہیے:بلاول بھٹو زرداری


اس ساری صورتحال میں ایک عالم دین کا میدان میں آنا خوش آئند بات ہے کیونکہ ذخیرہ اندوزوں کو شاید یہ اندازہ نہیں ہے کہ اگر ملک کی معاشی حالات خراب ہوں گے تو وہ اپنے پیسے کا جو چاہے کر لیں مشکلات کا سامنا ان کو بھی کرنا پڑے گا اور اگر ملک کے حالات بہتر ہوں گے تو وہ بھی ایک بہتر زندگی گزار سکیں گے۔ بحرکیف منافع خوروں کیلئے یہ باتیں معنی نہیں رکھتیں کیونکہ منافع کی حوص ہمارے معاشرے کو پوری طرح جکڑے ہوئے ہے ۔