maryma orangzab

چیئرمین نیب اپنے ادارے کی تردید کے پیچھے نہ چھپیں:مریم اورنگ زیب

EjazNews

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی مرکزی سیکرٹری اطلاعات مریم اورنگزیب نے نیب کی پریس ریلیز کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ شاہد خاقان عباسی کی پریس کانفرنس کے بعداحتساب بیورو(نیب) بوکھلاہٹ کا شکار ہے ۔ان کا کہنا تھاکہ شاہد خاقان عباسی نے 16 مئی کو نیب کو خط لکھا کہ وہ 21 مئی کو قومی اسمبلی کے اجلاس کی وجہ سے نہیں آ سکتے ،شاہد خاقان عباسی نے کال اپ نوٹس کی مطابق12 مئی کو دیئے گئے سوال نامے جمع کروا دیئے ہیں،نیب نے شاہد خاقان عباسی کے دونوں خط وصول کئے اور دونوں کی تصدیق شدہ کاپیاں میڈیا کو دے دی گئی ہیں ۔چیئرمین نیب مسلم لیگ (ن) کی طرف سے اٹھائے گئے سوالات اور اعتراضات کا جواب دیں اور جھوٹ پہ جھوٹ بول کر اصل مسئلے سے نظر یں چرانے کی کوشش نہ کریں،انسان کو اپنے منصب اور اللہ تعالیٰ کی دی ہوئی عزت کا خیال رکھنا چاہیے تاکہ پھر اپنی باتوں کی تردید اور جھوٹ پہ جھوٹ نہ بولنا پڑے ۔
ان کا کہنا ہے کہ چیئرمین نیب نے جاوید چودھری صاحب کی کالم میں لکھی ہوئی باتوں کی کوئی تردید نہیں کی ،چئیرمین نیب اپنے ادارے کی تردید کے پیچھے نہ چھپیں،اگر چیئرمین نیب میڈیا کے ذریعے سیاستدانوں اور عوامی نمائندوں کی پگڑیاں اچھال سکتے ہیں تو میڈیا ہی کے ذریعے عوام کے سامنے وضاحت بھی کریں۔اگر جاوید چوہدری صاحب کا کالم سچ نہیں تو چیئرمین نیب عوام کے سامنے اس کی تردید کریں اور اگریہ کالم سچ ہے تو اس کے ثبوت پیش کئے جائیں۔
یاد رہے سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ چیئرمین نیب نے اپنے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ مجھ پر بہت دبائو ہے ۔ اور اس انٹرویو میں انہوں نے اپنی گفتگو کا محور شہباز شریف کو رکھا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ چیئرمین نیب کے انٹرویو کا مقصد کیا تھا یہ سب پر عیاں ہو چکا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ چیئرمین نیب کا مقصد سیاستدانوں کو بدنا م کرنا تھا انہوں نے وہ باتیں کیں جو کبھی ہوئی ہی نہیں تھیں۔ان کا کہناتھا کہ نیب میں 35سو کیسز چل رہے ہیں لیکن پگڑیاں صرف سیاستدانوں کی اچھالی جارہی ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ کر دار کشی کا سلسلہ بند ہونا چاہیے۔ان کا کہنا تھا کہ ہمارا کوئی ذاتی مقصد نہیں ہے اور نہ ہی ہمیں نیب سے کسی قسم ریلیف چاہیے۔
پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف اور شہباز شریف کے متعلق چیئرمین نیب کا کہنا تھا کہ انہوں نے ان سے رابطہ کیا اور کیسز ختم ہونے پر سیاست سے ریٹائرمنٹ لینے کا کہا،اس پر شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ شہباز شریف ان سے بالاواسطہ یا بالواسطہ طور پر ملے ہی نہیں۔ان کا کہناتھا کہ اگر چیئرمین نیب کا مقصد سیاستدانوں کو بدنام ہی کرنا ہے تو پھر وہ اپنا مقصد پورا کر چکے ہیں۔
فواد حسن کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے ملک کو بجلی دی اور فائدہ پہنچایا ، ان کا کہا تھا کہ علیم خان کی ضمانت ہو جاتی ہے جبکہ فواد حسن فواد اور احد چیمہ کی ضمانت نہیں ہوتی۔ان کا کہنا تھا کہ نیب نے بیوروکریسی کو مفلوج کردیا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں:  علیم خان کو ضمانت مل گئی